Today: Friday, November, 17, 2017 Last Update: 10:54 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

UTTAR PRADESH

UTTAR PRADESH

مودی کے پارلیمانی حلقہ میں بھی نہیں آسکے ’’اچھے دن ‘‘

وارنسی کے بنکروں کو’’خواب‘‘لگ رہے ہیں پی ایم کے وعدے،وزیراعظم کے پارلیمانی حلقہ میں پہلے سے ملنے والی سہولیات بھی بند
لکھنؤ؍وارانسی یکم اپریل(آئی این ایس انڈیا) وارانسی پارلیمانی سیٹ سے لوک سبھا انتخابات جیتنے میں وزیر اعظم نریندر مودی کو وارانسی کے تمام طبقے کے لوگوں کا ساتھ ملاتھا۔اس میں بنکر بھی شامل تھے۔لیکن مودی حکومت کے نو ماہ پورے ہونے کے باوجود بنارس کے بنکروں کا وہی حال ہے اور انہیں لگنے لگا ہے کہ انتخابات سے قبل دکھائے گئے خواب، خواب ہی رہ جائیں گے۔انتخابات کے دوران ہی کپڑاکی صنعت کے مرکزی وزیر سنتوش گنگوار نے بھی کافی وعدے کئے تھے لیکن نو ماہ گزر جانے کے بعد ایک بھی منصوبہ پر کام شروع نہیں ہوا ہے۔بنکروں کا تو یہ بھی الزام ہے کہ پہلے جو سہولیات مل رہی تھیں اب وہ بھی بند ہو گئی ہیں۔وزیر اعظم بننے سے پہلے نریندر مودی نے وارانسی کے بنکروں و مشہور بنارسی ساڑی کو بین الاقوامی شناخت دلانے کا وعدہ کیاتھالیکن وزیر اعظم کے اقتدارسنبھالنے کے نو ماہ گزر جانے کے بعد بھی بنارس کے بنکروں کو ایسا لگ رہا ہے کہ انتخابات کے دوران جو خواب دکھائے گئے تھے، وہ اب بھی ادھورے ہی ہیں۔الیکشن جیتنے کے بعد گزشتہ نومبر میں پہلی بار وزیر اعظم بنارس پہنچے اور اس دوران وہ سب سے پہلے بنکروں کی پنچایت میں ہی گئے۔انتخابی وعدے کو پورا کرنے کے لئے انہوں نے 200کروڑ روپے کے تخمینہ والے’’ٹریڈ فیسلیٹیشن سنٹر‘‘کی بنیادرکھی، اسی ہیڈلوم سینٹر کا افتتاح کر کے نئی امید جگائی۔بنارس کی بنکرتنظیم کے حاجی نظام الدین کہتے ہیں کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے بنکروں کو خواب دکھا کر ٹھگنے کا کام ہی کیاہے۔گزشتہ نو ماہ میں بنکروں کے مفاد والا ایک بھی کام حکومت نے نہیں کیا۔وزیر اعظم نے جس فیسلیٹیشن سنٹر کا سنگ بنیادرکھاتھا، اس کی تعمیر شروع ہونی تو دور ابھی تک باؤنڈری کا کام بھی مکمل نہیں ہوا ہے۔کپڑاکی وزارت کے ایک اسسٹنٹ ڈائریکٹر نے کہا کہ باؤنڈری فائنل ہونے کے بعد ڈیزائن اور اس کے مطابق تعمیر کا پلان بنانے میں تقریبا چھ سے آٹھ ماہ لگیں گے۔بنکر تنظیم کے حاجی مختار احمد بھی مانتے ہیں کہ پچھلے نو مہینوں میں بنکروں کے مفاد والا کوئی کام نہیں ہوا ہے۔احمد نے کہا کہ مودی نے کاشی کے بنکروں کو صرف خواب دکھائے تھے۔بنکروں و بنارسی ساڑی کو بین الاقوامی شناخت دلانے کا دعویٰ کر رہے تھے لیکن یہاں تو بنکرو ں کی حالت پتلی ہوتی جا رہی ہے۔کپڑا وزارت کی جانب سے بنکروں کے لئے 80کروڑ روپے کے تخمینہ سے میگا کلسٹر 11کامن فیسلٹی سینٹر قائم کرنے کاکام ابھی تک شروع نہیں ہو سکا ہے۔ کاشی کے ایک بنکر فاروق انصاری کہتے ہیں کہ پہلے جو کچھ مل رہا تھا وہی ملتارہتاتوایک بات ہوتی۔یہاں تو پہلے والی سہولیات بھی کافی کم ہو گئی ہیں۔

