Today: Tuesday, September, 25, 2018 Last Update: 07:01 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

جیت کا سلسلہ برقرار رکھنے اتریگی ہندوستانی کرکٹ ٹیم

 

عالمی کپ میں ہندوستان اور ویسٹ انڈیز کی ٹیمیں سات بار آمنے سامنے رہی ہیں جس میں سے ہندوستان نے چار بار جیت کا پرچم لہرایا ہے

پرتھ، 05 مارچ (یو این آئی) عالمی کپ میں اپنے تین میچ جیت کر پول بی پوائنٹ ٹیبل میں سرفہرست مقام پر قابض گزشتہ چمپئن ہندوستان جمعہ کو پرتھ کے میدان پر ویسٹ انڈیز کے خلاف اپنی جیت کی مہم کو آگے بڑھائے گا اور اپنی جیت کاسلسلہ ہر حال میں برقرار رکھنا چاہے گا ۔واکا میدان پر کھیلے جانے والے یہ مقابلہ چمپئن بمقابلہ چمپئن ہوگا جس میں دو بار کی ورلڈ کپ چمپئن ہندستانی ٹیم دو بار کی ورلڈ فاتح ویسٹ انڈیز سے نبرد آزما ہوگی۔ہندوستان نے کپل دیو کی کپتانی میں سال 1983 اور مہندر سنگھ دھونی کی قیادت میں 2011 میں عالمی کپ اپنے نام کیا ہے جبکہ ویسٹ انڈیز مسلسل دو بار 1975 اور 1979 میں یہ خطاب اپنے نام کر چکی ہے ۔موجودہ عالمی کپ میں اگرچہ ہندوستانی ٹیم نے شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے اب تک کے اپنے تینوں میچ جیتے جبکہ ویسٹ انڈیز چار میں سے صرف دو میچ ہی اپنے نام کر سکی ہے ۔ گزشتہ میچ میں ہندستان نے متحدہ عرب امارات کو شکست دی تھی تو وہیں ویسٹ انڈیزکو سڈنی میں جنوبی افریقہ کے خلاف کھیلے گئے میچ میں شکست ہوئی تھی۔
عالمی کپ میں گزشتہ نو سیزن میں ہندستان اور ویسٹ انڈیز کی ٹیم سات بار آمنے سامنے رہی ہیں جس میں سے ہندستان نے چار بار جیت کا پرچم لہرایا ہے جبکہ ویسٹ انڈیز تین بار جیتنے میں کامیاب رہی ہے ۔پرتھ کے میدان پر ہونے والے اس میچ میں کمال کی بات یہ ہوگی کہ جمعہ کو ہندستان میں رنگوں کا تہوار ہولی ہے اور اس سے پہلے سال 2011 میں دونوں ٹیمیں ہولی کے دن آپس میں کھیلی تھیں۔ اگرچہ یہ مقابلہ ہندستان نے جیتا تھا۔ایس سری نواس وینکٹ راگھون کی قیادت میں ہندستان نے 1979 میں اپنا پہلا عالمی کپ مقابلہ ویسٹ انڈیز کے خلاف کھیلا تھا۔ایجبیسٹن میں کھیلے گئے اس میچ میں ہندوستان کو 190 پر آل آؤٹ کرنے کے بعد کیریبین ٹیم نے ایک وکٹ پر 194 رنز بنا کر نو وکٹ سے یہ میچ جیت لیا تھا۔ سال 1979 میں ویسٹ انڈیز کی ٹیم نے عالمی کپ خطاب اپنے نام کیا تھا۔اس کے بعد سال 1983 میں کپل دیو کی کپتانی میں ہندستان نے مخالف ٹیم کو 34 رنز سے شکست دے کر اپنی اہلیت کی مثال دی اور اس سال سب کو چونکاتے ہوئے عالمی کپ خطاب اپنے نام کیا۔
سال 1983 کے عالمی کپ ٹورنامنٹ کے دوران دونوں ٹیمیں تین بار آمنے سامنے رہیں جس میں ہندوستان نے اسے دو مرتبہ شکست دی جبکہ ایک بار ویسٹ انڈیز کی ٹیم جیتنے میں کامیاب رہی۔1983 ورلڈ کپ کا فائنل بھی دونوں ٹیموں کے درمیان ہوا تھا جس میں ہندستان کو 183 رنز پر آل آؤٹ کرنے کے بعد بھی ویسٹ انڈیز کی ٹیم اپنا خطاب بچانے میں ناکام رہی اور فائنل مقابلہ 43 رن سے ہار گئی۔دوسری طرف ہندستان نے پہلا ورلڈ کپ خطاب اپنے نام کیا۔1983 کے ورلڈ کپ کے بعد دونوں ٹیمیں قریب دس سال بعد ایک بار پھر آمنے سامنے رہیں۔ محمد اظہر الدین کے ہاتھوں میں ٹیم کی باگ ڈور کے بعد ہندوستان 197 پر آل آؤٹ ہو گئی۔ اگرچہ بارش سے متاثر اس میچ میں ویسٹ انڈیز کو 195 رنز کا نظرثانی ہدف دیا گیا جس پر کیریبین ٹیم نے پانچ وکٹ کے نقصان پر ہی قابو پا لیا اور جیت کا پرچم لہرایا۔پچھلی بار سال 2011 میں مہندر سنگھ دھونی کی قیادت میں ہندستانی ٹیم نے ایم اے چدمبرم اسٹیڈیم میں ڈیرن سیمی کی قیادت والی ویسٹ انڈیز کو 269 کا ہدف دیا جس کے جواب میں کیریبین کھلاڑی 188 پر ہی ڈھیر ہو گئے ۔ہندوستان نے ہولی کے دن کھیلا گیا یہ مقابلہ 80 رنز سے جیت لیا۔ اپنے گزشتہ تینوں میچ جیت کر ہندستانی ٹیم مضبوط پوزیشن میں نظر آ رہی ہے جبکہ اپنے پہلے مقابلے میں جائنٹ کلر آئرلینڈ سے ہارنے والی ویسٹ انڈیز نے واپسی کرتے ہوئے اگلے دو مقابلے جیتے ہیں۔ اگرچہ وہ جنوبی افریقہ کے خلاف کھیلا گیا پچھلا مقابلہ ہار گئی تھی اور ہندوستان کے بعد وہ اپنے اگلے میچ میں متحدہ عرب امارات سے کھیلے گي جس میں امید ہے کہ وہ جیت کا پرچم لہرانے میں کامیاب ہو جائے ۔

 

 

...


Advertisment

Advertisment