Today: Sunday, September, 23, 2018 Last Update: 06:01 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

فائنل جیسا ہوگاعالمی کپ میں ہندوپاک مقابلہ

 

دھونی کی کپتانی ہندوستان کیلئے کامیابی کی کلید:انضمام الحق
نئی دہلی،02 فروری (یو این آئی) پاکستان کی عالمی کپ فاتح ٹیم کے رکن اور سابق کپتان انضمام الحق کا کہنا ہے کہ ہندستان کے پاس ورلڈ کپ میں اپنا خطاب برقرار رکھنے کے 60 سے 70 فیصد مواقع ھیں اور ہندستان پاکستان کے درمیان پہلا مقابلہ کسی فائنل سے کم نہیں ہو گا۔انضمام سابق ہندستانی کپتان کپِل دیو،سابق فاسٹ بولر شعیب اختر جنوبی افریقہ کے کرشمائی فیلڈر جونٹي روڈس اور سابق ہندستانی اوپنر ارون لال پیر کو یہاں نیوز چینل نیوز 24 کے ورلڈ کپ پر منعقد کانفرنس میں کیا ہندوستان اپنا خطاب برقرار رکھ سکے گا،میں ہندستانی امکانات پر اپنے خیالات کا اظہارکر رہے تھے ۔انضمام نے جہاں ہندوستان کے لیے 60 سے 70 فیصد مواقع بتائے وہیں جونٹی،ا رون لال اور شعیب کا خیال تھا کہ ہندستان ٹاپ چار ٹیموں میں رہے گا۔کپِل نے مشترکہ میزبان نیوزی لینڈ کو چھپا رستم بتاتے ہوئے کہا کہ پہلے 15 اوور ہندستان کا فیصلہ کریں گے ۔پاکستان کی 1992 میں عمران خان کی کپتانی میں ورلڈ کپ جیتنے والی ٹیم کے رکن رہے انضمام نے کھا کہ ہندستان اور پاکستان کے درمیان پہلا مقابلہ کسی فائنل سے کم نہیں ہوگا اور میں امید کروں گا کہ یہ دونوں ٹیمیں بعد میں فائنل میں بھی نبرد ازما ہوں ۔ لیکن ایک بات طے ہے کہ جو ٹیم پہلا مقابلہ جیتے گی اس کا حوصلہ کافی بلندہو جائے گا ۔انضمام نے ساتھ ہی کھا کہ ہندستان کا آسٹریلیا میں مظاہرہ اچھا نہیں رہا ہے لیکن ٹیم کافی وقت سے وہاں کھیل رہی ہے اور وہاں کے حالات سے واقف ہو چکی ہے اس کا اسے فائدہ ملے گا۔ ویسے بھی جو ٹیم ہاری ہوئی ہوتی ہے اس میں واپسی کرنے کا جوش دوسری ٹیموں سے زیادہ ہوتا ہے ۔انضمام کا خیال ہے کہ بلے باز ہی ہندوستان کو خطاب پھر دلا سکتے ہیں۔انہوں نے کھا کہ ہندستان کے پاس روہت،وراٹ اور رینا جیسے میچ جیتانے والے بلے باز ہیں۔لیکن آپ کودھیان رکھنا ہوگا کہ اوپنر اور تین چار نمبر کے بلے باز میچ بناتے ہیں ۔ہندوستانی ٹیم کی اب تنقید اس لئے ہو رہی ہے کہ اس کا آسٹریلیا میں کھیل اچھا نہیں رہا ہے ۔ہندوستان کو صرف ایک جیت کی ضرورت ہے اور ٹیم ٹریک پر لوٹ آئے گی ۔ ہندوستان کو 1983 میں عالمی چیمپئن بنانے والے کپل نے کھا کہ آسٹریلیاءي زمین پر پہلے 15 اوور خاصے اہم ہوں گے ۔اگر آپ کو اچھی شروعات نہیں ملتی ہے تو آپ میچ نہیں بچا سکتے ۔پہلے 15 اوور میں تین وکٹ گنوانے کے بعد واپسی کرنا مشکل ہو جاتا ہے ۔آسٹریلوی پچوں پر میچ جیتنے کے لیے کم سے کم 270 کا اسکور بنانا ہوگا ۔سابق اوپنر اور اب کمنٹیٹر ارون لال نے کھاکہ ہندستان میں بھرپور صلاحیت ہے ۔پانچ نمبر پر رائنا اور چھٹے نمبر پر دھونی جیسے بڑے کھلاڑی ہیں ۔ آپ کو ابھی صرف ایک بڑی اچھی اننگز اور ایک اچھے میچ کی ضرورت ہے اور پھر سب ٹھیک ہو جائے گا۔وراٹ جیسا بلے باز نمبر تین پر موجود ہے جو اکیلے میچ جتا سکتا ہے ۔پاکستان کے سابق فاسٹ بولر اور اب ماہر بن چکے شعیب کا خیال ہے کہ جنوبی افریقہ اور نیوزی لینڈ کے خطاب کے دعویدار ہیں۔ شعیب نے کہا کہ میرا خیال ہے کہ جنوبی افریقہ اور نیوزی لینڈ کے ساتھ ایشیا کے دو ملک آخری چار میں پہنچ سکتے ہے ۔
 

 

...


Advertisment

Advertisment