اساتذہ اپنے ذہن کو مکمل طور پر تناؤ سے پاک رکھیں : ضمیر الدین شاہ
فہمیدہ پروین
علی گڑھ یکم اپریل، ایس ٹی بیورو: علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے یو جی سی اکیڈمک اسٹاف کالج کے زیرِ اہتمام ملک کی مختلف یونیورسٹیوں اور کالجوں کے ا ساتذہ کے لئے ہفتہ بھر کے ’’ تناؤ مینجمنٹ ‘‘ پر شورٹ ٹرم کورس کے اختتام پر مہمانِ خصوصی وائس چانسلر لیفٹیننٹ جنرل ضمیر الدین شاہ ( ریٹائرڈ) اور ان کی اہلیہ محترمہ صبیحہ سیمی شاہ نے شرکاء ا ساتذہ اور ریسرچ اسکالرس کو سرٹیفکیٹس عطا شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے وائس چانسلر جنرل شاہ نے اساتذہ سے اپیل کی کہ وہ اپنے ذہن کو مکمل طور پر تناؤ سے پاک رکھتے ہوئے طلبأ کو تعلیم مہیا کرانے کے لئے قربانی کے جذبے سے کام کریں۔ انہوں نے کہا کہ یہ اے ایم یو کے سیکولر کردار کا ہی نتیجہ ہے کہ یہاں آسام سے لے کر مہاراشٹر اور دیگر ریاستوں کے ا ساتذہ تربیت حاصل کرنے آرہے ہیں۔انہوں نے اساتذہ سے کہا کہ وہ متعلقہ تعلیمی اداروں میں اے ایم یو کے ایمبیسڈر کی حیثیت سے کام کرکے لوگوں کو اس ادارے سے روشناس کرائیں۔محترمہ صبیحہ سیمی شاہ نے شرکاء اساتذہ کو مبارکباد پیش کرتے ہوئے ان کے روشن مستقبل کی توقع کا اظہار کیا۔اکیڈمک ا سٹاف کالج کے ڈائرکٹر پروفیسرا ے آر قدوائی نے کہا کہ ان کے کالج کا سب سے بڑا حاصل یہ ہے کہ یہ کالج ہم آہنگی اورقومی یکجہتی کی ا قدار کو نہ صرف فروغ دے رہا ہے بلکہ ان کو قائم بھی کر رہا ہے۔وائس چانسلر جنرل شاہ نے ا س موقعہ پر افغانستان سے ایک ماہ کی تدریسی تربیت حاصل کرنے آئے ا ساتذہ محترمہ نسیمہ حسن زادہ، سید فائق اور محترمہ نفیسہ کو بھی سرفراز کیا۔شرکاء اساتذہ کی جانب سے آسام کے محمد عالق آغا الدین اور ڈاکٹر ککالی بوہرہ نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ تربیت کے د وران انہوں نے ایک اچھا استاد بننے کے بہت سے گُر سیکھے۔ افغانستان کی محترمہ نسیمہ حسن زادہ نے کہا کہ ا س عالمی شہرت یافتہ ادارہ میں آکر وہ خود پر فخر کر رہی ہیں۔اجمل خاں طبیہ کالج کے ڈاکٹر بلال احمد، ڈینٹل کالج کی اسسٹنٹ پروفیسر ڈاکٹر صبا خاں نے اکیڈمک ا سٹاف کالج کی جانب سے حاضرین کا خیر مقدم کیا۔ کورس کو آرڈینیٹر پروفیسرا برار حسین نے سرٹیفکیٹس تقسیم کئے جانے میں تعاون کیا۔اس موقعہ پر شعبۂ فلسفہ کے ڈاکٹر محمد حیات عامر اورا وریّا کے ڈاکٹر سنجیو کمار نے شرکاء کی جانب سے اکیڈمک اسٹاف کالج کو یادگاری نشان پیش کیا۔ نظامت کے فرائض ڈاکٹر فائزہ عباسی نے انجام دئے۔

