Today: Friday, September, 21, 2018 Last Update: 11:32 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

تلنگانہ کی چندرشیکھر راو کابینہ میں توسیع ۔6 نئے چہروں نے حلف اٹھایا

 

حیدرآباد16دسمبر(یواین آئی)تلنگانہ میں ٹی آر ایس حکومت کی تشکیل کے بعد کابینہ میں پہلی مرتبہ آج توسیع کی گئی ۔ راج بھون میں منعقدہ ایک سادہ تقریب میں چھ وزرا ٹی سرینواس یادو ‘ ٹی ناگیشور راؤ ‘ لکشما ریڈی ‘ اے چند و لال ‘ جے کرشنا راؤ اور اندرا کرن ریڈی کو گورنر ای ایس ایل نرسمہن نے عہدہ اور رازداری کا حلف دلایا ۔ سب سے پہلے ٹی ناگیشور راؤ نے حل لیا۔ تمام نئے وزرا نے تلگو زبان میں حلف لیا ۔ حلف برداری کی تقریب کے سبب راج بھون کے قریب کافی ٹریفک کی وجہ سے سڑک جام ہوگئی۔حلف اٹھانے کے بعد ان نئے وزرا نے گورنر ای ایس ایل نرسمہن اور وزیر اعلی کے چندر شیکھر راو سے اظہار تشکر کیا ۔نئے وزرا کی حلف برداری کے بعد ٹی آر ایس کے ہیڈ کوارٹرس تلنگانہ بھون میں نئے وزرا کے حامیو ں نے جشن منایا اور رقص کیا ۔ اس موقع پر نئے وزرا کو ٹی آر ایس کے دیگر لیڈروں نے مبارکباد بھی پیش کی ۔ نئی کابینہ میں بعض چہروں کی شمولیت پر تلنگانہ کے وزیر انفارمیشن ٹکنالوجی و وزیر اعلی چندر شیکھر راؤ کے فرزند کے ٹی راما راؤ کی ناراضگی کی اطلاع ملی ہے ۔ ذرائع کے مطابق حیدرآباد میں رہنے کے باوجود وہ راج بھون میں منعقدہ اس تقریب سے غیر حاضر رہے ۔ ان کا ماننا ہے کہ مستحق رہنماوں کو کابینہ میں جگہ نہیں دی گئی بلکہ پارٹی تبدیل کرتے ہوئے ٹی آر ایس میں شامل ہونے والے ٹی ناگیشور راؤ ‘ اندرا کرن ریڈی اور ٹی سرینواس یادو کو وزرا بنایا گیا ۔ بتایا جاتا ہے کہ اس توسیع میں کسی بھی خاتون کو وزیر نہ بنائے جانے پر بھی کے ٹی راما راؤ ناراض ہیں۔ کابینہ میں شامل ہونے والے سرینواس یادو حلقہ اسمبلی صنعت نگر کی نمائندگی کرتے ہیں جبکہ ناگیشور راؤ کونسل یا اسمبلی کے رکن نہیں ہیں ‘ عام انتخابات میں انہیں ضلع کھمم کے حلقہ اسمبلی ستو پلی سے تلگودیشم کے ٹکٹ پر شکست ہوئی تھی ۔ لکشما ریڈی کا تعلق ضلع محبوب نگر کے حلقہ اسمبلی جڑچرلہ سے ہے جنہوں نے ٹی آر ایس کے ٹکٹ پر عام انتخابات میں کامیابی حاصل کی تھی ۔مسٹر اے چندو لال قبائلی لیڈر ہیں ۔انہیں ضلع ورنگل کے حلقہ اسمبلی ملگ سے ٹی آر ایس کے ٹکٹ پر کامیابی ملی تھی ۔ جوپلی کرشنا راؤ محبوب نگر سے تعلق رکھتے ہیں وہ کولہا پور سے ٹی آر ایس کے ٹکٹ پر عام انتخابات میں منتخب قرار دیئے گئے تھے ۔ اندرا کرن ریڈی کا تعلق ضلع عادل آباد سے ہے وہ حلقہ اسمبلی نرمل سے بی ایس پی کے ٹکٹ پر کامیاب ہوئے تھے۔ قبل ازیں ٹی سرینواس یادو نے کابینہ میں شمولیت سے پہلے آج صبح اسمبلی ‘ تلگودیشم پولیٹ بیورو اور تلگو دیشم کی ابتدائی رکنیت سے استعفیٰ دے دیا ۔ انہوں نے آج صبح میڈیا کے سامنے اس بات کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے اسمبلی کی رکنیت سے استعفی کا مکتوب اسپیکر مدھو سدن چاری کو بھیج دیا ہے ۔ انہوں نے کابینہ میں شمولیت پر وزیر اعلی چندر شیکھر راؤ سے اظہار تشکر کیا اور کہا کہ وہ دونوں شہروں حیدرآباد و سکندرآباد کی ترقی کیلئے اقدامات کریں گے ۔ انہوں نے دعوی کیا کہ انہیں عوامی حمایت حاصل ہے ۔ انتخابات میں حصہ لے کر کامیابی حاصل کرنا ان کے لئے نئی بات نہیں ہے ۔ کابینہ میں شمولیت سے قبل میڈیا سے بات کرتے ہوئے ٹی ناگیشور راؤ نے کہا کہ سنہرے تلنگانہ کی تشکیل میں ان کا اہم رول ہوگا ۔ تر قی ان کا اصل مقصد ہے ۔ انہوں نے کہا کہ وہ ریاست تلنگانہ کی ترقی اور اسے سنہرے تلنگانہ میں تبدیل کرنے کے مقصد سے کام کریں گے ۔ انہوں نے کہا کہ ضلع کھمم میں ٹی آر ایس کو مستحکم بنانے کیلئے وہ اقدامات کریں گے ۔ جڑچرلہ کے رکن اسمبلی لکشما ریڈی نے کہا کہ وزیر اعلی چندر شیکھر راؤ کی طرز حکمرانی سے تلنگانہ کے نوے فیصد عوام مطمئن ہیں ۔ وزیر کے طور پر حلف لینے سے پہلے میڈیا سے بات کرتے ہوئے انہو ں نے کہا کہ چندر شیکھر راؤ تمام اضلاع کو مساوی نظر سے دیکھتے ہیں ۔ شمالی جنوبی تلنگانہ کے خطوں سے وزیر اعلی امتیاز نہیں کرتے۔ انہوں نے کہا کہ محبوب نگر کے پارٹی رہنماوں کے ساتھ مل کر وہ کام کریں گے اور وزیر اعلی چندر شیکھر راؤ کا ایجنڈہ ہی ان کا ایجنڈہ ہوگا ۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ اور محبوب نگر کی ترقی کیلئے وہ اقدامات کریں گے ۔

 

 

...


Advertisment

Advertisment