Today: Tuesday, September, 25, 2018 Last Update: 06:10 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

سنسنی خیز مقابلے میں کیویوں نے دی دیرینہ حریف کنگاروں کو پٹخنی


بولٹ اور اسٹارک کے طوفان کے درمیان کین بنے کیویوں کے پتوار
آکلینڈ، 28 فروری (یو این آئی) کپتان برنڈن میکلم (50) اور کین ولیمسن (ناٹ آؤٹ 45) کی کارآمد اننگز اور اس سے قبل ٹرینٹ بولٹ (27رن پر 5 وکٹ) کی کریئر کی بہترین گیندبازی کی بدولت شریک میزبان نیوزی لینڈ نے آج یہاں آسٹریلیا کو عالمی کپ کے پول اے مقابلے میں 161 گیندیں باقی رہتے صرف ایک وکٹ سے شکست دے دی۔ میچ میں آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ جیسی بڑی ٹیموں کے مابین مقابلہ کانٹے کا رہا۔ طویل عرصے بعد ہونے والی چیپل ہیڈلی ٹرافی میں نیوزی لینڈ کو جیت کیلئے دو پوائنٹ ملے ۔ اس جیت کے بعد نیوزی لینڈ چار میچوں میں چار جیت کے ساتھ پوائنٹ ٹیبل میں سب سے زیادہ آٹھ پوائنٹوں کے ساتھ اپنے پول میں چوٹی پر پہنچ گئی ہے جبکہ آسٹریلیا تین میچوں میں جیت ایک ہار اور ایک ڈرا کے ساتھ تین پوائنٹ لے کر چوتھے نمبر پر پہنچ گئی ہے ۔آسٹریلیا کے کپتان مائیکل کلارک نے ٹاس جیت کر پہلے بلے بازی کرنے کا فیصلہ کیا لیکن ٹرینٹ بولٹ کی جارحانہ گیندبازی کے سبب ٹیم 32.2 اوور میں 151 رن بنا کر ڈھیر ہوگئی۔ اس معمولی ہدف کو حاصل کرنے کیلئے نیوزی لینڈ کو بھی کافی جدوجہد کرنا پڑا لیکن 23.1 اوور میں نو وکٹ کے نقصان پر 152 رن بنا کر آخرکار وہ جیت حاصل کرنے میں کامیاب رہی۔ٹورنامنٹ میں افغانستان کے بعد یہ دوسرا مقابلہ ہے جس میں کسی ٹیم نے ایک وکٹ سے جیت حاصل کی ہے حالانکہ آسٹریلیا کے تیز گیندباز مشیل اسٹارک بھی میچ میں کریئر کی بہترین کارکردگی پیش کی اور نو اووروں میں 28 رن پر نیوزی لینڈ کے چھ وکٹ حاصل کرکے معمولی ہدف کو بھی مشکل بنا دیا۔ تاہم وہ اس کارکردگی سے ٹیم کو جیت نہیں دلا سکے ۔نیوزی لینڈ کے لئے ایک وقت مشکل بن چکے ہدف کو حاصل کرنے میں بلے باز اور کپتان میکلم اور ولیمسن نے اہم کردار ادا کیا۔ میکلم نے ٹیم کو بہتر آغاز دلاتے ہوئے سب سے زیادہ 50 رن بنائے ۔ انہوں نے 24 گیندوں کی اننگز میں سات چوکے اور تین چھکے لگائے جبکہ تیسرے نمبر کے بلے باز کین نے 42 گیندوں میں پانچ چوکے اور ایک چھکا لگا کر ناٹ آؤٹ 45 رنوں کی میچ وننگ اننگز کھیلی۔افتتاحی بلے باز مارٹن گپٹل نے 11 رن جوڑے اور میکلم کے ساتھ پہلے وکٹ کیلئے 40 رن کی دوسری بڑی ساجھے داری کی۔چھوٹے ہدف کے سامنے بھی نیوزی لینڈ کے پسینے چھڑانے کا کام آسٹریلیائی تیز گیندباز اسٹارک نے کیا جنہوں نے کریئر کا بہترین مظاہرہ کرتے ہوئے سب سے زیادہ چھ وکٹ لئے ۔ٹیم کی جیت میں اہم کردار ادا کرنے والے بلے باز بولٹ کو مین آف دی میچ قرار دیا گیا۔ انہوں نے میچ میں 10 اووروں میں 27 رن پر سب سے زیادہ پانچ وکٹ لئے ۔ قبل ازیں چار بار عالمی خطاب جیتنے والی آسٹریلیائی ٹیم آج یہاں میزبان نیوزی لینڈ کے خلاف کھیلے گئے پول۔اے مقابلے میں صرف 151 رنوں پر سمٹ گئی۔ٹاس جیت کر پہلے بلے بازی کرنے اتری آسٹریلیائی ٹیم کی شروعات اچھی نہیں رہی اور ان کا پہلا وکٹ 30 رن پر گر گیا اور ٹیم کے جارح افتتاحی بلے باز آرون فنچ صرف 14 رن بنا کر آؤٹ ہوگئے ۔ اس کے بعد میدان پر اترے شین واٹسن نے ڈیوڈ وارنر کے ساتھ اننگز کو سنبھالا لیکن وہ کچھ دیر تک ہی اپنی مہم میں کامیاب ہوسکے اور 23 رن کے نجی اسکور پر ڈینئل ویٹوری کا شکار بنے ۔واٹسن کے آؤٹ ہونے کے بعد آسٹریلیائی بلے باز ایک کے بعد ایک کرکے پویلین لوٹتے چلے گئے اور 104 رنوں تک پہنچتے پہنچتے ٹیم کے سات وکٹ گر گئے ۔ روبہ صحت ہونے کے بعد واپسی کرنے والے ٹیم کے کپتان مائیکل کلارک بھی اپنی ٹیم کی ڈوبتی کشتی کو پار نہیں لگا سکے اور صرف 12 رنوں کے نجی اسکور پر ٹرینٹ بولٹ کا شکار بنے ۔اسٹون اسمتھ نے صرف چار رن بنائے اور ویٹوری کا دوسرا شکار بنے ۔ وارنر نے 34 اور واٹسن نے 23 رنوں کا تعاون دیا۔ مشیل مارش اور مشیل اسٹارک صفر پر جبکہ گلین میکس ویل اور مشیل جانسن ایک رن پرآؤٹ ہوکر پویلین لوٹے ۔ٹیم کی جانب سے سب سے زیادہ 43 رن بریڈ ہیڈن نے بنائے اور وہ آخر تک ٹیم کو باعزت اسکور تک پہنچانے میں کوشاں رہے لیکن ان کا ساتھ دینے کیلئے کوئی بھی کھلاڑی دوسری جانب ٹک نہیں سکا۔ انہوں نے 41 گیندوں کا سامنا کیا اور چار چوکوں اور دو چھکوں کی مدد سے 43 رن جوڑے ۔نیوزی لینڈ کے تیز گیندباز ٹرینٹ بولٹ نے شاندار گیندبازی کرتے ہوئے اپنے 10 اووروں میں صرف 27 رن دے کر حریف ٹیم کے پانچ وکٹ لے لئے ۔ویٹوری اور ٹم ساؤدی کو دو۔دو وکٹ ملے ۔
 

 

...


Advertisment

Advertisment