23 July, 2024

مالدیپ میں ‘چین نواز’ محمد معیزو کی بڑی فتح، کیا بھارت کے خدشات بڑھیں گے؟

مالدیپ کے صدر محمد معیزو کی پارٹی پیپلز نیشنل کانگریس نے پارلیمانی انتخابات میں دو تہائی سے زیادہ نشستیں جیت لی ہیں۔
گزشتہ سال صدارتی انتخاب جیتنے کے بعد اس انتخاب کو ان کے سب سے بڑے سیاسی امتحان کے طور پر دیکھا جا رہا تھا۔
ماہرین پیپلز نیشنل کانگریس کی اس جیت کو میوزو کی چین نواز اور بھارت مخالف پالیسیوں پر مہر کے طور پر دیکھ رہے ہیں۔
میوزو کی پارٹی نے مالدیپ کی 93 نشستوں والی مجلس میں دو تہائی سے زیادہ نشستیں حاصل کی ہیں۔
موئیزو کی یہ جیت اس لیے بھی اہم ہے کہ پچھلی پارلیمنٹ میں ان کی پارٹی پیپلز نیشنل کانگریس اور اس کی اتحادی جماعتوں کے پاس صرف آٹھ نشستیں تھیں۔
جس کی وجہ سے انہیں کسی بھی بل کو پاس کرانے میں دشواری کا سامنا کرنا پڑا۔
مالدیوین ڈیموکریٹک پارٹی (MDAP)، سابق صدر اور بھارت نواز محمد صالح کی پارٹی کو موجودہ پارلیمنٹ میں اکثریت حاصل ہے۔
اکثریت میں ہونے کی وجہ سے، MDP نے حال ہی میں Muizzu حکومت کے تین وزراءکی تقرری روک دی تھی اور کچھ اخراجات کو منظور کرنے سے بھی انکار کر دیا تھا۔
اب اگر Muizzu کو اکثریت سے زیادہ نشستیں مل جاتی ہیں تو وہ ملک میں چین کی سرمایہ کاری سے متعلق فیصلوں کو نافذ کر سکتا ہے۔
بھارت کے ساتھ تعلقات میں تلخی
حزب اختلاف کی مرکزی جماعت مالدیوین ڈیموکریٹک پارٹی کو انتخابات میں زبردست شکست کا سامنا ہے۔ اسے صرف ایک درجن نشستیں مل سکیں۔
تاہم مالدیپ کی معیشت کی حالت اچھی نہیں ہے اور بین الاقوامی مالیاتی فنڈ نے اسے بھاری قرضوں کے بارے میں خبردار کیا ہے۔
لیکن ان کے انتخابی وعدے کے مطابق ہندوستانی فوجیوں کو واپس بھیجنے کے فیصلے پر عمل درآمد سے میوزو میں مالدیپ کے ووٹروں کا اعتماد بڑھ گیا ہے۔
Muizzu کے صدر بننے کے بعد، ہندوستان اور مالدیپ کے درمیان تعلقات کافی خراب ہو گئے ہیں۔
ہندوستان اور مالدیپ کے تعلقات میں واضح دراڑ میں، چین اپنے لیے امکانات تلاش کر رہا ہے تاکہ وہ اس خطے میں اپنی گرفت مضبوط کر سکے۔
Muizzu نے کہا تھا کہ وہ اقتدار میں آتے ہی مالدیپ میں موجود ہندوستانی فوج کے تکنیکی عملے کو واپس بھیج دیا جائے گا۔
Muizzu نے کہا تھا، “10 مئی کے بعد، ملک میں کوئی ہندوستانی فوجی نہیں ہوگا، نہ ہی وردی میں اور نہ ہی سادہ کپڑوں میں۔” میں یہ بات اعتماد کے ساتھ کہتا ہوں کہ ہندوستانی فوج اس ملک میں کسی بھی طرح نہیں ہوگی۔
چین سے ہندوستان کی قربت پر بڑی تشویش
بعض ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ مالدیپ جو کہ ایک چھوٹے سے ملک ہے، کو ایشیا کی دو طاقتوں بھارت اور چین کے درمیان پھنس جانے کے خطرے کا سامنا ہے۔
گزشتہ چند سالوں میں چین نے مالدیپ کو کروڑوں ڈالر کے قرضے دیے ہیں۔ ان میں سے زیادہ تر قرضے اقتصادی ترقی اور تعمیراتی شعبے کے لیے دیے گئے ہیں۔
حال ہی میں، جب پارلیمانی انتخابی مہم زوروں پر تھی، مالدیپ کی حکومت نے چین کو کئی ہائی پروفائل انفراسٹرکچر کے ٹھیکے دیے تھے۔
چین اور مالدیپ کے درمیان تعلقات اس وقت مزید گہرے ہو گئے تھے جب موئزو صدر بننے کے بعد شی جن پنگ کی دعوت پر چین گئے تھے۔
مالدیپ کے صدر منتخب ہونے کے بعد اب تک وہ ہندوستان کا دورہ کرتے رہے ہیں۔ لیکن معیز کے معاملے میں ایسا نہیں ہوا۔
Muizzu ترکی، UAE اور چین کا دورہ کر چکے ہیں، لیکن وہ ابھی تک ہندوستان نہیں آئے ہیں۔
چین سے واپس آنے کے بعد موئزو نے کہا تھا – ‘ہم ایک چھوٹا ملک ہیں، اس کا یہ مطلب نہیں کہ انہیں ہمیں دھونس دینے کا حق ہے۔’
معیز کے اس بیان کو بھارت کے حوالے سے دیکھا گیا۔ اگرچہ معیز نے ہندوستان کا نام نہیں لیا۔
کیا بھارت کی مشکلات مزید بڑھیں گی؟
سال کے آغاز میں مالدیپ کی حکومت اور چین کے درمیان ایک فوجی معاہدے پر دستخط ہوئے تھے۔ اس معاہدے سے بھارت کے خدشات میں بھی اضافہ ہوا تھا۔
مالدیپ کی وزارت دفاع نے کہا ہے کہ یہ معاہدے بغیر کسی ادائیگی کے کیے گئے ہیں۔ تاہم مالدیپ کی حکومت نے اس حوالے سے مزید کوئی اطلاع نہیں دی۔
اس کے بعد ایک ریلی میں موئزو نے کہا تھا کہ چین مالدیپ کو غیر مہلک ہتھیار مفت فراہم کرے گا اور مالدیپ کی سیکورٹی فورسز کو تربیت بھی فراہم کرے گا۔
ماضی میں ہندوستان اور امریکہ مالدیپ کی فوج کو تربیت دیتے رہے ہیں۔
مالدیپ کے سیاسی ماہر عظیم ظہیر نے بی بی سی کو بتایا، ’’یہ بے مثال ہے۔ پہلی بار مالدیپ نے چین کے ساتھ فوجی تعاون فراہم کرنے کے لیے دفاعی معاہدے پر دستخط کیے ہیں۔
انہوں نے کہا تھا، ’’ہمیں معلوم تھا کہ میوزو سرمایہ کاری کے لیے چین کے قریب جائے گا۔ لیکن کسی کو امید نہیں تھی کہ وہ اس حد تک جائے گا۔
تاہم چین مالدیپ میں کسی بھی طویل مدتی فوجی منصوبے کی تردید کرتا ہے۔
چینگڈو انسٹی ٹیوٹ آف ورلڈ افیئر تھنک ٹینک کے صدر ڈاکٹر لونگ شنگچن نے بی بی سی کو بتایا، “یہ دونوں ممالک کے درمیان معمول کے تعلقات ہیں۔” اگر چین بحر ہند میں اپنی موجودگی کو بہتر بنانا چاہتا ہے تو اس کے پاس مالدیپ سے بہتر آپشنز ہیں۔

‘انڈیا فرسٹ’ سے ‘چین فرسٹ’ کی پالیسی
محمد معیزو کو ‘چائنا فرسٹ’ پالیسی کا حامی سمجھا جاتا ہے۔ تاہم وہ کئی بار خود کو ‘مالدیپ فرسٹ’ پالیسی کا حامی بتا چکے ہیں۔
مالدیپ میں ماضی کی حکومتیں ‘انڈیا فرسٹ’ پالیسی کی حامی سمجھی جاتی تھیں۔
اپنی انتخابی مہم میں معیزو ہندوستان کے معاملے پر محمد صالح کی اس وقت کی حکومت کو نشانہ بنا رہے تھے۔
معیز کہتے تھے کہ بھارت کے ساتھ معاہدوں کی معلومات ظاہر نہیں کی جاتیں۔ اب Muizzu کو بھی اسی طرح تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔
اس سال فروری میں میوززو انتظامیہ نے چینی تحقیقی جہاز ڑیانگ یانگ ہان 3 کو مالے میں رکنے پر پابندی عائد کر دی تھی۔

بی بی سی و دیگر سے شکریہ کے ساتھ
ترجمہ ،ترتیب و پیش کش
ارشد ندیم

No Comments:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *