Today: Thursday, November, 15, 2018 Last Update: 02:51 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

موسیقی اور رنگارنگ تقریب کے ساتھ عالمی کپ 2015کا شاندارآغاز


دھتنگ ناچ‘گانے پر ہندوستانی کپتان نے بجائی تالی، انگلش پری بھی چھائی،ہندوستانی آرٹسٹ نے بھی دکھائے کمال
کرائسٹ چرچ،ملبورن،12 فروری(یو این آئی)موسیقی اورقوس وقزح جیسا سما پیش کرتی روشنی لوک رقص اورآسمان پرچکاچوند کرنے والی آتش بازی کے ساتھ نیوزی لینڈ اورآسٹریلیاکی مشترکہ میزبانی میں روری سے شروع ہونے والے عالمی کپ کرکٹ ٹورنامنٹ کا جمعرات کوشاندار آغاز ہوگیا۔چودہ ٹیموں کے درمیان ڈیڑھ مہینے تک چلنے والے عالمی کپ کی افتتاحی تقریب نیوزی لینڈ کے کرائسٹ چرچ کے ہیگلے پارک اور ملبورن کے مائر میوزک بال میں تقریب تین گھنٹے تک چلی۔ نیوزی لینڈکے وزیر اعظم جان کی نے عالمی کپ کی افتتاحی تقریب کا باقاعدہ آغاز کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم ایک بہترین میزبان ثابت ہوں گے ۔انہوں نے تمام شریک ٹیموں کے ساتھ نیک خواہشات کا اظہار کیا، عالمی کپ کا افتتاحی میچ سنیچر کو کرائسٹ چرچ میں نیوزی لینڈاور سری لنکاکے درمیان کھیلا جائے گا۔اسی دن دوسرا میچ ملبورن میں روایتی حریف آسٹریلیا اور انگلینڈ کے درمیان ہوگا۔افتتاحی تقریب میں عالمی کپ میں شریک تمام چودہ ممالک کے فنکاروں نے اپنے فن کا مظاہرہ کیا۔جب کہ ملبورن میں زیادہ تر ٹیموں کے کپتان اپنے قومی پرچم کے ساتھ ڈائس پر پہنچے ۔ فنکار افتتاحی تقریب میں جب اپنے فن کا مظاہرہ کررہے تھے تب بڑی اسکرین پر ان کے ملک کا پرچم لہرارہا تھا، اس موقع پر شریک ٹیموں کے کپتانوں نے پریڈ کی۔ تاہم نیوزی لینڈاور جنوبی افریقہ کے کپتان نیوز ی لینڈ میں ہونے کے سبب شرکت نہیں کرپائے ۔ڈائس پر عالمی کپ ٹرافی بھی موجود تھی۔افغانستان کے کپتان محمد نبی سب سے پہلے ڈائس پرپہنچے ۔ اس کے بعد بنگلہ دیش کے کپتان مشرف مرتضی ، انگلینڈ کے یوان مورگن ، دفاعی چمپئن مہندر سنگھ دھونی، آئرلینڈ کے ولیمس پیٹر فیلڈ ، پاکستان کے مصباح الحق ، اسکاٹ لینڈ کے پریسٹن ممسن ، متحدہ عرب امارات کے محمد توقیر، ویسٹ انڈیزکے جیسن ہولڈر اور آسٹریلیا کے مائکل کلارک نے ڈائس پرقدم رکھا۔وکٹوریا کے پریمیر ڈینیل انڈریو نے اپنے خطاب میں تمام شریک ٹیموں کے ساتھ نیک خواہشات کا اظہار کہا ۔ اس موقع پر انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی)کے بورڈ ارکان بھی موجود تھے ۔کپتانوں کی پریڈ کے بعد ڈائس پر بلے باز کا ایک بڑا پتلا ڈاس پر لایا گیا جسے رسیوں کی مدد سے حرکت دی جارہی تھی۔اس پتلے میں جیسے ہی چھکے کے لئے شاٹ لگایا تو آسمان آتش بازی سے جگمگا اٹھا۔عظیم کرکٹرز کے ساتھ بچوں کی موجودگی اورڈائس پر ماوري واریرزاور مورس ڈانسرس کی پریزنٹیشن کے درمیان آج یہاں رنگارنگ پروگرام میں کرکٹ ورلڈ کپ کا افتتاح ہوا۔ ھیگلے پارک میں ہزاروں شائقین کی موجودگی میں آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ میں 23 سال میں پہلے ورلڈ کپ کے افتتاح کی تقریب کا انعقاد کیا گیا، جس کے رسمی حصے کے آغاز واحد بیگپائپر کے ساتھ ہوا، جبکہ اس کا اختتام آتشبازی کے ساتھ ہوا۔فروری 2011 میں زلزلے میں شہر کو پہنچے نقصان کے بعد یہاں یہ سب سے بڑا مقابلہ ہے ۔ اس وقت آئے زلزلے میں 185 افراد کی جان چلی گئی تھی۔اس سانحہ کے چند نشان اب بھی موجود ہیں جو ان خالی جگہوں پر نظر آتے ہیں جہاں کبھی عمارتیں ہوا کرتی تھیں، لیکن اس کے باوجود آج منعقدہ تقریب میں کرائسٹ چرچ کے لوگوں نے زبردست جذبہ دکھایا۔میئر لینے ڈیلجئل نے کہا کہ جب زلزلہ آیا تو کرائسٹ چرچ 2011 رگبی ورلڈ کپ کی میزبانی کی تیاری کر رہا تھا اور اس سے ہوٹلوں اور مقامات کو نقصان پہنچا جس کے بعد میچ کو دیگر مراکز پر منتقل کرنے کے لئے مجبور ہونا پڑا۔میئر لینے نے لوگوں سے کہا کہ ہم واپس آ گئے ہیں۔نیوزی لینڈ کے وزیر اعظم جان کی نے کہا کہ زلزلے نے کرائسٹ چرچ سے رگبی ورلڈ کپ کی میزبانی کا موقع چھین لیا تھا اور کرکٹ ورلڈ کپ کے افتتاح کی تقریب کی میزبانی کے لئے اس کا کیا جانا صحیح ہے ۔انہوں نے کہا کہ افتتاحی تقریب دنیا کو یہ کہنے کا طریقہ ہے کہ کرائسٹ چرچ واپس آ گیا ہے ۔

 

...


Advertisment

Advertisment