Today: Monday, September, 24, 2018 Last Update: 12:58 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

پہلے ٹسٹ میں پاکستانی کی نیوزی لینڈ پر 248 رن سے شاندار جیت

 

ابوظبی،13 نومبر (یواین آئی)متحدہ عرب امارات میں پاکستان اور نیوزی لینڈ کی کرکٹ ٹیموں کے درمیان کھیلی جانے والی کرکٹ سیریز کے پہلے ٹیسٹ میچ میں پاکستانی ٹیم نے نیوزی لینڈ کو 248 رن سے ہرا کر تین میچوں کی سیریز میں ایک صفر کی برتری حاصل کر لی ہے۔ابْو ظہبی کے شیخ زید اسٹیڈیم میں پاکستانی کرکٹ ٹیم نے نیوزی لینڈ کی ٹیم کو میچ کے پانچویں دن کھانے کے وقفے سے پہلے 248 رنز سے ہرا دیا۔ ٹیسٹ میچ کے آخری روز پاکستان کو میچ جیتنے کے لیے دو وکٹوں کی ضرورت تھی جبکہ نیوزی لینڈ کو میچ بچانے کے لیے کم از کم 90 اوورز کھیلنے تھے۔ پاکستان کو نویں وکٹ جلد حاصل ہو گئی جب چوتھے روز ناٹ آؤٹ جانے والی کیویز کی جوڑی کریگ اور ایش سوڈھی کی شراکت کو 177 کے اسکور پر یاسر شاہ نے توڑ دیا۔ کریگ کو یاسر شاہ نے آؤٹ کیا۔ آخری وکٹ پر سوڈھی اور بولٹ نے 54 رنز کا اضافہ کیا اور جب نیوزی لینڈ کی ٹیم کا مجموعی اسکور 231 ہوا تو عمران خان نے سوڈھی کی وکٹ حاصل کر کے میچ کو منطقی انجام پر پہنچا دیا۔ملتان سے تعلق رکھنے والے تیز بالر راحت علی کو میچ کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا۔ راحت علی نے میچ کی دونوں اننگز میں نیوزی لینڈ کے چھ کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا۔ راحت علی کی عمر 26 برس ہے اور وہ بائیں ہاتھ سے فاسٹ میڈیم گیند پھینکتے ہیں۔ میچ کے بہترین کھلاڑی کا انعام وصول کرنے کے بعد اْن کا کہنا تھا کہ یہ اْن کا پہلا مین آف دی میچ انعام ہے اور وہ اِسے حاصل کر کے بہت خوش ہیں۔ راحت علی نے اپنے کوچ وقار یْونس اور بالنگ کوچ مشتاق احمد کی رہنمائی کی بھی تعریف کی۔ راحت علی کے مطابق کوچ نے خاص طور پر وکٹوں کے بیچ گیند کرنے کی ہدایت کی تھی اور اِس پر عمل کر کے وہ کامیاب رہے۔ راحت علی نے اِس خواہش کا اظہار بھی کیا کہ وہ اگلے ٹیسٹ میچوں میں بہتر پرفارمنس کا مظاہرہ کرنا چاہتے ہیں۔ٹیسٹ میچ جیتنے پر پاکستانی ٹیم کے کپتان مصباح الحق نے مسرت اور اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اْن کی ٹیم ایک نوجوان ٹیم ہے اور کسی کو بھی اِس ٹیم سے ایسی کارکردگی کی توقع نہیں تھی۔ مصباح نے میچ کے دوران گراؤنڈ میں اور باہر سے ملنے والی حمایت و تعاون پر سبھی کا شکریہ ادا کیا۔ پاکستانی ٹیم کے کپتان نے واضح کیا کہ وہ سری لنکا اور آسٹریلیا کے خلاف کھیلی جانے والی ایک روزہ میچوں میں اسکور نہیں کر سکے تھے۔ ان کیبقول وہ اپنی فارم حاصل کرنے کی کوشش میں تھے اور اب وہ اِسے حاصل کرنے میں کامیاب ہو گئے ہیں۔ مصباح نے نیوزی لینڈ کے خلاف پہلے ٹیسٹ میچ کے دوران یونس خان اور اظہر علی کی بیٹنگ کی بھی تعریف کی۔ مصباح الحق اب پندرہ ٹیسٹ میچ جیت کر اپنے ملک کے سب سے کامیاب ترین کپتان بن گئے ہیں۔میچ کے بعد نیوزی لینڈ کرکٹ ٹیم کے کپتان برینڈن میک کلم نے پاکستانی ٹیم کے کپتان مصباح الحق کو مبارک دیتے ہوئے کہا کہ وہ واضح طور پر اِس میچ پیچھے رہے ہیں۔ میک کلم نے اعتراف کیا کہ پہلے ٹیسٹ میچ میں پاکستانی ٹیم کی برتری ضرور قائم رہی ہے لیکن اگلے دو ٹیسٹ میچوں میں اْن کی ٹیم پاکستانی ٹیم کا بھرپور مقابلہ کرے گی۔ نیوزی لینڈ کی ٹیم کے کپتان نے اِس یقین کا اظہار بھی کیا کہ اگلے میچوں میں اْن کی ٹیم اپنے کھیل میں مزید بہتری لائے گی کیونکہ ٹیسٹ کرکٹ میں سیکھنے کا عمل مسلسل جاری رہتا ہے لیکن پاکستان کا اسپِن بالنگ کے ساتھ ساتھ ریورس سوئنگ کا خطرہ اپنی جگہ پر موجود رہے گا۔ میک کلم نے پاکستانی ٹیم کی بیٹنگ اور بالنگ کی بھی تعریف کی۔

 

 

...


Advertisment

Advertisment