Today: Wednesday, November, 21, 2018 Last Update: 06:09 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

SPORTS NEWS   

فائنل میں کوالیفائی کیلئے ہندوستان اور انگلینڈ میں آر پار کی جنگ آج

 

سہ رخی سیریز کے آخری میچ میں جیت ہی ٹیم انڈیا کیلئے واحد راہ

پرتھ ،29 جنوری (یو این آئی) عالمی کپ سے پہلے مشق کے طور پر دیکھی جا رہی سہ رخی سیریز کے فائنل میں کوالیفائی کرنے کے لیے گزشتہ دونوں میچ ہارنے والی ہندستانی کرکٹ ٹیم جمعہ کو انگلینڈ کے خلاف آر پار کے مقابلے میں اترے گی۔الجھے ہوئے معاملات بارش کی وجہ منسوخ گزشتہ مقابلے سے کافی سلجھ گئے تھے اور اب صرف جیتنے والی ٹیم ہی فائنل میں کوالیفائی کرے گی۔انگلینڈ کے ہاتھوں میں پھر بھی ایک جیت درج کرکے پانچ پوائنٹس ہیں اور اگر وہ ہندستان کے خلاف میچ ڈرا بھی کرا دیتی ہے یا پھر بارش سے پھر میچ منسوخ ہوتا ہے تب بھی انگلش ٹیم فائنل میں پہنچ جائے گی۔آسٹریلیا کے خلاف پچھلا میچ بارش کی وجہ سے منسوخ ہوا تھا اور ٹیم انڈیا اس سے ملے دو پوائنٹس کے ساتھ امید کی کرن روشن رکھے ہوئے ہے ۔ہندستان اور انگلینڈ کے لیے یہ میچ ناک آؤٹ مقابلے کی طرح ہے ۔گزشتہ مظاہرے کو دیکھیں تو ہندستان کو بہترین طریقے سے شکست دینے والی انگلینڈ اب بھی فائنل میں کوالیفائی کرنے کی اہم دعویدار کے طور پر دیکھی جا رہی ہے لیکن ہندوستان ون ڈے میں ایک اچھی ٹیم ہے اور گزشتہ چمپئن ٹیم انڈیا کو ایک دم سے خارج کرنا حریف ٹیموں کو مہنگا پڑ سکتا ہے ۔ہندستان نے موجودہ سیریز میں 15 کھلاڑیوں کو موقع دیا ہے جبکہ انگلینڈ نے 12 کھلاڑیوں کو اتارا ہے ۔ہندوستان کے لیے زخمی کھلاڑیوں کی بڑھتی فہرست ایک بڑا مسئلہ ہے ۔اوپنر روہت شرما کی فٹنس کی وجہ سے ان کا جمعہ کو بھی کھیلنا ممکن نہیں ہے ۔لیکن ٹیم کے دیگر بلے بازوں نے بھی ابھی تک مایوس ہی کیا ہے ۔وراٹ کوہلی،اجنکیا رہانے ،شکھر دھون کسی کا بھی مظاہرہ تسلی بخش نہیں رہا ہے ۔رہانے نے گزشتہ تینوں میچوں میں ٹیم کے لیے اوپننگ آرڈر میں کھیلا ہے لیکن فی الحال وہ بلے سے کچھ خاص نہیں کر پا رہے ہیں اور ان کا بہترین اسکور محض 33 ہے ۔سڈنی میں وہ 28 رنز بنا کر کریز پر تھے جب میچ کو منسوخ کیا گیا۔ون ڈے سے پہلے ٹیسٹ سیریز میں ان کا مظاہرہ بہترین رہا تھا اور اس لئے آسٹریلوی حالات میں وہ اچھا مظاہرہ کر سکتے ہیں۔لیکن اوپننگ آرڈر میں جس کھلاڑی کی فارم سب سے زیادہ تشویش ناک ہے وہ شکھر دھون ہے ۔دھون کو روہت کی غیر موجودگی کی وجہ سے فی الحال کپتان مہندر سنگھ دھونی کے لیے باہر بٹھانا ممکن نہیں ہے ۔دھون نے گزشتہ میچوں میں 02،01 اور 08 رنز کی انتہائی خراب اننگ کھیلی ہے جبکہ سپر اسٹار بلے باز وراٹ بھی خراب مظاہرے کے معاملے میں پیچھے نہیں ہیں اور انہوں نے تین اننگز میں کل 16 رن بنائے ہیں اور ان کی اننگز محض 09 رنز ہے ۔عالمی کپ میں کچھ ہی دن باقی ہیں اور ایسے میں ٹیم انڈیا کے وہ کھلاڑی جو عالمی کپ ٹیم کا حصہ ہیں ان کا ایسا مظاہرہ تشویشناک ہے ۔سہ رخی سریز کو اہم امتحان سے پہلے ہندوستان کے لیے ریہرسل مانا جا رہا تھا لیکن محسوس ہوتا ہے کہ ٹیم انڈیا کے طالب علم سب کچھ بھول چکے ہیں۔ کپتان دھونی نے تین میچوں میں اپنی دو اننگز میں کل 53 رن بنائے ہیں اور ہمیشہ کی طرح مڈل آرڈر کو سنبھالنے کی ذمہ داری ایک بار ان کے مضبوط کندھوں پر رہے گی۔اس کے علاوہ آل راؤنڈر سریش رینا سے بھی بہتر مظاہرے کی امید ہے ۔ہندوستان کے لیے اس میچ کے ذریعے پرتھ میں انگلینڈ کے خلاف اپنے گزشتہ ریکارڈ کو بہتر بنانے کا بھی موقع ملے گا۔دونوں ٹیمیں 1992 ورلڈ کپ میں پرتھ کے میدان پر آمنے سامنے آئی تھیں جس میں انگلینڈ نے نو رن سے جیت درج کی تھی۔ہندستان کی جانب سے سب سے زیادہ رنز صرف روہت نے بنائے ہیں لیکن وہ صرف ایک ہی میچ کھیل کر زخمی ہو گئے اور اب باقی کے بلے بازوں پر جیت کا دارومدار ہے ۔اس سے پہلے بھی دھونی نے میچ میں خراب مظاہرے کیلئے بلے بازوں کو ہی جھاڑ لگائی تھی۔ہندستانی ٹیم کے کھلاڑی اپنے مظاہرے میں بہتری کے لیے مشق میں تو مصروف ہیں لیکن دیکھنا ہوگا کہ اپنے ناک آؤٹ مقابلے میں وہ پانسہ پلٹنے میں کامیاب رہتے ہیں یا نہیں۔بلے بازی کی ہی طرح بولنگ میں بھی ہندستانی کھلاڑیوں نے مایوس ہی کیا ہے ۔اکشر پٹیل بلے بازی میں بالکل پھسڈی ثابت ہوئے تو بولنگ میں انہوں نے تین میچوں میں ایک وکٹ لیا۔محمد شمي بھی کچھ مختلف نہیں ہیں ۔ چوٹ کے بعد واپسی کر رہے تجربہ کار ایشانت شرما سے ضرور کچھ اپ سیٹ کی امید رہے گی جنہوں نے ابھی تک ایک ہی میچ کھیلا ہے جبکہ آل راؤنڈر رویندر جڈیجہ اور اسٹورٹ بنني بھی گیند بازی میں بہتر ثابت ہو سکتے ہیں۔ دوسری طرف انگلینڈ کی طرف سے ایان بیل ٹیم کے سب سے زیادہ اسکور بنانے والے کھلاڑی ہیں۔محض تین میچوں میں انہوں نے 229 رن بنائے ہیں اور ایک بار پھر ایان سے انگلینڈ کو کافی امیدیں ہوں گی۔اس کے علاوہ کپتان ایان مورگن،جو روٹ،جیمز ٹیلر جبکہ گیند بازوں میں اسٹیون فن ،کرس ووکس،جیمز اینڈرسن سے امیدیں رہیں گی۔واکا کی پچ پر اضافی اچھال اور تیزی رہتی ہے جو تیز گیند بازوں کے لیے فائدہ مند رہے گی اور تیز گیند بازوں کو کچھ فائدہ مل سکتا ہے ۔لیکن یہاں بھی بارش کا امکان ہے ۔ہندوستان کے مقابلے انگلینڈ کی ٹیم زیادہ متوازن اور اعتماد سے لبریز لگ رہی ہے ۔ٹیم کے کھلاڑی اسٹورٹ بریڈ نے میچ کے بارے میں کھا کہ ھم صرف ہندوستان کے خلاف ہر شعبے میں اچھا کھیل دکھانے پر توجہ دیں گے ۔ہماری فیلڈنگ بہتر ہے اور امید ہے کہ بلے بازی اور گیند بازی بھی اور بہتر رہے گی ۔
 

 

...


Advertisment

Advertisment