Today: Tuesday, November, 20, 2018 Last Update: 08:42 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

اورنگ آباد اسلحہ ضبطی معاملہ

 

وکیل استغاثہ کے رویہ سے جج ناراض
بلا وجہ مقدمہ کی سماعت ملتوی کرائے جانے پر سخت کارروائی کا انتباہ
ممبئی ،17جنوری (یو این آئی) مہاراشٹر میں ہوئے ایک دہشت گرددانہ واقعہ بنام اورنگ آباد اسلحہ ضبطی معاملے میں وکیل استغاثہ کے رویہ سے ناراض ہوکر خصوصی جج قادری نے آج یہ حکم جاری کیا کہ اگر بلاوجہ مقدمہ کی سماعت ملتوی کرنے کی عرضداشت داخل کی گئی تو اس پر سخت ایکشن لیں گے کیوں کہ اس معاملے کو ممبئی ہائی کورٹ نے جلد از جلد ختم کرنے کے احکامات جاری کیئے ہیں لیکن اس کے باوجو د بھی وکیل استغاثہ لگاتا ر سماعت ملتوی کرنے کی عرضداشت داخل کرتے جارہے ہیں جس سے تقریباً 9سالوں سے جیل میں قید و بند کی صعوبتیں برداشت کرنے والے ملزمین کو انصاف ملنے میں تاخیر ہورہی ہے ۔ کل اورنگ آباد اسلحہ ضبطی معاملے کے ایک ملزم ڈاکٹر شریف شبیر احمد کی ضمانت عرضداشت پر ممبئی ہائی کورٹ میں بحث ہونے والی تھی جس کے لیئے سرکاری وکیل کو بھی ہائی کورٹ جانا تھا لیکن بجائے ایک سرکاری وکیل کے حکومت مہاراشٹر کی جانب سے مقرر کردہ دونوں خصوصی وکلاء استغاثہ وبھئے بگاڑے اور ابھجیت منتری ہائی کورٹ چلے گئے اور تحقیقاتی دستہ کے ایک افسر سے انہوں نے مقدمہ کی سماعت ملتوی کرنے کی عرضداشت خصوصی عدالت میں روانہ کردی جو جج قادری کو گراں گذری کیوں کہ ان ملزمین کو قانونی امداد فراہم کرنے والی تنظیم جمعیۃ علماء مہاراشٹر (ارشد مدنی) کے دفاعی وکلاء صبح 11بجے سے ہی عدالت میں مقدمہ کی سماعت کے انتظار میں بیٹھے تھے ۔جج قادری نے اپنے سخت ریمارک میں یہ بھی کہا کہ اگر مستقبل میں بلاو جہ مقدمہ کی سماعت کی عرضداشت داخل کی گئی تو وہ استغاثہ پر سخت کارروائی کرنے سے بھی گریز نہیں کریں گے کیوں کہ گذشتہ پانچ ماہ کے عرصہ کے دوان استغاثہ نے 18مرتبہ مقدمہ کو ملتوی کرنے کی عرضداشت داخل کی ہے جبکہ اس درمیان دفاعی وکلاء لگاتار مقدمہ کی سماعت والے دن خصوصی عدالت میں حاضر ہوتے رہے ہیں ۔واضح رہے کہ اس سے قبل بھی استغاثہ کے رویہ سے ناراض ہوکر خصوصی جج جی ٹی قادر ی نے استغاثہ پر 20 ہزار روپیوں کا جرمانہ عائد کیا تھا ۔اسی درمیان بامبے ہائی کورٹ میں ڈاکٹر محمد شریف شبیر احمد کی ضمانت عرضداشت پر سینئر ایڈوکیٹ ڈاکٹر یوگ موہیت چودھری نے اپنی بحث کا آغاز کیا اور ملزم کو ضمانت پر رہا کیئے جانے کی مانگ کی لیکن وقت کی کمی کی وجہ سے سرکاری وکیل وبھئے بگاڑے کو ملزم کی ضمانت عرضداشت پر جواب داخل کرنے کے لیئے عدالت نے 21 جنوری تک کی مہلت دیتے ہوئے اپنی کارروائی ملتوی کردی۔دوران کارروائی عدالت میں جمعیۃ علماء کی جانب سے ایڈوکیٹ عبدالوہاب خان، ایڈوکیٹ شریف شیخ ،ایڈوکیٹ انصار تنبولی، ایڈوکیٹ شاہد ندیم انصاری ، ایڈوکیٹ آصف نقوی، ایڈوکیٹ افضل نواز، ایڈوکیٹ توصیف شیخ ، ایڈوکیٹ ارشد و دیگرموجود تھے ۔

 

 

 

...


Advertisment

Advertisment