ویمنس پالی ٹیکنک طالبات کو خود کفیل بنانے میں اہم رول ادا کر رہا ہے:صبیحہ سیمی
فہمیدہ پروین
علی گڑھ یکم اپریل، ایس ٹی بیورو: علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے ویمنس پالی ٹیکنک کے زیرِ اہتمام منعقدہ سالانہ تقسیمِ انعامات کی تقریب میں مہمانِ خصوصی محترمہ صبیحہ سیمی شاہ اور اعزازی مہمان محترمہ رضوانہ احمد علی نے طالبات کو انعامات سے سرفراز کیا۔ پروگرام کی صدارت انجینئرنگ فیکلٹی کے ڈین پروفیسر محب اللہ نے کی۔طالبات سے خطاب کرتے ہوئے محترمہ صبیحہ سیمی شاہ نے تعلیمِ نسواں خصوصی طور پر انجینئرنگ اور ٹیکنالوجی کے میدان میں ویمنس پالی ٹیکنک کے بیش قیمت تعاون اور کاوشوں کو سراہتے ہوئے کہا کہ ویمنس پالی ٹیکنک طالبات کو خود کفیل بنانے میں اہم رول ادا کر رہا ہے۔محترمہ رضوانہ علی نے سماجی فلاح میں خواتین کے رول کو خصوصی طور پر نشان زد کرتے ہوئے کہا کہ خواتین کسی بھی میدان میں چاہے کھیل کود ہو یا تعلیم کا میدان سب جگہ قابلِ ذکر مظاہرہ کر رہی ہیں۔ویمنس پالی ٹیکنک کی پرنسپل محترمہ سلمیٰ شاہین نے پالی ٹیکنک کی سالانہ رپورٹ پیش کرتے ہوئے حاضرین کو مختلف میدانوں میں ویمنس پالی ٹیکنک کے حاصلات سے روشناس کرایا۔انہوں نے کہا کہ طالبات نے ہر میدان میں بہترین مظاہرہ کیا ہے اور موجودہ تعلیمی میقات میں طالبات کا ممتاز کمپنیوں میں تقرر ہوا ہے۔پروگرام کی صدارت کرتے ہوئے انجینئرنگ فیکلٹی کے ڈین پروفیسر محب اللہ خاں نے اپنے تجربات بیان کئے اور انجینئرنگ کے میدان میں ویمنس پالی ٹیکنک کے رول کو سراہتے ہوئے ویمنس پالی ٹیکنک کی ترقی کے لئے اپنے ہر ممکن تعاون کی یقین دہانی کرائی۔ اس موقعہ پر ان کی اہلیہ محترمہ شاہین جمال بھی موجود تھیں۔حاضرین کا خیر مقدم پالی سوسائٹی کی نائب صدر ساہنی و ارشنی نے کیا جبکہ ڈاکٹر شیبا کمال نے حاضرین کا شکریہ ادا کیا۔

وزیر اعلی اکھلیش یادو آج آئل کمپنی کا افتتاح کریں گے
آگرہ ، یکم، اپریل (یو این آئی) اتر پردیش کے وزیر اعلی اکھلیش یادو کل آگرہ کی ایک آئل کمپنی کاافتتاح کریں گے ۔سرکاری ذرائع نے آج یہاں بتایا کہ وزیر اعلی لکھنؤ سے سرکاری طیارے سے کھیریا ایئرپورٹ پر 12 بج کر 45 منٹ پر اتریں گے ۔ وزیر اعلی وہاں سے شمس آباد واقع آئل انڈسٹری کی یونٹ کا افتتاح کریں گے ۔ اس کے بعد تین بج کر 15 منٹ پروہ لکھنؤ کے لیے روانہ ہو جائیں گے ۔

