Today: Wednesday, November, 14, 2018 Last Update: 10:59 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

ہند وستان کے خلاف شرمناک شکست سے ٹیم کا اعتماد ڈگمگایا:ڈیولیرس


میلبورن،23 فروری (یو این آئی) عالمی کپ میں ہندستان کے ہاتھوں ملی 130 رنزکی شرمناک ہار کو جنوبی افریقہ کے کپتان اے بی ڈی ویلیئرس نے شرمناک بتاتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے ٹیم کا اعتماد ڈگمگاگیا ہے ۔ ڈی ویلیئرس نے کہا کہ آپ ہمیشہ مدمقابل ہونا چاہتے ہیں۔اس پر ہمیں فخر ہے ،ہم کچھ وقت کے لئے اپنا غم بھلانے کی کوشش کرنے جا رہے ہیں ۔ اتنے زیادہ رنز کے فرق سے آپ کو نہیں ہارنا چاہئے ۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح کی شکست سے آپ کا اعتماد تھوڑا متزلزل ہو جاتا ہے اور اب یہ سینئر کھلاڑیوں پر انحصار کرتا ہے کہ وہ ویسٹ انڈیز کے خلاف میچ کے لئے ٹیم کا اعتماد برقراررکھیں۔اتوار کے میچ کی طرح تھوڑی سی چیزیں آپ کے کھیل کوبگاڑ سکتی ہیں اگر آپ زیادہ سوچوگے لیکن ہمیں پھر بھی اس ہارکے بارے میں مقدار غالب اور ایماندارانہ بحث کرنی ہوگی۔عالمی کپ میں ہندستان کے خلاف جنوبی افریقہ کی یہ پہلی شکست ہے اور ہار کا فرق جتنا بڑا ہے اسے دیکھتے ہوئے جنوبی افریقی کھلاڑیوں کا حوصلہ گرا ہے ۔ہندوستان نے گیند،بلے بازی اورفیلڈنگ سمیت ہر شعبے میں اپنا دبدبہ بنائے رکھا۔گزشتہ 37 میچوں میں جنوبی افریقہ کی 100 سے زیادہ رنز سے یہ پہلی اور ورلڈ کپ میں اب تک کی سب سے شرمناک شکست ہے ۔جنوبی افریقی کپتان نے اس ہار کو ایک کالي رات قراردیا ہے اور انہیں امید ہے کہ ٹیم اس سے باہر نکل جائے گی۔مایوس کپتان نے کہا کہ میں ابھی اس کے بارے میں بات نہیں کرنا چاہتا۔ میں اس دکھ کو سہنے کے لئے کچھ وقت اپنے کمرے میں رہنا چاہتا ہوں اورکل پھر دیکھیں گے کہ میں کس طرح تجربہ کرتا ہوں۔ ڈی ویلیئرس میچ میں ہوئے دو رن آؤٹ کو لے کر بھی کافی ناخوش ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ ٹاپ چھ بلے بازوں سے ایسے دو رن آؤٹ قطعی قابل قبول نہیں ہیں۔ میں اور ڈیوڈ ملر بغیر کسی بولرکے آؤٹ کئے بغیر میدان سے چلے گئے جو کہ مایوس کن رہا۔ڈی ویلیئرس نے ٹیم کے خراب کارکردگی پر شدید حملہ کرتے ہوئے کہا کہ وائن ڈسپلن نہیں تھے اور ان کی نو بال کو قبول نہیں کیا جا سکتا لیکن مجموعی طور گیند بازی اوسط تھی۔اگرچہ میں خوش ہوں جس طریقے سے ہم نے ہدف کا تعاقب کیا۔ ہندستانی شائقین سے کھچا کھچ بھرے اسٹیڈیم کے بارے میں ڈی ویلیئرس نے واضح الفاظ میں کچھ نہیں کہا لیکن ان کی باتوں سے لگا کہ وہ اس سے تھوڑا دلبرداشتہ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگر آپ دنیا کی بہترین ٹیم بننا چاہتے ہیں تو آپ دنیا میں کہیں بھی کھیلیں آپ کو میچ جیتنے پڑتے ہی ہیں۔ مجھے لگتا ہے کہ ہمیں بھی کافی حمایت ملی۔یقینی طور پر یہ کوئی بہانہ نہیں ہے ۔
 

 

...


Advertisment

Advertisment