Today: Thursday, November, 15, 2018 Last Update: 03:31 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

عالمی کپ میں بنگلہ دیش اور افغانستان کی ٹیمیں ہوں گی آمنے سامنے

 

ا یڈنبرا،17 فروری (یو این آئی) بنگلہ دیش اور افغانستان ورلڈ کپ میں اپنی مہم کا آغاز کرنے کے لیے پوری طرح تیار ہیں اور بدھ کو ا یڈنبرا میدان پر دونوں ٹیمیں جیت کے ساتھآغاز کرنا چاھیں گی۔آئرلینڈ کی ویسٹ انڈیز کے خلاف زبردست جیت سے حوصلہ افزا افغانستان کی ٹیم ٹورنامنٹ میں ایک اور اپ سیٹ کرناچاہے گی۔اگرچہ بنگلہ دیش کو عالمی کپ سے پہلے اپنے دونوں پریکٹس میچوں میں شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا جن میں سے ایک میچ آئرلینڈ کے خلاف تھا۔ دوسری طرف افغانستان نے گزشتہ سال مارچ میں ایشیا کپ میں بنگلہ دیش کو پٹخنی دی تھی۔ بنگلہ دیش نے گزشتہ ڈھائی ماہ سے ایک بھی بین الاقوامی ون ڈے میچ نہیں کھیلا ہے اور اسکی تلافی کرنے کے لیے ٹیم کے کھلاڑی عالمی کپ مقابلے سے ایک دن پہلے تک پریکٹس کرتے نظر آئے ۔اگرچہ ٹیم اپنے کچھ کھلاڑیوں کے فٹ نہ ہو پانے سے تھوڑی پریشانی میں بھی نظر آ رہی ہے ۔ بنگلہ دیش اور افغانستان کے درمیان ہونے والا پول اے میچ اس معنی میں بھی اہم رہے گا کیونکہ دونوں ہی ٹیمیں عالمی درجہ بندی میں ایک دوسرے کے بہت قریب ہیں۔سال 2000 میں بنگلہ دیش نے بین الاقوامی سطح پرٹیسٹ میچوں میں بھی کھیلنا شروع کر دیا۔اگرچہ ٹیم کی کارکردگی خاصااچھی نہیں رہی ہے لیکن افغانستان سے جیت کر وہ اپنی ساکھ کو بحال کرنے کی کوشش کرے گی۔افغانستان بنگلہ دیش کے مقابلے کمزور ٹیم ہے لیکن اس کے کھلاڑیوں نے وقت وقت پر اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوایا ہے ۔آئی سی سی ورلڈ کپ ٹوئنٹی 20 درجہ بندی میں 12 واں مقام رکھنے والی ٹیم پہلی بار عالمی کپ میں کھیل رہی ہے ۔دونوں ہی ٹیمیں خود کو بہتر ثابت کرنے کے لیے شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کرنے کے لیے اتریں گی اور یہ مقابلہ ظاہری طور پر بہت سخت ہو سکتا ہے ۔مشرف مرتضی عالمی کپ کے لیے بنگلہ دیش کے کپتان بنائے گئے ہیں لیکن وہ خود عالمی کپ سے پہلے انجری سے دو چار تھے ۔اگرچہ وہ اپنے ساتھی کرکٹر شکیب الحسن اور مومن الحق پر منحصر رہیں گے لیکن آسٹریلیا کی پچوں پر بہتر کارکردگی کرنا پوری ٹیم کے لیے چیلنج ضرور ہوگا۔دوسری طرف افغانستان حریف ٹیم کے مومن الحق اور انعام الحق جیسے کم تجربہ کار بلے بازوں کو جلدی آؤٹ کرنے کے بارے میں سوچے گي اور میچ کو اپنے حق میں کرنے کی پوری کوشش کرے گی۔اگر نوجوان تیز گیند باز تسکین احمد کو اس مقابلے کیلئے ٹیم میں شامل کیا جاتا ہے تو وہ بہتر ثابت ہو سکتے ہیں۔محمد نبی کي کپتانی میں افغانستان نے خود کو تیارکیا ہے اور وقت وقت پر لوگوں کو حیرت زدہ کیا ہے ۔سابق کپتان نوروز منگل ، نبی اور سمیع اللہ شینواري کچھ ایسے کھلاڑی ہیں جن کی بلے بازی پر پوری ٹیم منحصر رہے گی لیکن ٹیم کے گیندبازوں کو خاصی محنت کرنی ہوگی۔شاہ پور زدران،دولت زدران اورحامد حسن کی گیند بازی پر سب کی نظریں رہیں گی۔آسٹریلیا کے دوسرے میدانوں کے مقابلے کینبرا کا اوول میدان چھوٹا ہے اور اس کی محض 12 ہزار ناظرین صلاحیت ہے ۔یہاں ابتک عالمی کپ کے چار مقابلے ہوئے ہیں۔سب سے پہلے 1992 کے ورلڈ کپ کے دوران جنوبی افریقہ اور زمبابوے کے درمیان اس میدان پر منعقدہ مقابلے میں زمبابوے سات وکٹ سے میچ ہارا تھا۔اس کے بعد سال2008 میں سری لنکا نے ہندستان کو آٹھ وکٹ سے شکست دی تھی۔اس کے علاوہ آسٹریلیا نے اپنے اس گھریلو میدان پر دونوں مقابلے جیتے ہیں جس میں دونوں بار پہلے بلے بازی کرتے ہوئے 329 کا بڑا اسکوربنایا ہے ۔دونوں ٹیمیں اس سے پہلے صرف ایک بار آمنے سامنے آئی ہیں جس میں افغانستان نے مقررہ 50 اوورز میں 254 کا اسکور کھڑا کر دیاتھا اور بنگلہ دیش کو 222 پر آل آؤٹ کرکے میچ جیت لیا تھا۔دونوں کے لئے یہ مقابلہ بہت اہم ہے اور دونوں ہی ٹیمیں خود کو بہترثابت کرنے کے لیے پورا زور لگائیں گي اور عالمی کپ میں اپنے مہم کا آغاز فتح کے ساتھ کرنا چاہیں گی۔
 

 

...


Advertisment

Advertisment