Today: Monday, September, 24, 2018 Last Update: 01:11 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

ڈی ویلیئرس کے سامنے بے بس ہوگیا متحدہ عرب امارات

 

یواے ای کو 146رنوں سے دی شکست،کپتان ڈی ویلیئرس اور فرحان نے جمائی نصف سنچری
ویلنگٹن، 12 مارچ (یو این آئی) کپتان اے بی ڈیولیرس کی شاندار 99 رنز کی اننگز اور دو وکٹ، فرحان بہار الدین (ناٹ آؤٹ 64) کی بہترین نصف سنچری اور گیند بازوں کے بہترین کردگی کی بدولت جنوبی افریقہ نے جمعرات کو ایسوسی ایٹ ٹیم متحدہ عرب امارات کو 146 رنز سے ہرا دیا۔ویلنگٹن کے میدان پر کھیلے گئے اس یک طرفہ مقابلے میں جنوبی افریقہ نے پہلے بلے بازی کرتے ہوئے مخالف ٹیم کو 342 رنز کا بڑا ہدف دیا جس کا پیچھا کرتے ہوئے متحدہ عرب امارات کی ٹیم 47.3 اوور میں 195 رن پرآل آؤٹ ہو گئی۔جنوبی افریقی کپتان اور بلے باز ڈیولیرس بھلے ہی اپنے کیریئر کی 21ویں سنچری بنانے سے چوک گئے لیکن انہوں نے گیند بازی کرتے ہوئے اپنے کیریئر کے بہترین 15 رنز پر دو وکٹ لیے ۔متحدہ عرب امارات کے وکٹ کیپر بلے باز سوپنل پاٹل نے آخر تک اپنی ٹیم کی باگ ڈور سنبھالے رکھی اور شاندار نصف سنچری لگاتے ہوئے ناٹ آؤٹ 57 رن بنائے ۔پاٹل کے علاوہ کوئی بھی بلے باز 40 کے ہندسے کو بھی نہیں چھو سکا ،ٹیم کے پانچ بلے باز دس رن کے ذاتی اسکور کو بھی پار نہیں کر سکے ۔وہیں جنوبی افریقہ کے اسکور کو 300 کے پار پہنچانے میں اہم کردار ادا کرنے والے بہار الدین نے اپنے کیریئر کی تیسری نصف سنچری لگاتے ہوئے 64 رن بنائے تو وہیں مورنے مورکل اور ورنون فلینڈر نے دو دو وکٹ لے کر مخالف ٹیم کی کمر توڑ کر رکھ دی۔342 رنز کے بڑے ہدف کا تعاقب کرنے اتری متحدہ عرب امارات کی ٹیم کا شروعات اچھی نہیں رہی اور اس کے ابتدائی تین وکٹ 45 رن کے اسکور پر گر گئے ۔اوپنر بیریگر نے 21 گیندوں کا سامنا کیا اور محض پانچ رنز بنا کر مورکل کا شکار بنے ۔اس کے بعد امجد علی بھی سستے میں نمٹ گئے اور 36 گیندوں پر تین چوکوں کی مدد سے 21 رنز بنا کر بہارالدین کو کیچ تھما بیٹھے اور ڈومني کا پہلا شکار بنے ۔امجد کے آؤٹ ہونے کے بعد خرم خان 13 ویں اوور میں 12 رن کے ذاتی اسکور پر مورکل کا دوسرا شکار بن کر پویلین لوٹ گئے ۔اس کے بعد وکٹ کیپر بلے باز سوپنل پاٹل نے شومان انور کے ساتھ مل کر اننگز کو سنبھالا اور چوتھی وکٹ کے لیے اننگز کی سب سے زیادہ 63 رن کی شراکت نبھائی اور اسکور 100 کے پار پہنچایا۔انتہائی دھیمے انداز میں کھیل رہی متحدہ عرب امارات کی ٹیم کا چوتھا وکٹ انور کے طور پر 30 ویں اوور میں گرا اور اننگز پوری طرح لڑکھڑا گئی۔انور نے 64 گیندوں کا سامنا کیا اور پانچ چوکوں کی مدد سے 39 رن بنائے ۔انورکے آؤٹ ہونے کے بعد متحدہ عرب امارات کے ایک سرے پر اپنا وکٹ سنبھالے کھڑے سوپنل کا ساتھ دینے کے لیے کوئی بھی بلے باز زیادہ دیر نہیں ٹک سکا۔ثقلین حیدر سات، امجد جاوید پانچ اور کپتان محمد توقیر محض تین رنز بنا کر آؤٹ ہو گئے ۔گیندباز محمد نوید نے ضرور کچھ دیر میچ میں اپنے کرکٹ کے شائقین کو تفریح کا سامان فراہم کیا اور 15گیندوں میں دو چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے 17 رن بنائے لیکن وہ 46 ویں اوور میں فلینڈر کا پہلا شکار بنے اور ٹیم کے نویں وکٹ کے طور پر آؤٹ ہو کر پویلین لوٹ گئے ۔سوپنل پاٹل نے شاندار نصف سنچری لگاتے ہوئے ناٹ آؤٹ 57 رن بنائے ۔انہوں نے 100 گیندوں کا سامنا کیا اور پانچ چوکے لگائے ۔وہیں عالمی کپ میں پہلی بار کھیل رہے فہد الھاشمي کھیلنے ہی نہیں اتر سکے ۔مورنے مورکل سب سے زیادہ کامیاب بولر ثابت ہوئے اور انھوں نے 10 اوور میں 23 رن دے کر دو وکٹ حاصل کئے ۔اس کے علاوہ ڈیولیرس نے اپنے کیریئر کی بہترین بولنگ کرتے ہوئے تین اوور میں 15 رن دے کر دو وکٹ اپنے نام کیے ۔اس سے پہلے انہوں نے سال 2014 میں نیوزی لینڈ کے خلاف گیند بازی کرتے ہوئے 28 رن پر دو وکٹ لئے تھے ۔وہیں فلینڈر نے آٹھ اوورز میں 34 رنز دے کر دو وکٹ اپنے نام کئے جبکہ تیز گیند باز اسٹین، ڈومني اور اسپنر عمران طاہر کو ایک ایک وکٹ ہاتھ لگا۔ڈیولیرس نے آج کی اپنی 99 رنز کی قیمتی اننگز کے دوران چار چھکے لگانے کے بعد پورے ورلڈ کپ میں 20 چھکے لگاکر ایک اور ریکارڈ اپنے نام کیا۔اس سے پہلے یہ ریکارڈ 2007 کے ورلڈ کپ میں 18 چھکے اڑانے والے آسٹریلیا کے میتھیو ھیڈن کے نام تھا۔اس سے پہلے ٹاس جیت کر متحدہ عرب امارات نے جنوبی افریقہ کو پہلے بلے بازی کرنے کی دعوت دی اور مخالف ٹیم کا پہلا وکٹ محض 17 رنز کے اسکور پر گرا۔ اوپنر ہاشم آملہ 12 رنز کے ذاتی اسکور پر محمد نوید کا شکار بنے اور امجد علی کو کیچ تھماکر پویلین لوٹ گئے ۔اس کے بعد کوئنٹن ڈی کاک اور رولي روسو نے اننگز کو آگے بڑھایا لیکن ڈی کاک زیادہ دیر ساتھ نہیں نبھا سکے اور 26 رنز کے ذاتی اسکور پر پویلین لوٹ گئے ۔ڈی کاک نے اب تک عالمی کپ میں کھیلی چھ اننگز کے دوران 8.8 کی اوسط سے صرف 53 رن بنائے ہیں جس میں سب سے زیادہ متحدہ عرب امارات کے خلاف 26 رنز ہیں۔ڈی کاک کے آؤٹ ہونے کے بعد کپتان ڈیولیرس نے روسو کے ساتھ اننگز کو سنبھالا لیکن روسو اپنی نصف سنچری سے چوک گئے اور محمد توقیر کی گیند پر انہیں ہی کیچ تھما بیٹھے ۔انہوں نے 49 گیندوں کا سامنا کیا جس میں آٹھ چوکوں کی مدد سے 43 رن بنائے ۔روسو کے پویلین لوٹنے کے بعد ڈیولیرس اور ملر نے مل کر چوتھے وکٹ کے لیے اننگز کی سب سے زیادہ 108 رنز کی شراکت نبھائی اور ٹیم کا اسکور 204 پر پہنچا دیا۔ملر اپنی نصف سنچری سے صرف ایک رن سے چوک گئے اور 48 گیندوں میں دو چوکوں کی مدد سے 49 رنز بنا کر محمد نوید کا دوسرا شکار بنے ۔اس کے بعد ڈیولیرس نے جے پی ڈومني کے ساتھ اننگز کو آگے بڑھایا لیکن 43 ویں اوور میں وہ ایک غلط شاٹ لگاتے وقت کامران شہزاد کا شکار بنے اور امجد جاوید کو کیچ تھما بیٹھے ۔اپنی سنچری سے صرف ایک رن سے چوکے ڈیولیرس نے 82 گیندوں کا سامنا کیا جس میں انہوں نے چھ چوکے اور چار چھکے لگائے ۔ڈومني نے 28 گیندوں میں 23 رنز کا تعاون دیا اور وہ 47 ویں اوور میں محمد نوید کا تیسرا شکار بنے ۔اس کے بعد ایسا لگا تھا کہ جنوبی افریقہ کی اننگز کو 300 کے پار پہنچنے میں مشکل ہوگی لیکن بچی کھچی کسر بہار الدین اور فلینڈر نے مل کر پوری کر دی اور اننگز کو 341 تک پہنچا دیا۔ بہار الدین نے اپنی شاندار اننگ میں 31 گیندوں کا سامنا کیا جس میں پانچ چوکے اور تین چھکوں کی مدد سے ناٹ آؤٹ 64 رن بنائے ۔تیز گیند باز نوید کو 10 اوور میں 63 رن دے کر تین وکٹ ہاتھ لگے جبکہ مہنگے ثابت ہوئے امجد جاوید 10 اوور میں 87 رن دے کر ایک وکٹ ہی جھٹک سکے ۔محمد توقیر نے 10 اوور میں 47 رن دے کر ایک وکٹ لیا جبکہ کامران شہزاد کو آٹھ اوور میں 59 رن دے کر ایک ہی وکٹ ملا۔
 

 

...


Advertisment

Advertisment