22 April, 2024

لوک سبھا انتخابات 2024: ملک کے’140 کروڑ باشندے میرے خاندان کے لوگ ہیں

اب نریندر مودی تمل، بنگالی اور پنجابی بھی، انتخابی جنگ میں اے آئی کی انٹری
نئی دہلی، گجرات سے آنے کے بعد اتر پردیش کے وارانسی کو اپنا انتخابی مرکز بنانے والے وزیر اعظم نریندر مودی ہمیشہ ملک کی ہر ریاست کے ساتھ اپنا جذباتی رابطہ مضبوط کرنے کی کوشش کرتے نظر آتے ہیں۔ پی ایم مودی، جنہوں نے 140 کروڑ ہم وطنوں کو ‘میرا خاندان کہہ کر مخاطب کیا، فی الحال ان کی نظریں چیلنج کی زد میں بڑی ریاستوں پر ہیں۔
اسے ان کا ‘لوکل کنیکٹ اقدام سمجھا جا سکتا ہے کہ تمل ناڈو، بنگال، پنجاب، اوڈیشہ وغیرہ جیسی ریاستوں کے عام لوگوں کو پیغام دینے کے لیے انھوں نے اپنے نام کے ساتھ ‘تمل کا اضافہ کر کے مقامی جذبات کو جوڑ دیا۔ ‘بنگلہ ، ‘اوڈیا، ‘کنڑ، ‘پنجابی، ‘تیلگو، ‘مراٹھی اور ‘ملیالم لکھ کر آٹھ مختلف ایکس ہینڈل بنائے گئے ہیں۔
اے آئی کی مدد سے ان کی تقریریں صرف متعلقہ زبان میں سنی جا سکتی ہیں۔ وزیر اعظم مودی ٹیکنالوجی کا استعمال جانتے ہیں۔ 2014 میں انہوں نے تھری ڈی ایڈریس شروع کیے جس میں مختلف مقامات پر ان کی تقریریں ٹی وی پر اس طرح دکھائی گئیں جیسے وہ سامنے کھڑے ہو کر بول رہے ہوں۔ اب ایک نیا تجربہ سامنے آیا ہے۔
اب ان آٹھ زبانوں میں پی ایم کا نیا ایکس ہینڈل سامنے آیا ہے۔حال ہی میں اس نے سوشل میڈیا پلیٹ فارم X پر علیحدہ تصدیق شدہ اکاؤنٹس بنائے ہیں۔ ان کے نام ‘نریندر مودی تامل ، ‘نریندر مودی بنگالی ، ‘نریندر مودی اوڈیا، ‘نریندر مودی پنجابی ، ‘نریندر مودی کنڑ ، ‘نریندر مودی تیلگو، ‘نریندر مودی مراٹھی اور ‘نریندر مودی ملیالم تھے۔ ہے. ان ریاستوں سے متعلق وزیر اعظم کے پروگرام اور خطاب ان ایکس ہینڈلز پر اپ لوڈ کیے گئے ہیں۔ پی ایم کے استعمال کے ان ریاستوں پر بھی سیاسی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔دراصل یہ اپوزیشن پارٹیوں کے گڑھ ہیں، جن پر بی جے پی کی نظریں لگی ہوئی ہیں، پارٹی بھی مسلسل محنت کر رہی ہے۔ دراصل تمل ناڈو میں لوک سبھا کی 39 سیٹیں ہیں۔ 2019 کے عام انتخابات میں بی جے پی مضبوط مودی لہر کے باوجود ان میں سے کوئی بھی سیٹ نہیں جیت سکی۔ اس کے بعد وزیر اعظم نے اس جنوبی ریاست کے ساتھ جذباتی ثقافتی تعلقات کو نئے معنی دینے کے لیے کاشی تامل سنگم پروگرام شروع کیا۔ اس ریاست سے وابستہ ثقافتی-روحانی علامات نئی پارلیمنٹ میں سینگول کو انسٹال کیا جنوبی ریاستوں کے کئی دورے کئے۔اسی طرح بنگال کولے کر وزیراعظم اور پارٹی مسلسل کوششیں کر رہے ہیں۔بنگال کے ہر واقعے کو سختی سے لیا جاتا ہے۔ سندیش کھلی کے تازہ واقعہ کے بعد حال ہی میں وزیر اعظم بنگال گئے اور جلسہ عام کیا۔ یہاں بی جے پی گزشتہ لوک سبھا انتخابات میں 42 میں سے 18 سیٹیں جیتنے میں کامیاب رہی تھی۔ بی جے پی اوڈیشہ میں کل 21 میں سے آٹھ جیت سکی۔ کیرالہ میں 20 سیٹوں پر بی جے پی کا کھاتہ بھی نہیں کھلا ہے اور پنجاب میں 13 سیٹوں پر چیلنج ہیں۔
قابل ذکر ہے کہ حال ہی میں آر جے ڈی سربراہ لالو پرساد یادو نے پی ایم مودی پر خاندان کے تعلق سے ذاتی تبصرہ کیا تھا۔ تب سے بی جے پی لیڈروں اور کارکنوں نے اپنے ناموں کے ساتھ ‘مودی کا خاندان لکھ کر مہم شروع کر دی ہے۔ مانا جا رہا ہے کہ اس الیکشن میں بی جے پی خاندان پرستی پر زیادہ آواز اٹھائے گی اور اسے ایک بڑے انتخابی ایشو کے طور پر اٹھانے کی کوشش کرے گی۔ دریں اثنا اس تجربے کے ذریعے پی ایم مودی یہ پیغام دینے کی کوشش کریں گے کہ ان کے لیے پورا ملک خاندان ہے۔
جن زبانوں میں وزیر اعظم مودی نے اپنے سابق ہینڈل بنائے ہیں ان کا اثر کئی ریاستوں میں ہے۔ مثال کے طور پر، آندھرا پردیش میں شہری تیلگو اور تامل دونوں زبانیں بولتے ہیں۔ بنگال کے ساتھ ساتھ آسام اور شمال مشرق کی کچھ دوسری ریاستوں میں بنگالی بولنے والے بھی موجود ہیں۔ اوڈیا زبان بولنے والے نہ صرف اوڈیشہ بلکہ چھتیس گڑھ اور جھارکھنڈ میں بھی ہیں۔ کنڑ کے ساتھ ساتھ تیلگو اور تمل بولنے والے لوگ بھی کرناٹک میں پائے جاتے ہیں۔
بی جے پی آئی ٹی سیل کے انچارج امیت مالویہ نے کہا کہ ان آٹھ ایکس ہینڈلز کے ذریعے وزیر اعظم نریندر مودی کی تقریروں کا ان آٹھ زبانوں میں ترجمہ کیا جائے گا۔ ان کی تقاریر کی یہ ڈبنگ مصنوعی ذہانت (آرٹیفیشیل انٹلی جنس) کے ذریعے کی جائے گی۔ ان کا دعویٰ ہے کہ بی جے پی دنیا کی پہلی پارٹی ہے جس نے ایسا تجربہ کیا۔

No Comments:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *