Today: Monday, September, 24, 2018 Last Update: 01:03 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

امید ہے چوکرس کے ٹھپے سے سبق لے گی ٹیم:جنوبی افریقی کوچ

 

سڈنی16مارچ(آئی این ایس انڈیا)جنوبی افریقہ کے کوچ رسل ڈومنگو نے امید جتائی ہے کہ ان کے کھلاڑی ٹیم سے جڑے چوکرس کے ناپسندیدہ ٹھپہ سے سبق لے کر اس بار سری لنکا کے خلاف ہونے والے کوارٹر فائنل میچ میں اس طرح کی غلطیوں سے بچنے کی کوشش کرے گی۔ڈومنگو سے 18مارچ کو سڈنی میں ہونے والے میچ سے قبل جب ٹیم کے دباؤ کے حالات میں بکھرنے کی عادت کے بارے میں پوچھا گیا، تو انہوں نے کہا کہ پچھلے کچھ وقت سے یہ(چوکرس)جنوبی افریقی کرکٹ کا حصہ رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ ہم نے اس پر بات کی،ہمیں اس سچائی کا سامنا کرنا پڑتا ہے کہ سابق میں ہم نے موقع گوائے تھے،امید ہے کہ ہم نے پچھلی ٹیموں کی غلطیوں سے سبق لیا ہوگا،اب ہم نہیں چاہتے کہ ہمارے ساتھ ایسا کچھ ہو لیکن ہمارا بنیادی مقصد اچھی کرکٹ کھیلنا ہے۔سابق میں کیا ہوا ہم اس پر توجہ نہیں دینا چاہتے ہیں۔جنوبی افریقہ کو خطاب کا دعویدار مانا جا رہا ہے لیکن 1992میں پہلی بار عالمی کپ میں اترنے کے بعد دباؤ میں بکھرنے کی اس کی ٹیم کی طویل تاریخ رہی ہے۔جنوبی افریقہ تب سڈنی میں بارش کے قوانین کی وجہ سے انگلینڈ سے سیمی فائنل میچ ہار گیا تھا کیونکہ اسے ایک گیند پر 22رن کا ناممکن ہدف دیا گیا تھا۔جنوبی افریقہ 1996میں کوارٹر فائنل میں ہار گیا جبکہ 1999میں بعد میں چمپئن بنے آسٹریلیا سے سیمی فائنل میں میچ ٹائی چھوٹنے کی وجہ سے وہ خطاب کی دوڑ سے باہر ہو گیا تھا،اس کے بعد 2003میں جنوبی افریقہ کا سری لنکا سے میچ ٹائی چھوٹا۔وہ ڈک ورتھ لیوس قانون سے رنز کا صحیح اندازہ نہیں کر پایا اور اس طرح سے پہلے دور میں باہر ہو گیا۔یہ ورلڈ کپ جنوبی افریقہ کی میزبانی میں کھیلا گیا تھا۔جنوبی افریقہ اس کے بعد 2007میں آسٹریلیا سے سیمی فائنل میں ہار گیا اور 2011میں نیوزی لینڈ نے اسے کوارٹر فائنل سے آگے نہیں بڑھنے دیا تھا۔ڈومنگو نے کہا کہ ہم جانتے ہیں کہ اگر ہم اپنی صلاحیت سے کھیلتے ہیں تو پھر ہم سری لنکا کو شکست دینے میں کامیاب رہیں گے۔
 

 

...


Advertisment

Advertisment