Today: Saturday, September, 22, 2018 Last Update: 11:53 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

سہیل خان کی پنڈلی کی تکلیف ٹیم انتظامیہ کیلئے بنی درد سر

 

کراچی10فروری(آئی این ایس ا نڈیا)ورلڈ کپ کرکٹ ٹورنامنٹ میں انجریز نے پاکستانی کرکٹ ٹیم کا پیچھا نہیں چھوڑا ہے۔ جنید خان اور محمد حفیظ کے بعد فاسٹ بالر سہیل خان بھی زخمی کھلاڑیوں کی فہرست میں شامل ہوگئے ہیں۔ ان کی پنڈلی کی تکلیف قومی ٹیم انتظامیہ کیلیے سردرد بن گئی۔ پیر کو بنگلہ دیش کے خلاف میچ کے دوران6 اوورز کرانے کے بعد سہیل خان پنڈلی کی تکلیف میں مبتلا ہوکر باہر چلے گئے۔ انہوں نے18رنز دے کر ایک کھلاڑی کو آوٹ کیا۔ ٹیم انتظامیہ کے مطابق سہیل خان کو دو دن مکمل آرام کا مشورہ دیا گیا ہے جبکہ ٹیم میں متبادل کھلاڑی راحت علی اور ناصر جمشید پیر کی شب براستہ دبئی ،سڈنی روانہ ہوگئے۔ باخبر ذرائع کیمطابق سہیل خان کی انجری بھی حفیظ کی طرح کی ہے اور ان کی ورلڈ کپ میں شرکت مشکوک ہو گئی ہے تاہم ٹیم انتظامیہ کا کہنا ہے کہ انجری سنجیدہ نوعیت کی نہیں ہے۔ وہ جلد فٹ ہوجائیں گے۔ ڈاکٹر ان کی انجری کو مانیٹر کررہے ہیں۔ واضح رہے کہ زخموں سے چور پاکستانی ٹیم اس سے پہلے محمد حفیظ اور جنید خان کی خدمات سے بھی محروم ہو چکی ہے۔ حفیظ کے متبادل کے طور پر ناصر جمشید کو اسکواڈ میں شامل کیا گیا ہے۔ حفیظ سے پہلے فاسٹ بولر جنید خان بھی ان فٹ ہو کر ورلڈ کپ اسکواڈ سے باہر ہو چکے ہیں جبکہ سہیل تنویر اور عمر گل بھی اپنی فٹنس سے چیئرمین پی سی بی کو متاثرکرنیمیں ناکام رہیہیں۔ سہیل خان کے مکمل فٹ نہ ہونے کی صورت میں قرعہ سہیل تنویر کے نام نکل سکتا ہے۔ دریں اثنا ٹورنامنٹ میں حیران کن طور پر جگہ بنانے والے راحت علی اور ناصر جمشید نے کہا ہے کہ وہ میگا ایونٹ کے لئے مکمل طور پر تیار ہیں اور ورلڈ کپ میں اپنی عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کریں گے ۔ اگر انہیں چانس ملا تو وہ اپنی سلیکشن کو درست ثابت کرنے کی کوشش کریں گے۔ قذافی اسٹیڈ یم لاہور میں میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے راحت علی نے کہا کہ میری پہلی کوشش ہوگی کہ میں ٹاپ لیول کے بیٹسمینوں کو کم از کم رنز پر آؤٹ کروں۔ کوشش کروں گا کہ سو فیصد رزلٹ دے سکوں ۔ مجھ پر کوئی پریشر نہیں ہے کیونکہ میں اس سے پہلے انٹرنیشنل ون ڈے کھیل چکا ہوں۔ ٓآسٹریلیا اور نیوزی لینڈ میں کھیلنے کیلئے پراعتماد ہوں ۔ انہوں نے کہا کہ بہت سادہ منصوبہ بندی کی ہے اور امید ہے کہ ورلڈ کپ میں پاکستان کیلئے اچھے کھیل کا مظاہرہ کرسکوں۔ ناصر جمشید نے کہا کہ جس طرح میں ماضی میں ہندوستان کے خلاف پرفارمنس دی تھی اسی طرح ورلڈ کپ میں بھی پرفارمنس دوں جس میچ میں موقع ملے گا اس کو آخری میچ سمجھ کر کھیلوں گا۔ میرا پلان ہے کہ احمد شہزاد کے ساتھ مل کر اچھی پارٹنر شپ دے سکوں، آسٹریلیا کو ہوم گراؤنڈ سمجھ کر کھیلوں گا، وہاں بیٹنگ کیلئے حالات سازگار ہیں ۔ہندوستان کے خلاف میچ میں ماضی کی پرفارمنس دے کر قومی ٹیم کی جیت میں اہم کردار ادا کرنے کی خواہش ہے۔ انہوں نے کہاکہ میچ چا ہے ہندوستان کے خلاف ہو یا آسٹریلیا کے خلاف بطور پروفیشنل کرکٹر ہر ٹیم کے خلاف بہترین کارکردگی دکھانے کی بھرپور کوشش کروں گا۔ ڈومیسٹک کرکٹ میں بہترین پرفارمنس کے بعد مجھے قومی ٹیم میں منتخب کیا گیا ہے۔ فیلڈنگ میں بھی کافی محنت کی ہے ،ماضی میں فٹنس کی وجہ سے ٹیم سے باہر نہیں ہوا بلکہ ہر کرکٹر کی طرح میں خراب فارم کا شکار رہا۔ اب میری پرفارمنس بہتر ہے۔ انہوں نے کہاکہ آسٹریلیا کی وکٹیں بیٹنگ کے لئے موزوں ہیں ۔ میچ میں 300سے زیادہ رنز بن رہے ہیں اور میر ی کوشش ہوگی کہ آسٹریلیا میں میچ کھیلتے ہوئے یہ ہی سمجھوں کہ پاکستان میں میچ کھیل رہا ہوں ۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے بتایا کہ دنیا کا کوئی بولر مشکل نہیں ہوتا بلکہ گراؤنڈ کی کنڈیشنز ہوتی ہیں جو کہ بولر کومشکل بناتی ہیں ۔ ہر کرکٹر کی طرح ورلڈ کپ کھیلنا اور اچھا پرفارم کرنا میرا بھی خواب ہے اور میرے لئے موقع ہے کہ اچھی پرفارمنس دے کر اپنے مستقبل کو بہتر بناؤں اور ملک کے لئے جیت کا باعث بنوں ۔

 

...


Advertisment

Advertisment