23 July, 2024

بے روزگاری کے مسائل سے پریشان بھارت کے نوجوان

ارشد ندیم
ہماری سرکاریں چاہے یتنے دعوے کرکے دنیا کی توجہ اس طرف مرکوز کرنے کی کوشش کرلیں کہ بھارت سے نوجوانوں کی بیروزگاری کا خاتمہ ہوچکا ہے لیکن سچائی یہی ہے کہ ملک میں اس وقت سب سے زیادہ بے روزگار نوجوان ہیں۔ملک میں مختلف سیاسی جماعتیں بے روزگار نوجوانوں کو برسر روزگار کرنے کے وعدے کرکے اقتدار تک پہنچتی ہیں لیکن یہ وعدے کبھی پورے نہیں ہوتے۔وہ ماں باپ جو اپنے نونہالوں کو جوان کرنے اور انہیں اعلیٰ تعلیم دلاکر اپنی زندگی سب جمع پونجی خرچ کرڈالتے ہیں ،جب ان کے بچے پڑھ لکھ کر بھی بے روزگار رہ جاتے ہوں گے تو ان ماں باپ کر کیا گذرتی ہوگی ،اس کا اندازہ کوئی دوسرا نہیں کرسکتا ۔بے روزگار رہنے کی وجہ سے ایسے بہت سے نوجوان ہیں جو ڈپریشن جیسی خطرناک بیماریوں کا شکار ہوجاتے ہیں اور ان میں بہت تو خود کشی تک پر آمادہ ہوجاتے ہیں۔
ہندوستان میں نوجوانوں کے روزگار کی موجودہ صورتحال اور نقطہ نظر پر توجہ مرکوز کرنے والی ایک حالیہ رپورٹ ملک کے بہت زیادہ ‘ڈیموگرافک ڈیویڈنڈ’ کی تشویشناک تصویر پیش کرتی ہے۔ اگر ٹارگٹڈ پالیسی مداخلتوں کو فوری طور پر نہیں لیا جاتا ہے، تو ایسا لگتا ہے کہ یہ منافع برباد ہونے کے دہانے پر ہے۔ ہیومن ڈیولپمنٹ/انٹرنیشنل لیبر آرگنائزیشن کی طرف سے تیار کردہ ’انڈیا ایمپلائمنٹ رپورٹ 2024‘ ہر سال تقریباً 70-80 لاکھ نوجوانوں کے لیبر فورس میں شامل ہونے کے لیے ایک تاریک منظر پیش کرتی ہے – نوجوان ہندوستان کی بے روزگار افرادی قوت کا تقریباً 83 فیصد ہیں۔ اس سے بھی زیادہ پریشان کن بات یہ ہے کہ کل بے روزگاروں میں پڑھے لکھے نوجوانوں (جن کی ثانوی یا اعلیٰ تعلیم ہے) کا تناسب 2000 میں 35.2 فیصد کے مقابلے میں 2022 میں تقریباً دوگنا ہو کر 65.7 فیصد ہو جائے گا۔ یہی نہیں، ان نوجوانوں میں جو گریجویٹ ہیں، انہیں ان نوجوانوں کے مقابلے میں نو گنا زیادہ بے روزگاری کی شرح (29.1 فیصد) کا سامنا کرنا پڑا جو پڑھ لکھ نہیں سکتے تھے (جن کی بے روزگاری کی شرح 3.4 فیصد تھی)۔ یہ مایوس کن اعداد و شمار دو حقائق کی نشاندہی کرتے ہیں ایک بہتر تنخواہ والی ملازمتوں کے خواہشمند پڑھے لکھے نوجوانوں کو جذب کرنے کے لیے ملازمتوں کی کمی اور تعلیمی معیار میں خامیاں جس کی وجہ سے تعلیم یافتہ نوجوانوں کی ایک بڑی تعداد اب بھی ملازمت کے معیار پر پورا اترنے سے قاصر ہے۔ مزید برآں، افراط زر کا حساب کتاب کرنے کے بعد، اجرتیں یا تو جمود کا شکار ہو گئی ہیں یا گھٹ گئی ہیں۔
ہندوستان کے لیے وسیع تر سماجی و اقتصادی فوائد کے لیے اپنی بڑی نوجوان آبادی سے فائدہ اٹھانے کے مواقع کی کھڑکی تیزی سے بند ہو رہی ہے۔ سال 2021 میں آبادی میں نوجوانوں کا حصہ 27 فیصد تھا جو 2036 تک کم ہو کر 23 فیصد رہنے کا تخمینہ ہے۔ جیسا کہ رپورٹ کے مصنفین نوٹ کرتے ہیں: “نوجوانوں کی شرح روزگار، تعلیم یا تربیت میں نہیں ہے اور بے روزگاری کی شرح زیادہ ہے، اور ملازمت کرنے والے نوجوانوں کی اکثریت میں کام کرنے کے حالات خراب ہیں، حالانکہ معیشت بلند شرح سے ترقی کر رہی ہے۔ “یہ سنجیدگی سے اس صلاحیت کے ادراک کو محدود کرتا ہے [ڈیموگرافک ڈیویڈنڈ کا استحصال]۔” دیگر رجحانات – خواہ وہ لیبر فورس میں شرکت کی شرح (LFPR) میں بڑا صنفی عدم توازن ہو (2022 میں خواتین کی LFPR 32.8 فیصد تھی، جو مردوں کی 77.2 فیصد سے 2.3 گنا کم تھی) یا 90 فیصد کارکنان ابھی تک غیر رسمی ملازمتوں میں ہیں۔ in – ایک مربوط جامع پالیسی وڑن کی کمی کو بے نقاب کرتا ہے جو سب کے لیے بہتر ملازمتوں کو یقینی بناتا ہے۔ یہ سمجھنے کے لیے کہ آخر کار یہ نیت ہے جو سب سے زیادہ اہمیت رکھتی ہے، تبدیلی لانے میں حکومت کی حدود پر چیف اکنامک ایڈوائزر کی تشویش کا مقابلہ کرتے ہوئے، ‘مستحکم قیمتوں کے ساتھ زیادہ سے زیادہ روزگار کی حوصلہ افزائی’ کے لیے امریکی فیڈرل اوپن مارکیٹ کمیٹی کی بنیادی پالیسی ہدایت ہوگی۔ اب جبکہ عام انتخابات ہو رہے ہیں، سیاست دانوں کو نہ صرف اپنی انتخابی مہم میں بلکہ اس کے بعد کی پالیسی سازی میں بھی ملازمتوں کو یقینی بنانا ہو گا اور تکنیکی طور پر ابھرتی ہوئی معیشت کے لیے تعلیم و تربیت کے معیار کو ترجیح دینا ہو گی۔

No Comments:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *