22 April, 2024

جنگلات کی تباہی پرسپریم کو رٹ کی تشویش

ارشد ندیم
نئی دہلی ( سیاسی تقدیر بیورو )بھارت کے جنگلات کو جس طرح ختم کرنے اور ماحولیات کے توازن کو بگاڑنے کی جو کوششیں اور سازشیں کی جارہی ہیں وہ ملک والوں کے لئے فکر کا باعث ہیں ۔اتراکھنڈ اور شملہ نے برسات کے دوران جو تباہی اور بربادی جھیلی ہے وہ بھی کسی سے پوشیدہ نہیں ہے ۔موسم باراں کے دوران جو بھیانک مناظر دیکھنے کو کو ملے ان سے ہمیں کافی کچھ سیکھنے کی ضرورت تھی لیکن افسوس ہم نے نہ صرف یہ کہ اس بربادی سے صرف نظر کیا بلکہ مزید تباہی کے راستے کھولنے میں بھی کوئی ہچکچاہٹ محسوس نہیں کی ۔جنگلات کی بے دریغ کٹائی ،جنگلی جانوروں کی زندگی کو خطرے میں ڈالنے کے طریقے،غیر سائنسی اور ماحولیات کو تباہ کرنے والی تعمیرات پہاڑوں اور ہرے بھرے علاقوں کو مزید ختم کرنے پر تلی ہوئی ہیں۔ریاست اور مرکز کے حکمرانوں کو اس جانب توجہ دینے کی ضراورت تھی لیکن سیاسی نظام نے اس طرف کوئی دھیان نہیں دیا ۔مجبوراً کچھ اہل ہوش نے عدالت کے دروازے پر دستک دی ۔ملک کی عدالت اعلیٰ ترین عدالت نے جنگلوں کی تباہی پر سنجیدہ سے متوجہ ہوتے ہوئے گہری تشویش کا اظہار کیا ۔اپنا فیصلہ سناتے ہوئے سپریم کورٹ نے جم کاربیٹ نیشنل پارک میں تقریباً 6000 درختوں کی کٹائی پر اتراکھنڈ حکومت پر سخت نکتہ چینی کی ہے۔ عدالت کے مطابق، جنگلات کے حکام اور ریاست کے ایک اعلیٰ سیاست دان نے پارک کے احاطے میں ٹائیگر سفاری کے دائرہ کار کو وسیع پیمانے پر پھیلانے کے لیے مل کر تحفظ کے طریقوں کی ملیا میٹ کیا تھا۔ تین رکنی بنچ کے فیصلے میں جسٹس بی آر۔ گاوائی نے فیصلہ سناتے ہوئے کہا، “جنگلات میں شیروں کی موجودگی ماحولیاتی نظام کی بھلائی کی علامت ہے۔ جب تک شیروں کے تحفظ کے لیے اقدامات نہیں کیے جاتے، ایکو سسٹم جو شیروں کے گرد گھومتا ہے اس کی حفاظت نہیں کی جا سکتی۔ غیر قانونی تعمیرات اور کاربٹ جیسے درختوں کی غیر قانونی کٹائی جیسے واقعات کو نظر انداز نہیں کیا جا سکتا۔ سیاسی بدعنوانی اور ماحولیاتی نقصان کے درمیان ترشتہ اس معاملے میں خاص طور پر خطرناک ہے کیونکہ عدالت کے فیصلے کے وائلڈ لائف پارکس کے انتظام پر اثرات مرتب ہوتے ہیں، خاص طور پر اس سوال پر کہ کیا وائلڈ لائف پارکس کے بفر اور فرینج زونز میں ‘ٹائیگر سفاریز’ تحفظ کے ساتھ اچھی طرح سے کام کرتی ہیں۔ اقدامات عدالت نے پارک کے آس پاس کے مختلف ریزورٹس کا بھی اشارہ کیا جو اکثر اونچی آواز میں موسیقی بجاتے ہیں اور جانوروں کے لیے خطرہ ہیں۔

سنٹرل زو اتھارٹی اور نیشنل ٹائیگر کنزرویشن اتھارٹی دونوں مرکزی وزارت ماحولیات سے وابستہ ماہر ادارے ہیں، اور انہیں جنگلی جانوروں کے تحفظ اور تحفظ کا کام سونپا گیا ہے۔ ان تنظیموں کو، اصولی طور پر، ٹائیگر سفاریوں کے وجود پر کوئی اعتراض نہیں ہے، بشرطیکہ یہ رہنما خطوط کے دائرے کے اندر منعقد ہوں۔ ایک مخصوص جگہ پر وائلڈ لائف سفاری جنگل کے بنیادی علاقوں سے توجہ مبذول کراتے ہیں اور اس وجہ سے اس کی ناگوار نوعیت کو فروغ دینے کے ساتھ ساتھ تحفظ کے بارے میں عوامی بیداری کو بڑھاتے ہیں۔ یہ سفاری کے لیے بنیادی دلیل ہے۔ اس طرح ان کا بنیادی مقصد ماحولیاتی سیاحت ہونا چاہیے نہ کہ تجارتی سیاحت۔ تاہم، حالیہ دنوں میں، یہ دلیل کہ یہ مقامی لوگوں کے لیے روزگار کے مواقع کا ذریعہ ہو سکتا ہے، اور یہ کہ ریاستی حکومتوں کو اس کو فروغ دینا چاہیے، زور پکڑ رہا ہے۔ افریقہ سے کونو نیشنل پارک، مدھیہ پردیش میں چیتاوں کی حالیہ نقل مکانی کا مقصد بھی بلی کی موجودگی کو بحال کرنا اور سیاحت کو فروغ دینا ہے۔ تاہم، یہ ایک پھسلن والی ڈھلوان ہے اور بہت آسانی سے سیاسی گرفت کا باعث بن سکتی ہے، جیسا کہ کاربیٹ پارک کی کارروائی ظاہر کرتی ہے۔ عدالت نے سفارش کی ہے کہ مرکز سفاری کے انعقاد کے بارے میں رہنما خطوط تیار کرے اور حکومت اس پر جلد از جلد فراہمی کے لیے اچھا کرے گی اور سیاحت اور تحفظ کے حوالے سے اپنے پیغامات پر انتہائی محتاط رہے۔

No Comments:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *