Today: Tuesday, November, 13, 2018 Last Update: 10:08 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

دو ماہ سے مسلسل کھیل کر تھک گئے ہیں ہمیں، اب آرام چاہئے:دھونی


نئی دہلی31جنوری(آئی این ایس انڈیا)مہندر سنگھ دھونی کو کپتانی کرتے تقریبا 8 سال ہو گئے ہیں اور ٹیم کے بارے میں میڈیا کے سامنے انہیں سوالات کا جواب دیتے دیتے بھی اتنا ہی وقت ہو چکا ہے۔لگتا ہے کہ دھونی اگر کھلاڑی نہیں ہوتے تو ایک اچھے سیاستدان ہو سکتے تھے کیونکہ کسی بھی معاملے پر آپ ان سے کبھی بھی براہ راست جواب حاصل کر سکتے ہیں اور ان کے پاس جتنے شاٹس ہیں اس سے زیادہ ایک ہی بہانے کو الگ الگ الفاظ کے سے کہنے کے فن بھی ہے۔ویسے کرکٹ کے بعد وہ سیاستدان نہیں بنیں گے، اس کی بھی کوئی ضمانت نہیں ہے۔ٹرائی سیریز میں انگلینڈ کی ٹیم سے دو میچوں میں مسلسل شکست کے بعد اور فائنل کی دوڑ سے باہر ہونے کے بعد دھونی نے کہا ہے کہ وہ چاہتے ہیں کہ کھلاڑی اپنے کٹ بیگ اور کرکٹ کے باقی سامان کو تالا لگا دیں اور کرکٹ سے مکمل طور پر سے وقفہ لے لیں،بات تو صحیح ہے کہ ہر کسی کو آرام کی ضرورت تو ہوتی ہی ہے، چاہے وہ کھلاڑی ہو یا صحافی لیکن آخر اس ٹیم میں وقفہ چاہئے کسے یہ اہم سوال ہے۔شیکھر دھون کے بلے پر تو دو ماہ سے اب جاکر گیند لگنی شروع ہوئی تھی کہ کپتان نے وقفے کی بات کر دی۔روہت شرما کے پٹھوں میں کھنچاؤ ہے اور پہلے ہی آرام کر رہے ہیں۔ایشانت شرما بھی پہلے تین ٹیسٹ میچ کے بعد اس دورے پر آرام ہی کر رہے ہیں۔رویندر جڈیجہ بھی آرام کرتے کرتے ورلڈ کپ کی ٹیم کا حصہ بن ہی گئے ہیں،اکشر پٹیل تو دورے پر صرف ون ڈے کے لئے گئے ہیں، یعنی آرام کا سوال نہیں ہوتا تو بھونیشور کمار بھی طویل عرصہ آرام کرکے ٹیم میں واپس آئے ہیں۔سریش رائنا نے سڈنی ٹیسٹ میں کل چار گیندیں کھیلیں اور ون ڈے میں بھی ان کے نام 54رن ہی ہیں، اب اس کے لئے انہیں کتنا آرام کرنا چاہئے،شاید کپتان دھونی میڈیا کے سامنے دوائی تو بتا گئے لیکن بیماری کو بتانا بھول گئے،شاید وہ یہ بتانا بھول گئے کہ اس وقت ان کے لئے ڈریسنگ روم میں وراٹ کوہلی اور روی شاستری کے بڑھتے قد سے وقفہ چاہئے۔شاید وہ یہ بتانا بھول گئے کہ دھونی نے جن جڈیجہ، شیکھر اور رائیڈو پر سال بھر داؤ لگایا وہ اب انہیں مایوس کرنے لگے ہیں،شاید وہ یہ بھی بتانا بھول گئے کہ اگر وہ ورلڈ کپ کے فائنل میں ٹیم انڈیا کو نہیں پہنچا پائے تو ان کے لئے ون ڈے میں اپنی کپتانی بچانی مشکل ہو سکتی ہے۔ان سب سے ان کو تو آرام چاہئے ہی۔ آسٹریلوی دورے پر ٹیم انڈیا کو گئے ہوئے دو ماہ سے زیادہ وقت ہو گیا ہے لیکن اب بھی ٹیم کو ایک بھی جیت نہیں ملی ہے۔ٹیسٹ میچوں میں تو ہمارے پاس بیرون ممالک میں شکست کے بہانے تیار رہتے ہیں لیکن ون ڈے میں ملی ناکامی کو مداح ابھی تک ہضم نہیں کر پائے ہیں لیکن ان سب سے بے پرواہ کپتان دھونی چاہتے ہیں کہ ٹیم اب کچھ دنوں تک اپنے کٹ بیگ کو تالا لگا دیں اور خود کو مکمل طور پر کرکٹ سے دور کر دیں۔ویسے دھونی اکیلے نہیں ہیں جو ایسی رائے رکھتے ہیں بلکہ ٹیم انڈیا کے سابق کپتان سوربھ گانگولی نے یہاں تک کہہ دیا ہے کہ جو کھلاڑی ہندوستان آکر اپنے خاندان کے ساتھ وقت گزارنا چاہتے ہیں انہیں اس کی اجازت ملنی چاہئے۔تمام تنقید کے بعد بھی ٹیم انڈیا کے کپتان کو پورا بھروسہ ہے کہ ہندوستان جب 15فروری کو پاکستان کے خلاف اس ورلڈ کپ کا اپنا پہلا مقابلہ کھیلنے اترے گا تو پوری طرح تیار ہو جائے گا۔

 

...


Advertisment

Advertisment