Today: Wednesday, November, 14, 2018 Last Update: 02:05 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

محمد عامر کو گھریلو کرکٹ کھیلنے کی اجازت ملی

 

عامر کا مستقبل میں بہتر کھلاڑی اور بہتر انسان بننے کا عزم

لاہور ،29 جنوری یو این ائی )اسپاٹ فکسنگ کے گھناؤنے جرم میں پانچ سال کی طویل سزا پانے والے پاکستان کے تیز گیندباز محمد عامر کو ڈومیسٹک کرکٹ کھیلنے کی اجازت مل گئی ہے ۔بین الاقوامی کرکٹ کونسل نے دبئی میں ہونے والے اپنے اجلاس کے بعد کہا ہے کہ محمد عامر فوری طور پر ملکی کرکٹ کھیل سکتے ہیں، البتہ بین الاقوامی کرکٹ کھیلنے پر پابندی کا خاتمہ رواں سال 2 ستمبر کو ہی ہوگا۔محمد عامر کو اگست 2010ء میں انگلینڈ کے خلاف ایک ٹیسٹ مقابلے کے دوران جان بوجھ کر نوبال پھینکنے ، اور اس کے بدلے میں سٹے بازوں سے رقم حاصل کرنے ، کا الزام ثابت ہونے پر پانچ سال کی پابندی کا سامنا کرنا پڑا تھا۔محمد عامر کے علاوہ پاکستان کے اس وقت کے کپتان سلمان بٹ اور دوسرے تیز بالر محمد آصف بھی اس پابندی کی زد میں آئے تھے ۔ البتہ محمد عامر کو اچھے سلوک، انتظامیہ کے ساتھ تعاون، انسداد بدعنوانی کی تعلیم میں حصہ لینے اور جرم پر پشیمانی کی وجہ سے یہ رعایت دی گئی ہے ۔بین الاقوامی کرکٹ کونسل نے گزشتہ سال اپنے انسداد بدعنوانی قانون کے اندر ترمیم کی تھی جس کے تحت کسی کھلاڑی کو پابندی کا عرصہ مکمل ہونے سے چند ماہ پہلے ڈومیسٹک کرکٹ کھیلنے کی اجازت دی جا سکتی ہے تاکہ وہ پابندی ختم ہوتے ہی بین الاقوامی کرکٹ کھیلنے کے لیے تیار ہو۔ پاکستان کرکٹ بورڈ نے گزشتہ سال نومبر میں محمد عامر کو اس رعایت کا مستحق قرار دیتے ہوئے آئی سی سی سے باضابطہ درخواست کی تھی۔دبئی میں اپنے بورڈ اجلاس کے بعد آئی سی سی کے جاری کردہ اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ اینٹی کرپشن اینڈ سیکورٹی یونٹ کے چیئرمین رونی فلینگن نے اپنے اختیارات کو استعمال کرتے ہوئے محمد عامر کو پابندی کے خاتمے سے پہلے ڈومیسٹک کرکٹ کھیلنے کی اجازت دی ہے ۔ وہ محمد عامر سے مطمئن ہیں جنہوں نے اپنے جرم کا اعتراف بھی کیا اور ندامت کے اظہار کے ساتھ یونٹ کے ساتھ بھرپور تعاون بھی کی۔
محمد عامر نے کہا ہے کہ وہ کرکٹ میں دوسری زندگی پانے کے بعد خود کو بہتر کھلاڑی اور بہتر انسان ثابت کریں گے ۔پابندی میں نرمی ہونے کے بعد 22 سالہ محمد عامر کا کہنا ہے کہ یہ میری زندگی کی سب سے بڑی خبر ہے اور مجھے امید ہے کہ اس کے ساتھ ہی زندگی کا سب سے مشکل مرحلہ ختم ہوگیا ہے ۔ میری خواہش ہے کہ اب میں بین الاقوامی کرکٹ میں واپس آؤں۔گزشتہ ماہ چند ایسی خبریں سامنے آئی تھیں کہ پاکستان کرکٹ ٹیم کے چند موجودہ اراکین کو عامر کی ممکنہ واپسی پر خدشات لاحق ہیں۔ لیکن عامر کہتے ہیں کہ اگر کسی کو میری ممکنہ واپسی پر تحفظات ہیں تو مجھے یقین ہے کہ میرے حالیہ رویے اور آئندہ اچھی کارکردگی سے ان کے شبہات ختم ہوجائیں گے ۔محمد عامر 2009ء میں اپنے بین الاقوامی کیریئر کے آغاز کے بعد اپنی شاندار باؤلنگ کے ذریعے عالمگیر شہرت سمیٹی۔ 14 ٹیسٹ مقابلوں میں 51 وکٹوں کی عمدہ کارکردگی کے ساتھ ساتھ انہوں نے 25 ایک روزہ اور 23 ٹی ٹوئنٹی وکٹیں بھی حاصل کیں لیکن اس کے بعد سلمان بٹ اور محمد آصف کے ساتھ اسپاٹ فکسنگ اسکینڈل میں دھر لیے گئے ۔ جس پر انہیں برطانیہ میں بدعنوانی و دھوکہ دہی کے مقدمے میں جیل کی ہوا بھی کھانی پڑی اورکرکٹ کھیلنے پر پانچ سال کی طویل پابندی کا بھی سامنا کرنا پڑا۔اب جبکہ بین الاقوامی کرکٹ کھیلنے پر پابندی کے خاتمے میں چند ماہ رہ گئے ہیں، اور اس میں واپسی کی تیاری کے لیے عامر کو ڈومیسٹک میں تیاری کا موقع بھی دیا گیا ہے ،ان کا کہنا ہے کہ میرا کام کھیلنا اور اچھی کارکردگی دکھانا ہے اور مجھے یقین ہے کہ بین الاقوامی کرکٹ میں واپسی کے بعد میں خود کو ایک اچھا کھلاڑی اور بہترین انسان ثابت کروں گا۔عامر نے مزید کہا کہ کرکٹ میری زندگی ہے اور میں کبھی اسے چھوڑنے کا تصور بھی نہیں کرسکتا۔ بالنگ کرنا اب بھی نہیں بھولا اور اب میری توجہ پہلے سے بھی زیادہ خود کو ثابت کرنے پر ہوگی۔

...


Advertisment

Advertisment