Today: Thursday, November, 22, 2018 Last Update: 01:10 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

تفتیش کے بعد دو مشتبہ غیرملکی خواتین کی رہائی

 

وارانسی۔ 13جنوری (یو این آئی) سیکورٹی ایجنسیوں نے اترپردیش کے وارانسی میں کی مکورڈر سے ویڈیوگرافی کے معاملے کی تفتیش کے بعد دو مشتبہ غیرملکی خواتین کو چھوڑ دیا۔دشاشومے گھاٹ کے فیلڈ افسر ڈی پی شکلا نے آج بتایا کہ گہری تفتیش کے بعد پتہ چلا ہے کہ ان غیرملکی خواتین نے کسی قانون کی خلاف ورزی نہیں کی ہے ۔انہوں نے بتایا کہ ماریا اور ایلکزنڈر نامی یہ خواتین روس کے ماسکو میں رہتی ہیں۔ دونوں پیشہ ور فوٹو گرافر ہیں اور ان کے ویزا اورویزا درست ہیں ۔ دونوں ہندوستان گھومنے کے لئے پیر کی صبح وارانسی آئی تھیں۔مسٹر شکلانے بتایا کہ دونوں غیرملکی خواتین نے بابا کاشی وشوناتھ مندر اور دشاشویم علاقے کی ویڈیوگرافی نہیں کی۔انہوں نے بتایا کہ ماریا اور الیکزنڈر دشاشویم علاقہ کے للیتا گھاٹ کے نزدیک ایک پرائیویٹ گیسٹ ہاوس میں ٹھہری تھیں اور اسی کی چھت سے انہوں نے کیم کاپٹر اڑاکر دیکھا تھا لیکن کوئی ویڈیوگرافی نہیں کی۔انہوں نے بتایا کہ وارانسیکے جس علاقے میں کیم کاپٹر اڑانے کا معاملہ سامنے آیا ہے وہ سیکورٹی کے لحاظ سے نہایت حساس ہے ۔یہاں مشہور باباکاشی وشوناتھ مندر، دشاشویم گھاٹ سمیت کئی مذہبی اعتبار سے اہمیت کے حامل مقامات ہیں جہاں ہزاروں کی تعداد میں ملکی و غیرملکی سیاح و عقیدت مند روزانہ آتے ہیں ۔ اسی وجہ سے ریاستی اور مرکزی حکومت کی سیکورٹی ایجنسیاں یہاں نہایت چوکسی برتتی ہیں۔خیال رہے کہ کل دشاشویم علاقہ میں للیتا گھاٹ کے نزدیک پرائیویٹ گیسٹ ہاوس کی چھت سے کیم کاپٹر اڑائے جانے کی اطلاع سیکورٹی ایجنسیوں کو مل گئی تھی۔پولیس کو اطلاع ملی تھی کہ دونوں غیرملکی خواتین ڈرون کیمروں سے آس پاس کے علاقوں کی ویڈیوگرافی کررہی ہیں جس کے بعد پولیس ٹیم نے گیسٹ ہاوس پہنچ کر تفتیش شروع کردی۔پولیس افسر نے بتایاکہ تفتیش کے دوران پتہ چلا کہ ان کے پاس ڈرون کیمرے نہیں بلکہ کیم کاپٹر (کیمپ کیمرہ) ہے جو زیادہ سے زیادہ پچاس میٹرکی اونچائی تک پرواز کر سکتا ہے اور وہاں سے ویڈیوگرافی کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ خواتین کے پاس سے ملے کیمرے میں چپ نہیں ملی ہے اور وہ اس بارے میں کوئی اطمینان بخش جواب بھی نہیں دے سکی تھیں اسی وجہ سے پیر کی دوپہر تک شبہ کی صورتحال رہی۔ ان خواتین کے بیگ کی بھی تلاشی لی گئی لیکن نہ تو کوئی چپ ملی اور نہ ہی کوئی مشتبہ سامان۔ذرائع نے بتایا کہ غیرملکی خواتین سے مقامی پولیس کے ساتھ ساتھ مقامی انٹلی جنس ، سنٹرل سیکورٹی ایجنسی آ ئی بی کے افسران نے بھی پوچھ گچھ کی اورپوری طرح مطمئن ہونے کے بعد انہوں نے کل دیر رات انہیں رہا کرنے کا فیصلہ کیا۔

...


Advertisment

Advertisment