23 July, 2024

شہریت ترمیمی قانون کا نفاذ یا چناوی بانڈ سے توجہ ہٹانے کی کوشش؟

ارشد ندیم
مرکزی سرکار نے شہریت ترمیمی قانون کے نفاذ کا اعلان کرکے پھر سے ایک کھلبلی پیدا کرنے کی کوشش کی ہے۔عام لوگوں کا خیال ہے کہ مرکزی حکومت اپنی ناکامیوں کو چھپانے کے لئے کچھ ایسی ہلچل پیدا کرتی رہتی ہے جس سے عام لوگوں کی توجہ بکھر جاتی ہے۔شہریت ترمیمی قانون بھی شاید اسی مقصد کے لئے نافذ کیا جارہا ہے۔یہ قانون 2019 میں تیار کیا گیا تھا ۔جب اس کا بل تیار کیا گیا تھا اس وقت مسلم اقلیت سراسمیہ ہوگئی تھی اور اس کے خلاف ایک طویل احتجاج کیا تھا۔شاہین باغ میں ایک مثالی اور تاریخی احتجاج سبھی کو یاد ہے ۔حکومت نے ملک میں شہریت ترمیمی بل پر لوگوں کی رد عمل دیکھ کر اسے قانون تو بنادیا تھا لیکن اس کو نافذ نہیں کیا گیا تھا۔اب جب کہ عام انتخابات کا وقت قریب ہے ،ایسے حالات میں سی اے اے کے نفاذ کا اعلان کئی طرح کے سوالات پیدا کرتا ہے۔اب تک چند ایک جماعتوں کے علاوہ کسی مسلم جماعت کی طرف کوئی خاص رد عمل نہیں ہوا ہے ۔عام خیال یہ بھی ہے کہ اگر مسلم طبقہ خاموش رہا تو بھارتیہ جنتا پارٹی کو ویسا فائدہ ملنا مشکل ہوجائے گا جیسا اسے توقع ہے۔
شہریت (ترمیمی) ایکٹ (سی اے اے)، 2019 کو نافذ کرنے کا حکومت کا فیصلہ، عام انتخابات کی تاریخوں کے اعلان سے چند دن پہلے، کیئے جانے کا مقصدکیا ہے اس پر بہت لوگوں نے الگ الگ آراہ ظاہر کی ہیں۔کچھ صحافیوں نے اندیشہ ظاہر کرتے ہوئے لکھا ہے کہ ’’ایسا لگتا ہے کہ حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) میں پولرائزنگ کی اپنی دیرنہ پالیسی پر عمل کر رہی ہیاور اسے اپنی انتخابی مہم کا حصہ بناکر آئندہ انتخابات میں جیت حاصل کرنے کی حکمت عملی کے طور پر اپنانے کے لئے ماحول تیارکررہی ہے ۔شہری ترمیمی ایکٹ. ایک ایسا قانون ہے جس کی بہت سے لوگوں کی طرف سے سختی سے مخالفت کی گئی ہے، خاص طور پر مسلم کمیونٹی کی طرف سے اس قانون کو کالعدم کئے جانے کی مانگ کے لئے احتجاج بھی ہوا ہے۔ٓاگر پھر سے اس قانون کے خلاف مسلم طبقے کی طرف آواز بلند کی گئی تو بھارتیہ جنتا پارٹی کی جیت آسان ہوسکتی ہے۔مرکز میں برسر اقتدار جماعت کی ترقیاتی اسکیمیں،رام مندر کی پران پرتشٹھا،اتراکھنڈ میں یکساں سول کوڈ کے نفاذ کی کوششیں عوام پر زیادہ اثر انداز نہیں ہوسکی ہیں لیکن شاید سی اے اے عوام میں ہلچل پیدا کرسکتا ۔شاید یہی سوچ کراسے نافذ کرنے کا نوٹیفکیشن جاری کیا گیا ہے۔
تین منتخب ممالک کے تارکین وطن کو شہریت دینے کے لیے مذہب کی بنیاد پر ٹیسٹ متعارف کرانے کے لیے، CAA سپریم کورٹ آف انڈیا کے سامنے قانونی چیلنج کے تحت زیر سماعت ہے۔ 2019 میں نافذ کیا گیاتھالیکن ، اسے اب تک نافذ نہیں کیا گیا تھا کیونکہ حکومت نے اس کی دفعات کو لاگو کرنے کے لیے قواعد سے مطلع نہیں کیا تھا۔ ااس لئے نافذ کیے جانے والے قوانین کا وقت ایک جائز شک پیدا کرتا ہے کہ اس قانون کا نفاذ انتخابی بانڈز کے تنازعہ سے توجہ ہٹانے کی کوشش ہے۔ ان قوانین کو لاگو کرنے کا اعلان ایسے وقت میں کیاگیا ہے جب قوم گمنام انتخابی بانڈز کے خریداروں اور ان کو کیش کرانے والی جماعتوں کے بارے میں تفصیلات جمع کرانے میں تاخیر پر سوال اٹھا رہی تھی۔موجودہ حالات ہر انسانی ذہن میں یہ سوال بھی پیدا کرتے ہیں کہ ایسے قانون کو نافذ کرنے کی کیوں اشد ضرورت ہے جس پر پانچ سالوں سے عمل نہیں ہوا ہے۔ بقیہ دو نئے قوانین بھی احتیاط سے تیار کیے گئے نظر آتے ہیں، اس طرح ڈیزائن کیے گئے ہیں کہ وہ ایسے عمل کو متعارف کرائیں جو ریاستوں کے لیے اس کے نفاذ میں رکاوٹ پیدا کرنے کی کوئی گنجائش نہیں چھوڑیں گے۔ یہ ممکن ہے کہ قواعد کافی عرصے سے تیار تھے، اور انتخابی فائدے کے لیے سی اے اے کے معاملے کو زندہ کیا جا رہا ہے۔
سی اے اے کا جوہر، حقیقت میں، اقلیتی شہریوں کے مفادات کو متاثر نہیں کر سکتا: بہر حال، یہ صرف اقلیتوں کے لیے ایک تیز رفتار طریقہ کار ہے — ہندو، سکھ، بدھ، جین، پارسی اور عیسائی — افغانستان، بنگلہ دیش اور پاکستان سے۔ شہریت حاصل کرنے کے لیے۔ معمول کے 11 سال (پچھلے 14 سالوں میں سے) کے بجائے، تارکین وطن کے اس طبقے کے لیے انتظار کی مدت صرف پانچ سال ہوگی، بشرطیکہ وہ 31 دسمبر 2014 سے پہلے پہنچے ہوں۔ . سی اے اے کے ساتھ مسئلہ دو گنا ہے: پہلا، اس کے امتیازی اصول میں جو کچھ مذہبی برادریوں کو شہریت کے اہل قرار دیتا ہے۔ ان تینوں ممالک میں ان چھ مذاہب سے تعلق رکھنے والوں کے بارے میں یہ خیال کیا جاتا ہے کہ وہ ظلم و ستم سے بھاگے ہیں۔ دوسرے جو اس زمرے میں نہیں آتے، یا تو ان کے ملک میں داخل ہونے کی وجہ سے، یا ان کے مذہب کی وجہ سے، ان کے ساتھ غیر قانونی تارکین کے طور پر سلوک کیا جاتا رہے گا۔ دوسرا پہلو بدقسمتی سے سیاسی پروپیگنڈہ ہے جس نے سی اے اے کو شہریوں کے قومی رجسٹر سے جوڑنے کی کوشش کی۔ اس بیان بازی نے مسلمانوں کے اندیشوں پر زور دیا کہ سی اے اے مناسب دستاویزی ثبوت کے بغیر شہریت سے محروم ہو سکتا ہے۔ اس کے مواد سے زیادہ، سی اے اے نریندر مودی حکومت کے سیاسی پیغام رسانی کے لیے اس کے استعمال کے ذریعے نقصان پہنچا رہا ہے کہ اس کی تمام پالیسیوں میں مذہب کی بنیاد رکھی جائے گی۔

No Comments:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *