Today: Thursday, November, 15, 2018 Last Update: 03:02 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

خواتین کھلاڑیوں کے تئیں نظریہ تبدیل کرنا بہت ضروری :میر ی کوم

 

نئی دہلی13اکتوبر(آئی این ایس انڈیا)اسٹار مکہ باز ایم سی میر ی کوم نے انچیون ایشیائی کھیلوں کے گولڈ میڈل کو بڑی کامیابی قرار دیتے ہوئے آج یہاں ہم وطنوں سے خواتین کھلاڑیوں کے تئیں نظریہ تبدیل کرنے کی اپیل کی کیونکہ موقع ملنے پر وہ بھی ملک کے لیے تمغہ جیت سکتی ہیں ۔میر ی کوم کو یہاں ایک تقریب میں سیمسنگ کی انتہائی ویلیوڈ پلیئر منتخب کیا گیا۔انہوں نے اس کے بعد نامہ نگاروں سے کہا کہ گوانگژو میں پہلی بار ایشیائی کھیلوں میں خواتین باکسنگ کو شامل کیا گیا تھا۔وہاں میں کانسہ کا تمغہ ہی جیت پائی تھی لیکن انچیون میں میں صرف طلائی تمغہ جیتنے کے مقصد کو لے کر گئی تھی۔میں واقعی بہت خوش ہوں کیوں کہ یہ میرے لیے بڑی کامیابی ہے۔انہوں نے کہا کہ میرا چھوٹا بچہ تھا لیکن میں نے سخت محنت کی تھی۔کئی لوگ میری صلاحیت پر سوال اٹھا رہے تھے لیکن میں اپنے کام کے تئیں پر عزم تھی۔میرا مقصد میرے سامنے تھا اور مجھے اسے حاصل کرنا تھا اور اس میں میں نے کامیاب رہی۔میری کوم نے کہا کہ ہندوستان میں خواتین کھلاڑیوں کے تئیں اب بھی منفی نظریہ ہے اور اگر ملک کو بڑے مقابلوں میں زیادہ سے زیادہ تمغے جیتنے ہیں تو انہیں اسے تبدیل کرنا ہوگا۔انہوں نے کہا کہ ہندوستان میں خواتین کو کھیلوں کے میدان میں آگے بڑھنے کے بہت کم مواقع دئے جاتے ہیں۔انہیں خاندان کے لوگ بھی اتنی سہولیات نہیں دیتے جتنی کی انہیں ملنی چاہئے۔ پانچ بار کی عالمی چمپئن اور لندن اولمپکس کی کانسہ تمغہ فاتح میر ی کوم کا خیال ہے کہ انچیون کی کارکردگی سے انہیں آگے بھی بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرنے کی ترغیب ملے گی۔انہوں نے کہا کہ اس کارکردگی سے میرا اعتماد بڑھا ہے۔خواتین کے 51کلوگرام کی طلائی تمغہ فاتح مکہ باز نے کہا کہ جب میں رنگ میں اتری تو میں ہار یا جیت کو لے کر کسی طرح سے کشیدگی میں نہیں تھی۔میں اپنی بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرنے کے مقصد سے اتری تھی۔میں نے ملک کے لیے تمغہ جیتنا چاہتی تھی اور میں نے خود پر دباؤ نہیں بننے دیا۔انہوں نے سیمسنگ کا خصوصی شکریہ ادا کیا جس نے انہیں تمغہ کے ممکنہ دعویداروں میں شامل کیا۔

 

...


Advertisment

Advertisment