Today: Monday, September, 24, 2018 Last Update: 12:37 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

عالمی کپ میں سٹے بازی کو روکنے کے سخت انتظامات :رچرڈسن

 

ویلنگٹن، 11 فروری (یو این آئی) انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) نے کہا ہے کہ آئندہ ورلڈ کپ کو سٹے بازی سے بچانے کیلئے اس نے سخت انتظام کئے گئے ہیں اور وہ پوری طاقت لگا دے گی تا کہ اس کھیل کو سٹے بازی سے بچایا جائے ۔آئی سی سی کے چیف ایگزیکٹو ڈیو رچرڈسن نے بدھ کو کہا کہ کونسل اس بار عالمی کپ کو بیٹنگ سے بچانے کے لیے پوری طرح مستعد ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ورلڈ کپ کو کسی بھی طرح کی بدعنوانی سے بچانے کے لیے پوری قوت لگائی جائے گی۔رچرڈسن نے کرائسٹ چرچ میں میڈیا کانفرنس میں صحافیوں سے کہا ‘‘مجھے لگتا ہے کہ بدعنوانی مخالف یونٹ نے اس بار بیٹنگ سے لڑنے کے لیے پوری تیاری کر لی ہے اور وہ گزشتہ ٹورنامنٹ کے مقابلے اس بار پوری تیاری اورمستعدی کے ساتھ تیار ہے ۔ہمیں اندازہ ہے کہ دنیا بھر سے کچھ لوگ اس کھیل کو خراب کرنے کے لئے کھلاڑیوں، امپائروں یا کیوریٹروں کو متاثر کرنے کی ایک کوشش کرتے ہیں تاکہ میچ ان کے طرئقے سے کھیلا جا سکے ’’۔گزشتہ چند سالوں کے دوران کرکٹ میں میچ فکسنگ اور سٹے بازی جیسی شکایتیں سامنے آئی ہیں۔ رچرڈسن نے کہا کہ کچھ لوگوں نے اس کھیل کو اپنے حرکتوں سے بدنام کرنے کی ایک کوشش کی ہے جس کے پیش نظراینٹی کرپشن اینڈ سیکورٹی یونٹ (اے سی ایس یو) بنائی گئی جو مقامی حکام کے ساتھ مل کر کرکٹ کو بدعنوانی سے آزادبنانے کی سمت میں کام کر رہی ہے ۔کرائسٹ چرچ میں منعقد میڈیا کانفرنس میں مقامی آرگنائزنگ کمیٹی کے صدر تھیریسے والش اور نیوزی لینڈ کرکٹ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر ڈیوڈ وائٹ نے بھی شرکت کی۔ اے سی ایس یو کے صدر رونی فلے ناگن نے گزشتہ ہفتے یقین دلایا تھا کہ اس سال کرکٹ کے شائقین اپنے پسندیدہ کھیل کو اس بھروسے کے ساتھ دیکھ سکیں گے کہ یہ مکمل طور پر بدعوانی سے آزادہے ۔رچرڈسن نے کہا کہ کرکٹ میں کرپشن پر نظر رکھنے والی یونٹ اے سی ایس یو نیوزی لینڈ اور آسٹریلیا میں طریقہ نافذ کرنے والے کے ساتھ گزشتہ تین سالوں سے مسلسل کام کر رہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ٹیم اور حکام کو دی جانے والی سیکورٹی کے بعد یہ یقینی بنایا گیا ہے کہ میچ فکسنگ کو کھلاڑیوں یا حکام تک پہنچنا بھی ممکن نہیں ہو گا۔جنوبی افریقی ٹیم کے سابق وکٹ کیپر رہے رچرڈسن نے کہا‘‘ ہم نے سیکورٹی انتظامات پر توجہ دی ہے اور اسے اتنا سخت کیا گیا ہے کہ کسی بھی میچ فکسر کیلئے ٹیم کے کھلاڑیوں یا حکام تک پہنچنا بہت مشکل ھوگا۔ گزشتہ تقریبا ایک سال سے کھلاڑیوں کے رویہ یا برتاؤ پر بھی اینٹی کرپشن یونٹ نظر رکھ رہی ہے تاکہ ان کے رویے میں مشتبہ تبدیلی نظر نے پر فوری طور توجہ دی جا سکے ’’۔ انہوں نے کہا‘‘کھلاڑیوں نے بھی کرکٹ سے اس بیماري کو اکھاڑ پھیکنے کیلئے کرپشن یونٹ کے افسران کو مکمل تعاون دیا ہے ۔ اگرچہ ہماری لڑائی سٹے بازوں کے خلاف ہے نہ کہ کھلاڑیوں کے خلاف’’ آئندہ 14 فروری سے شروع ہو رہے عالمی کپ کو اس سال آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کی مشترکہ میزبانی میں کھیلا جائے گا۔
 

 

...


Advertisment

Advertisment