مالدیپ کی اکادمی برائے لسانیات کے ایک وفدکا اے ایم یو دورہ
علی گڑھ یکم اپریل، ایس ٹی بیورو: مالدیپ کی اکادمی برائے لسانیات کے ایک وفد نے آج علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کا دورہ کیا اور وائس چانسلر لیفٹیننٹ جنرل ضمیر الدین شاہ ( ریٹائرڈ) سے ملاقات کرکے مالدیپ کی اکادمی برائے لسانیات اور علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے درمیان آپسی تعاون اور ثقافتی تبادلہ پر غور و فکر کیا۔مالدیپ کا یہ وفد مسٹرا شرف علی کی قیادت میں ملک کے مختلف علاقوں کا دورہ کرکے ہندوستانی تعلیم و ثقافت کے تعلق سے معلومات حاصل کر رہا ہے۔ اس وفد میں محمدوحید بھی شامل ہیں جنہوں نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے ایم اے ( عربی ) کی ڈگری حاصل کی تھی۔ ٹیم کے دیگر اراکین میں رافیہ عبدالقدیر، نسیمہ محمد، ایاز جا داللہ عظیم، محمد ناظم اور شہما علی شامل تھے۔مالدیپ کے پہلے صدر امین حلیم دیدی نے بھی علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے تعلیم حاصل کی تھی۔ وائس چانسلر جنرل شاہ نے کہا کہ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کو یہ شرف حاصل ہے کہ اس نے چار ممالک کے صدور پیدا کئے ہیں۔ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی نے مالدیپ کے صدر مامون عبدالغیوم کو1983میں ڈی لٹ کی ا عزازی ڈگری سے سرفراز کیا تھا۔ اس وفد نے اس ادارہ کی تاریخی عمارات کو بھی دیکھا اور سرسید کے مزار پر حاضر ہوکر انہیں گل ہائے عقیدت پیش کئے۔

بارش کی وجہ سے فصل خراب ہونے پر کسانوں کا احتجاج
ذیشان مراد علیگ
رام پور،یکم اپریل(ایس ٹی بیورو) بھارتیہ کسان یونین (بھانو) کے کارکنان قومی جنرل سکریٹری محمدحنیف وارثی کی قیادت میں گزشتہ دنوں بارش کے سبب کسانوں کی فصل خراب ہونے کی مانگ کولیکرکلکٹریٹ میں جمع ہوئے اورصوبائی سرکارکے خلاف نعرہ بازی کرتے ہوئے ضلع کلکٹرکوعرضداشت پیش کی۔جس میں کہاگیاہے کہ ضلع میں کسانوں کی تقریبا 80فیصدفصل خراب ہوچکی ہے۔ اس لئے سرکارکوچاہئے کہ کسانوں کوجلدمعاوضہ دے تاکہ ان کے نقصان کی بھرپائی ہوسکے۔ انھوں نے افسوس کااظہارکرتے ہوئے کہاکہ جانچ کے دوران کسانوں کانقصان 30فیصددکھایاگیاہے جوسراسرغلط ہے ۔ انھوں نے کہاکہ سروے کرنے والے ملازمین کے تمام آنکڑے غلط ہیں۔انھوں نے زوردے کرکہاکہ کسانوں کانقصان70سے 90فیصدتک ہواہے۔ اس لئے ضلع کلکٹر ایک بارپھرکسانوں کے نقصان کے بارے میں باریکی سے جانچ کرائیں تاکہ دودھ کادودھ اورپانی کاپانی سامنے آسکے۔ انھوں نے عوامی مفادمیں ضلع کلکٹرسے مانگ کی ہے کہ ہرکسان کونقصان کے مطابق ہی معاوضہ دیاجائے۔ انھوں نے یہ بھی کہاہے کہ افسران کے ذریعہ غلط بیان بازی سے کسانوں میں مایوسی چھائی ہوئی ہے۔ انھوں نے الزام لگایاکہ ضلع انتظامیہ کے ذریعہ کسانوں کااستحصال کیاجارہاہے جس کوہماری تنظیم کسی بھی قیمت پربرداشت نہیں کرے گی۔ اس موقع پر جاویدخاں، محمدنبی، تارہ ، مصطفی خاں، بابوعلی، گڈو، عتیق احمد، مکھن سنگھ، رضوان پردھان نمایاں طورپرموجودتھے۔

محمدحسین خاں عرف زیرابھائی کاانتقال
رام پور،یکم اپریل(ایس ٹی بیورو)یہ خبرانتہائی افسوس کے ساتھ پڑھی جائے گی کہ سینئراخباری ایجنٹ محمدحسین خاں عرف زیرابھائی کاگزشتہ روزعلالت کے سبب انتقال ہوگیا۔ مرحوم نہایت ملنسار،نیک طبیعت اورصوم وصلاۃ کے پابندتھے۔ مرحوم زیرابھائی تقریبا40سالوں سے اردواورہندی کے مختلف اخبارات کے ایجنٹ تھے اوراخباری دنیامیں کافی مقبول عام تھے۔ مرحوم کی نمازجنازہ ان کے دامادحقیقی مولانافیضان اشرف سنبھلی نے اداکرائی اورآبائی قبرستان میں سپردخاک کیاگیا۔ مرحوم زیرابھائی کے فرزند نویدخاں نے بتایاکہ والدگزشتہ کئی ماہ سے علیل تھے اوروہ زیرعلاج تھے۔ واضح رہے کہ زیرابھائی کے سارے کام کاج کی ذمہ داری نویدخاں گزشتہ کئی سالوں سے انجام دے رہے ہیں اوروہ بھی اپنے والدکی طرح محنتی اورملنسارشخصیت کے حامل ہیں۔

ہندوستان کے صحت کی سہولیات کی ترویج میں نابرابری:رئیس
علی گڑھ یکم اپریل، ایس ٹی بیورو:علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے اکنومکس شعبہ کی گیسٹ فیکلٹی ڈاکٹر شیریں رئیس نے حال ہی میں یونیورسٹی آف لکھنؤ کے جی ایل گپتا انسٹیٹیوٹ آف پبلک ہیلتھ کے زیرِ اہتمام منعقدہ قومی سیمینار میں حصہ لے کر اپنا تحقیقی مقالہ پیش کیا۔ڈاکٹر شیریں رئیس نے اپنے تحقیقی مقالے میں صحت کے تعلق سے سہولیات کی ترویج میں نابرابری اور ہندوستان کے اقتصادی فروغ پرا س کے اثرات کا ذکر کیا۔ اس تحقیقی عمل کے تحت انہوں نے ہندوستان میں صحت کے تعلق سے سہولیات کی تقسیم میں بڑے پیمانے پر نا برابری پائی ہے۔ ڈاکٹر شیریں رئیس نے یہ بھی ثابت کیا کہ صحت سہولیات اور فائنینشیل ایکسیسبیلیٹی پر فی کس خرچ جیسی نابرابری شہری علاقوں کے مقابلے دیہی علاقوں میں بڑھتی جا رہی ہیں۔ انہوں نے اپنی تحقیق میں یہ بھی کہا کہ ہندوستان کے مستقل اقتصادی فروغ کو چیلنج کرنے والی یہ نا برابری فی کس پیداوار کو بھی کم کر رہی ہے جس کے سبب فی کس آمدنی، مطالبہ کی سطح اور پیداوار بھی کم ہو رہی ہے۔

تشدد پھیلانے والے محب وطن نہیں ملک مخالف ہیں
مذہب کی روح کو سمجھنے والے کسی بھی پاکھنڈی کو اپنا مذہبی رہنما نہیں بنا سکتے: آدرش پٹیل
لکھنؤ یکم اپریل (پریس ریلیز) انسانی فلاح کے لیے فکر کرنا اور انسانی فلاح کے نیک کام میں لگے رہنا ہی مذہب ہے، اس کے خلاف بھید بھاؤ کرکے کسی کے حقوق کو غصب کرنا اور ناانصافی کرنا اور تشدد پھیلانا لامذہبیت ہے۔ مذکورہ حقیقت کو بیان کرتے ہوئے آدرش پٹیل نے کہا کہ آج کل بھید بھاؤ پھیلا کر اپنی سیاست چمکانے کا بہت چلن ہے۔ در اصل اشتعال انگیز بیانات سے تشدد پھیلانے والے محب وطن نہیں ملک مخالف ہیں۔ اگر ہندوستانی شہری مذہب کے اصل مفہوم اور اس کی روح کو سمجھ لیں تو انھیں کوئی بھی پاکھنڈی مذہبی رہنما بے وقوف نہیں سکتا۔ نتیجتاً پاکھنڈی مذہبی رہنماؤں کی سبھی دوکانیں سمٹ جائیں گی اور آپسی بھائی چارے کو بڑھاوا ملے گا۔ اسی سلسلے میں امامیہ ایجوکیشنل ٹرسٹ کے جنرل سکریٹری مولانا علی حسین قمی سبھی ہندوستان کے شہریوں کو محبت اور بھائی چارے کی ڈور میں باندھنے کے لیے کوشاں ہیں اس سلسلے میں ۱۸؍ اپریل ۲۰۱۵ ء کو دوپہر دو بجے سے شام ۶ بجے تک چھوٹے امام باڑے حسین آباد لکھنؤ میں جشن مرسل اعظم پروگرام کے ذریعہ سے پیغام دینا چاہتے ہیں جس میں مختلف مذہبی رہنماؤں کو مدعو کیا گیا ہے۔ اس میں زیادہ سے زیادہ تعداد میں شریک ہونے کی ضرورت ہے تاکہ جشن مرسل اعظم کا پیغام پورے ملک کے کونے کونے تک پہنچانے اور ملک کو ترقی کی جانب لے جانے اور ملک کا ایک ایک شہری خوشحال اور خود کفیل ہوسکے۔

غذاا و رسد محکمہ کے چیف سیکریٹری کے نجی سکریٹری کو گولی ماری
لکھؤ، یکم اپریل (یو این آئی) اترپردیش کی راجدھانی لکھؤ کے میونسپل علاقہ کی سچیوالیہ کالونی میں کل دیر رات نامعلوم حملہ آور نے غذا و رسد محکمہ کے چیف سکریٹری ہیمنت رائے کے پرائیویٹ سیکریٹری کاشی ناتھ تیواری کو گولی مارکر زخمی کردیا۔پولیس ترجمان نے آج یہاں بتایا ہے کہ رات قریب دس بجے مسٹر تیواری جیسے ہی اپنے گھر کے باہر نکلے تبھی ایک نامعلوم حملہ آور نے انہیں گولی مار دی جس سے وہ زخمی ہوگئے ۔ زخمی حالت میں مسٹر تیواری کو ٹراما سنٹر میں داخل کرایا گیا ہے ۔ گولی چلانے کے سبب کا پتہ نہیں چل سکا۔حملہ آور کو تلاش کیا جارہا ہے۔ پولیس نے چھان بین شروع کردی ہے ۔

گلوبلائزیشن کے نتیجہ میں سماجی نظام میں بڑی تبدیلی: این اے کے درانی
فہمیدہ پروین
علی گڑھ یکم اپریل، ایس ٹی بیورو: علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے شعبۂ علمِ سماجیات میں ڈی آر ایس اول یو جی سی کے تعاون سے ’’ گلوبلائزیشن اینڈ ہیلتھ ‘‘ موضوع پر چل رہا دو روزہ قومی سیمینار آج آرٹس فیکلٹی لاؤنج میں اختتام پذیر ہوا۔اختتامی پروگرام کے مہمانِ خصوصی پرو وائس چانسلر برگیڈیئر ایس احمد علی ( ریٹائرڈ) نے کہا کہ سیمینار کا موضوع نہایت معنی خیز ہے اور گلوبلائزیشن کے سبب ہمارے معاشرے کو در پیش چیلنجیز کو سمجھنے کا موقعہ دیا گیا ہے۔ انہوں نے نوجوانوں کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے کہا کہ آج کی دوڑ دھوپ والی زندگی میں مایوس ہونے کی نہیں بلکہ اپنی طرزِ حیات میں اصلاح کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج ذہنی تناؤ اور کینسر جیسی بیماریاں بڑی تعداد میں پھیل رہی ہیں جن کے سدِّ باب کے لئے طرزِ حیات میں تبدیلی لاکر صحت کو ترجیح دینا ضروری ہے۔ انہوں نے طلبأ و طالبات اور شرکاء کو توصیفی اسناد سے بھی سرفراز کیا۔اسپیشل گیسٹ سوشل سائنسیز فیکلٹی کے ڈین پروفیسر این اے کے درانی نے کہا کہ گلوبلائزیشن کے نتیجہ میں سماجی نظام میں برق رفتاری کے ساتھ تبدیلی واقع ہو رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج کا دور انفارمیشن ٹیکنالوجی کا دور ہے جس میں ہیلتھ خدمات کو فروغ حاصل ہوا ہے لیکن ضرورت ا س بات کی ہے کہ گلوبلائزیشن کا فائدہ عام انسان تک بھی پہونچے۔چودھری چرن سنگھ یونیورسٹی میرٹھ کے سابق وائس چانسلرپروفیسر جے این کے پنڈھیر نے موضوع کے انتخاب پر آرگنائزرس کو مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہا کہ سماجیات اور صحت کے روایتی رشتے کو آج کے تناظر میں اجاگر کئے جانے کی ضرورت ہے اور گلوبالائزیشن کوپیشِ نظر رکھتے ہوئے صحت کے تعلق سے پالیسی سازی کی ضرورت ہے۔شعبۂ علمِ سماجیات کے سربراہ پروفیسر عبدالمتین نے حاضرین کا شکریہ ادا کرتے ہوئے مستقبل میں ایک عالمی سیمینار کے انعقاد کا عہد کیا۔ آرگنائزنگ سکریٹری ڈاکٹر محمد اکرم نے ملک کی مختلف یونیورسٹیوں سے آئے ہوئے ریسرچ اسکالرس، طلبأ و اساتذہ کا شکریہ ادا کیا۔اس موقعہ پر سوشیولوجی شعبہ کے ڈاکٹر عبدالوحید، ڈاکٹر پی کے ماتھر، ڈاکٹر ثمینہ، ڈاکٹر بلال، ڈاکٹر صدف ناصر، ڈاکٹر صالحین، سول ورک شعبہ کے ڈاکٹر نسیم احمد خاں، ڈاکٹر طاہر، ڈاکٹر محمد عارف خاں اور ڈاکٹر عندلیب وغیرہ موجود تھے۔

مدا رس اسلامیہ دین کے مضبوط قلعہ ہیں، جہاں اللہ اور اس کے رسول کی آوازیں بلند ہوتی ہیں :عبید الرحمن عزیز
مظفر نگر، یکم اپریل (ٖٖپریس ریلیز)مدرسہ اشرف العلوم گا ؤں بہڑی کا دو روز ہ سا لا نا اجلاس عام اختتا م پذیر ہوا اجلاس عام کی صدارت مفتی ابو جندل (شیخ الحدیث مدرسہ قا سم العلوم تیو ڑہ) نے کی جبکہ نظا مت کے خو بصورت فرا ئض مو لانا محمد فر مان و قا ری محمد مہتاب نے مشتر کہ طو ر پر انجام دئے اجلاس کا با بر کت آغاز قا ری عبد القیوم (شیخ القراء مدرسہ قاسم العلوم تیو ڑہ) کی تلا وت کلا م اللہ سے ہوا نعت نبی کا نذ را نہ مو لانا محمد صا بر نے پیش کیا تمام علماء کی مو جود گی میں مدرسہ سے حفظ کلا م اللہ مکمل کر نے وا لے طلبا ء کو دستار فضیلت سے نوا زا امسال مدرسہ ہذا میں دو طلباء عزیز نے حفظ کلا م اللہ مکمل کر نے کی سعادت حا صل کی ہے جن میں حا فظ محمد عثمان ابن علی نواز مرحوم مسا وی،حا فظ محمد فجر الدین ابن محمد زا ہدکے نام شا مل ہیں مفتی مظفر الاسلام اور مو لانا زہد استاد دا را لعلوم زکریا نے اپنے دست مبا رک سے حفا ظ کرام کو دستار فضیلت سے نوازا اجلاس میں خطا ب کر تے ہو ئے قا ری عبید الرحمن عزیز قا سمی نے کہا کہ مدا رس اسلامیہ دین کے مضبوط قلعہ ہیں جہاں سے قا ل اللہ قا ل الر سول کی صدا ئیں بلند ہو تی ہیں یہی وہ مدارس ہیں کہ جن میں علم دین حا صل کر نے وا لے علماء کرا م نے اس ملک کو انگریزوں سے آزاد کرا یا اور پھر ملک کے کو نے کو نے میں مدا رس و مکا تب کا جا ل بچھا یا ان مدارس کی بدو لت آج ہمیں مسا جد میں نماز پڑھا نے کے لئے امام نصیب ہو رہے ہیں اور زندگی تمام شعبہ جات میں مدا رس کا اہم کر دار ہے اس ہمیں ان مدارس کی قدر کر نی چا ہئے اور ان کوقائم و دائم رکھنے کے لئے ان کا بھر پو ر تعاون فر ما ئیں ۔مفتی محمو د الحسن (مظا ہر علوم سہا رن پور )نے قرآن کریم کی فضیلت کو بیان کیا کہا کہ قرآن کریم وہ کتاب ہے کہ جس کے اندر اللہ تبا رک وتعا لی نے دنیا و آخرت کے تمام دستور مرتب فر ما ئے یہی وہ دستور ہیں جن پر عمل کر نے سے دو نوں جہان میں کا میا بی ہی کا میابی ہے اور قرآن کریم وہ کتا ب ہے جس کی بدو لت بہت سے لوگوں کا مقام بلند وبالا ہو تا ہے تو کو ئی اس کی وجہ سے ذلیل و خوار ہو تا ہے مطلب یہ کہ دنیا کے اندر رہتے ہو ئے جس انسان نے قرآن کریم کی تعلیما ت کے مطا بق زندگی گذا ری اس کا مقام اونچا ہوا اور جس نے اس کتاب (قرآن کریم )کو ہلکا جانا اور اس کت تعلیمات پر عمل نہ کیا تو وہ ذلیل و خوار ہوا اس لئے بھا ئیو ہمیں زیا دہ سے زیا دہ اپنے بچوں کو حا فظ قر آن بنا نا چا ہئے ۔مفتی ابو جندل (شیخ الحدیث مدرسے قا سم العلوم تیوڑہ )نے اپنے صدارت خطبہ میں کہا کہ علم انسان کے لئے ایک رو شنی ہے جو دنیا اور آخرت دو نو ں جگہ کا آتی ہے جب ہم علم دین سے آرا ستہ ہو ں گے تو ہمیں دنیا میں جینے کا شعور پیدا ہو گا اور پھر ہم بہت سے گنا ہوں سے اپنے آپ کو بچا سکیں گے اپنے اہل و عیال کو ہم رزق حلا ل کھلا ئیں گے تو اولا دیں نیک بنیں گییہی اور لا د ہما رے لئے ذخیرہ آخرت ہو ں گی اگر ہم نے اپنی او لا دوں کو نیک روزی کھلا کر ان کو حا فظ ڈعالم بنا دیا تو کل قیا مت کے دن ہما رے لئے سفا رشی ہو ں گے اور ایسے سفا رشی کہ جن کی سفا رش کو تسلیم کیا جا ئے گا مو صو ف نے مدرسہ اشر ف العلوم کی کا ر کر دگی پر اظمینان کا اظہا ر کر تے ہو ئے ذمہ داران مدرسہ کی حو صلہ افزا ئی کی اور دعا ؤں سے نوازا ان کے علا وہ خطا ب کر نے وا لوں میں مو لانا زاہد حسن (استاد دارا لعلوم زکریا)مفتی مظفر الاسلام ،مو لا نا شمش الدین چتر و یدی،کے نام قا بل ذکر ہیں بظو ر خاص شر کت کر نے وا لو میں مو لانا محمد صا بر،مو نا حنان ،قا ری محمد جعفر،مفتی محمد شعیب،قا ری علی حسنین،قا ری ضیا ء الحق،قا ری انعا م الحق،قا ری محمد را شد،قا ری محمد عالم،قا ری تعظیم،قا ری محمد خو رشید،مو لانا معراج،قا ری محمد امجد،کے نا م قا بل ذکر ہیں ان کے علا وہ قر ب و جوار کے عوا م و خوا ص نے سیکڑوں کی تعداد میں شر کت کی اجلاس کا اختتام مفتی محمود الحسن کی دعا پر ہوا مدرسہ کے مہتمم مو لانا قطب الدین نے اجلاس میں شریک ہو نے وا لے تمام مہمانوں کا شکر یہ ادا کیا

یوپی اردو اکیڈمی کی طرف سے مرتضی ساحل تسلیمی کو ایوارڈ
ادبی حلقوں میں خوشی کی لہر، مرتضیٰ ساحل نے ادب اطفال میں نمایاں کردار اداکیاہے:جاوید تسلیمی
ذیشان مراد علیگ
رام پور،یکم اپریل(ایس ٹی بیورو) اترپردیش اردو اکیڈمی کی جانب سے مختلف شعبوں کے ماہرین کو سند امتیازاوراعزازات سے نوازاگیاہے۔ رامپور کیلئے یہ خوشی کی بات ہے کہ اردواکیڈمی کے ان چنندہ ادباء میں معروف مصنف اورشاعرمرتضیٰ ساحل تسلیمی کوبھی شعبہ ادب اطفال میں اردواکیڈمی کی جانب سے مبلغ 1 لاکھ روپیہ بطوراعزازاورسندامتیازس...


Advertisment

Advertisment