Today: Thursday, September, 20, 2018 Last Update: 03:00 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

سیمی فائنل سے پہلے تیاریوں میں مصروف ٹیم انڈیا


سڈنی، 23 مارچ (یو این آئی) دفاعی چمپئن ٹیم انڈیا خطاب سے دو قدم کے فاصلے پر ہے لیکن یہ فاصلہ طے کرنا سب سے مشکل ہے اور آسٹریلیا کے خلاف عالمی کپ کے سیمی فائنل میں کسی بھی غلطی کی گنجائش سے بچنے کیلئے وہ ابھی سے تیاریوں میں لگ گئی ہے ۔سڈنی کرکٹ گراؤنڈ کے قریب پیر کو کھلاڑیوں نے نیٹ پریکٹس کی جس میں آل راؤنڈر سریش رینا نے آسٹریلیا کے تیز گیند بازوں خصوصا مشیل اسٹارک اور مچل جانسن کی گیندوں کا سامنا کرنے کے لیے ٹینس بال سے جم کر نیٹ پریکٹس کی۔ٹینس بال سے تیز گیند بازی اٹیک کے خلاف تیاری کرنا بہت پرانا طریقہ ہے لیکن فارم میں چل رہے رینا نے اسی طریقے پر انحصار کرتے ہوئے پریکٹس کی۔ رینا نے تقریبا 45 منٹ اسی طرح سے بلے بازی کی پریکٹس کی۔پاکستان میچ سے پہلے اسٹول پر چڑھ کر دراز قد فاسٹ بولر محمد عرفان کا سامنا کرنے کے لیے جس طرح سے ٹیم انڈیا کے کھلاڑیوں نے خود کو تیار کیا تھا اسی طرح سے کوچڈنکن فلیچر نے مخالف ٹیم کے تیز گیند بازوں کا سامنا کرنے کے لیے ٹینس بال سے کھلاڑیوں کو پریکٹس کرائی۔ہندستانی بلے بازوں نے نیٹ پریکٹس کے دوران تیز گیند بازوں اور اسپنروں سے نمٹنے کے لیے تیاری کی۔رینا میدان میں بائیں جانب کوچ فلیچر کے ساتھ ٹینس ریکیٹ اور بال لے کر مشق کر رہے تھے تو انہوں نے فلیچر کے ساتھ بلے بازی بھی کی۔ٹینس گیند عام گیند سے زیادہ اچھلتی ہے اور اس سے ان کو شاٹ بال کھیلنے میں مدد ملے گی۔رینا کا سب سے بڑا مسئلہ ہے کہ انہیں سب سے زیادہ پریشانی شارٹ بال کھیلنے میں ہوتی ہے اور ٹینس بال سے بلے باز کو بہتر طریقے سے پریکٹس کرنے میں مدد ملتی ہے ۔فلیچر کے ساتھ رینا نے گیند کو ہک کرنے کی مشق کی۔ اس دوران رینا کچھ شاٹس کھیلنے میں کامیاب رہے تو کچھ میں چوک گئے ۔نیٹ پریکٹس میں کپتان مہندر سنگھ دھونی بھی کافی فعال نظر آئے ۔دھونی نے کافی جارحیت کے ساتھ سرو کئے اور بہت باؤنسر بھی ڈالے ۔آسٹریلیا کے تیز گیند باز مشیل اسٹارک اس طرح کی گیندوں کے لئے مشہور ہیں۔ اگرچہ رینا اس دوران بہت آرام دہ نہیں لگ رہے تھے ۔اس کے بعد دھونی نے رائنا کے ساتھ کھیل کو لے کر بات چیت کی۔ہندستانی اوپنر شکھر دھون نے بھی اس کے بعد ٹینس سرو کا سامنا کیا اور قریب 10 منٹ تک اس کی پریکٹس کی۔ہندوستان کو آسٹریلیا کے خلاف 26 مارچ کو دوسرے سیمی فائنل میں کھیلنا ہے ۔مشترکہ میزبان ٹیم کو اپنے گھریلو میدان پر کھیلنے کے ساتھ ٹیم انڈیا کے خلاف گزشتہ ٹیسٹ اور سہ رخی سیریز میں مسلسل جیت کے ریکارڈ کو بھی اہم سمجھا جا رہا ہے ۔ہندستان نے آسٹریلوی ٹیم کے خلاف گزشتہ تین ماہ میں کوئی میچ نہیں جیتا ہے اور اسی کو لے کر فی الحال آسٹریلیا کا پلڑا بھاری لگ رہا ہے ۔لیکن موجودہ عالمی کپ میں ہندستان نے کوئی میچ نہیں ہارا ہے اور تمام ساتوں میچوں میں مخالف ٹیم کو آل آؤٹ کرنے کا عالمی ریکارڈ بھی بنایا ہے ۔ٹیم انڈیا اگرچہ اچھی فارم میں ہے لیکن اہم مرحلے پر وہ کسی غلطی سے بچنا چاہتی ہے ۔ہندوستانی بلے بازوں نے جہاں تسلی بخش کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے وہیں گیند بازوں نے لاجواب کارکردگی کا مظاہرہ کر کے ٹیم کو جیت کی منزل تک پہنچایا ہے ۔لیکن ہندوستان کا مڈل بلے بازی آرڈر کو ابھی سدھار کی ضرورت ہے جس میں رینا کی پریشانی شارٹ بال کو لے کر سب سے زیادہ ہے ۔سڈنی کی پچ بھی میچ میں اہم کردار ادا کر سکتی ہے اور اگر پچ گھریلو ٹیم کے حق میں رہی تو مخالف ٹیم کے بولر بڑی پریشانی کھڑی کر سکتے ہیں ۔ مشق کے دوران ٹیم انڈیا کے کھلاڑی اپنی انہی خامیوں کو دور کرتے دکھائی دیے جس راگھویندر کے ساتھ کچھ بلے بازوں نے لیدر بال سے شارٹ بال کھیلنے کی مشق کی۔
 

 

...


Advertisment

Advertisment