Today: Saturday, September, 22, 2018 Last Update: 11:56 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

اس بار عالمی کپ میں ہندوستان کوشکست دے سکتا ہے پاکستان :ظہیر عباس


نئی دہلی،9 ؍فروری(آئی این ایس انڈیا )پاکستان کے عظیم بلے باز ظہیر عباس کا ماننا ہے کہ آسٹریلیا میں ہندوستانی ٹیم کی حالیہ کارکردگی کو دیکھتے ہوئے پاکستان 15 ؍فروری کو ہونے والے عالمی کپ کے میچ میں ہندوستان کو شکست د ے سکتا ہے۔پاکستانی ٹیم عالمی کپ میں آج تک ہندوستان کو شکست نہیں دے سکی ہے۔آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ میں ہونے والے عالمی کپ میں دونوں ٹیمیں 15؍فروری کو ایک دوسرے کے خلاف اپنی مہم کا آغاز کریں گی۔عباس نے ملتان میں میڈیا کو دئے انٹرویو میں کہا کہ مجھے لگتا ہے کہ آسٹریلیا، نیوزی لینڈ اور جنوبی افریقہ کے علاوہ ہندوستان اور پاکستان میں سے ایک ٹیم عالمی کپ کے سیمی فائنل میں پہنچے گی۔ہندوستان اور پاکستان کے درمیان 15؍فروری کو ہونے والا میچ کافی اہم ہوگا اور مجھے لگتا ہے کہ اس بار پاکستانی ٹیم کے پاس جیتنے کا سنہری موقع ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس کے علاوہ ہندوستان پر دفاعی چمپئن ہونے کی وجہ سے توقعات کا دباؤ بھی زیادہ ہوگا جس کا اثر کارکردگی پر پڑ سکتا ہے۔ پاکستان کے لیے 78 ٹیسٹ میں 5062 اور 62ون ڈے میچوں میں 2572 رن بنا چکے اس تجربہ کار بلے باز نے کہا کہ آسٹریلیا میں ہندوستان کی خراب کارکردگی کا پاکستان فائدہ اٹھا سکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستانی ٹیم عالمی کپ میں ہندوستان سے کبھی نہیں جیت سکی ہے لیکن آسٹریلیائی پچوں پر ہندوستان کی حالیہ کا رکر دگی کو دیکھتے ہوئے مجھے لگتا ہے کہ اس کے پاس اس داغ کو دھونے کا یہ سب سے سنہری موقع ہے۔امید ہے کہ عالمی کپ سے پہلے پاکستان فٹنس کے مسائل سے ابھر کر ٹیم مو اقع کی تلا ش کرے گی ۔تیز گیند باز جنید خان کے بعد آل راؤنڈر محمد حفیظ کے بھی باہر ہونے سے پاکستان کو شدید جھٹکا لگا ہے۔عباس نے کہا کہ ہندوستان کے پاس تجربہ کار ٹیم ہے جبکہ پاکستانی ٹیم نوجوان ہے اور اسے اپنے صحیح توازن کو تلاش کرنا ہوگا۔ عباس نے کہا کہ ہندوستانی ٹیم تجربہ کار ہے اور پاکستانی ٹیم نوجوان ۔پاکستان کے زخمی کھلاڑیوں کی فہرست بڑھتی جا رہی ہے اور ابھی تک پورے 15کھلاڑی طے نہیں ہو سکے ہیں۔ حفیظ کے باہر ہونے سے بلے بازی بھی کمزور ہوئی ہے۔انہوں نے اس بات سے انکار کیا کہ ہندوستان پاکستان کا مقابلہ ہندوستانی بلے بازی اور پاکستانی گیندبازی کا ہوگا۔انہوں نے کہاکہ پاکستان کے پاس اب وسیم اکرم، عمران خان یا وقار یو نس کی طرح کے گیندباز نہیں ہے۔ان نوجوان گیندبازوں کو کافی محنت کرنی ہوگی۔ہندوستانی بلے بازی میں گہرائی ہے لیکن اس کے بلے باز چل نہیں رہے ہیں۔آسٹریلیا میں وہ ایک بھی میچ نہیں جیت سکے لیکن ہندوستانی ٹیم کو چکا ہوا نہیں کہہ سکتے کیونکہ اس کے پاس عالمی کپ جیتنے کا تجربہ ہے اور یہ ایک الگ ٹورنامنٹ ہے جس میں تمام بہترین کارکردگی پیش کرنا چاہتے ہیں۔عباس نے کہا کہ سچن تندولکر کے ریٹائر ہونے کے بعد ہندوستان کی کارکردگی کا انحصار بہت حد تک وراٹ کوہلی پر ہوگا۔انہوں نے کہا کہ اس ہندوستانی ٹیم میں سچن تندولکر نہیں ہیں اور سب کی نظریں اب وراٹ کوہلی پر ہوگی۔وہ ہندوستان کا بہترین بلے باز ہے اور اسے اچھی کارکردگی کرنی ہوگی ۔ہندوستانی گیندبازی اتنی مضبوط نہیں ہے لہذا بلے بازی پر بہت کچھ منحصر ہوگا۔وہ 2 مہینے سے آسٹریلیا میں کھیل رہے ہیں اور ان پچوں پر کھیلنے کے لئے فٹ ہو گئے ہوں گے۔
 

 

...


Advertisment

Advertisment