Today: Friday, September, 21, 2018 Last Update: 05:12 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

پنے اور راجکوٹ بنی آئی پی ایل کا حصہ

 
نئی دہلی، 08دسمبر (یو این آئی) پنے اور راجکوٹ کی ٹیمیں انڈین پریمیئر لیگ (آئی پی ایل) کے اگلے دو سیزن 2016اور 2017میں ٹوئنٹی 20کرکٹ ٹورنامنٹ کا حصہ بنیں گی۔سنجیو گوئنکا کی ملکیت والی نیو رائزنگ کنسورشیم نے پنے کی ٹیم جبکہ موبائل فون ساز ہندستانی کمپنی انٹیکس نے راجکوٹ کی ٹیم کو خریدا ہے ۔نیو رائزنگ نے 16 کروڑ روپے سے کم اور انٹیکس نے 10 کروڑ روپے سے کم کی بولی لگا کر نئی فرنچائزز ٹیموں کو خریدا۔دونوں نئی ٹیمیں پنے اور راجکوٹ آئی پی ایل کے اگلے دو سال 2016 اور 2017کے مرحلے میں ٹورنامنٹ کا حصہ ہوں گی۔دہلی میں منگل کو آئی پی ایل کی آپریشن کونسل کے اجلاس میں نئی ٹیموں اور ان کے مالکان کا اعلان کیا گیا۔ہندستانی کرکٹ کنٹرول بورڈ (بی سی سی آئی) نے اس کی جانکاری دیتے ہوئے بتایا کہ پنے اور راجکوٹ کی ٹیمیں معطل چنئی سپرکنگس اور راجستھان رائلس کی جگہ لیں گی۔
آئی پی ایل کے چیئرمین راجیو شکلا نے مختصر پریس کانفرنس میں بتایا کہ دو نئی فرنچائزیز کی جگہ لینے کے لیے پانچ بولی دہندہ تھے جنہوں نے اس عمل میں حصہ لیا۔انہوں نے بتایا کہ چنئی اور راجستھان کی جگہ دو نئی ٹیموں کے حقوق حاصل کرنے کے لیے بولی لگانے والوں میں چنئی واقع سیمنٹ کمپنی چیتیناڈ گروپ، ہرش گوئنکا کا آرپی جی گروپ اور فارما کمپنی بھی شامل تھے ۔انہوں نے بتایا کہ بولی میں دعویداروں کو آئی پی ایل کی طرف سے مقرر بیس پرائس 40کروڑ روپے سے کم قیمت پر بولی لگانی تھی۔اس کا مطلب یہ ہے کہ بی سی سی آئی اپنی مرکزی آمدنی پول سے نئے مالک کو زیادہ سے زیادہ 40کروڑ روپے کی رقم ادا کرے گی۔بولی میں جس دعویدار نے سب سے کم قیمت کی بولی لگائی اس نئی فرنچائزز کا حق ملا۔نیو رائزنگ معاہدے کے تحت اب بی سی سی آئی کو ہرسال 16کروڑ روپے جبکہ انٹیکس 10کروڑ روپے ادا کرے گی۔نیو رائزنگ گھریلو ٹیم پنے جبکہ انٹیکس کی گھریلو ٹیم راجکوٹ ہوگی۔ دونوں ٹیمیں چنئی اور راجستھان کی جگہ لیں گی جنہیں سال 2013آئی پی ایل کرپشن کیس میں سپریم کورٹ کی تحقیقاتی کمیٹی نے دو سال کے لئے آئی پی ایل سے معطل کر دیا تھا۔آئی پی ایل چھ میں راجستھان کے شریک مالک راج کندرا کو بیٹنگ اور چنئی کے ٹیم پرنسپل گروناتھ میپن کو بیٹنگ اور سٹے بازوں کے ساتھ میچ کی جانکاری کا اشتراک کرنے کا مجرم پایا گیا تھا جس کے بعد دونوں ٹیموں کو آئی پی ایل ٹورنامنٹ سے دو سال کے لئے معطل کر دیا گیا تھا۔دونوں نئے شہروں کے لئے فرنچائزیز کا انتخاب بورڈ نے سب سے کم قیمت پر بولی لگانے کی بولی کے عمل کے تحت کیا ہے ۔آئی پی ایل کے لیے نئی ٹیموں کا مالکانہ حق حاصل کرنے کے لئے کل 20کمپنیوں نے اپنی دعویداری پیش کی تھی اور منگل کو ہوئی آخری بولی کے عمل میں پانچ کمپنیوں نے اس عمل میں حصہ لیا۔یہ پہلی بار ہے جب بی سی سی آئی نے ٹیم کے لئے بیس پرائس طے کیا تھا۔یہ بیس پرائس 40کروڑ روپے تھا۔اسی کے ساتھ معطل ہو چکی چنئی اور راجستھان کی ٹیموں کے کھلاڑیوں کے مفادات کو ذہن میں رکھتے ہوئے نئی ٹیموں کو دونوں معطل ٹیموں سے پانچ پانچ کھلاڑیوں کو منتخب کرنے کا اختیار ہوگا۔اس کا فیصلہ ڈرافٹ کے دوران کریں گے ۔اگلے سیزن کے لئے کھلاڑیوں کی ٹریڈنگ ونڈو 15دسمبر سے شروع ہو رہی ہے ۔
 
...


Advertisment

Advertisment