Today: Thursday, November, 15, 2018 Last Update: 03:09 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

جمعیۃ علمائے ہند بلاتفریق مذہب وملت قومی خدمات انجام دیتی ہے

 

لھسانہ روڑ پر واقع جمعیۃ کالونی میں 24فساد زدگان کو نو تعمیر شدہ مکانات کی چابی سپرد کرتے ہوئے مولانا سید اسجد مدنی کی وضاحت

بڑھانہ؍مظفرنگر،12دسمبر(پریس ریلیز)مقامی لھسانہ روڑ پر واقع جمعیۃ کالونی میں آج 24فساد زدگان کو نو تعمیر شدہ مکانات کی چابی سپرد کی گئی اور بقائے باہمی کی دعا ء کی گئی،نیز صدر جمعیۃ مولانا ارشد مدنی کی درازی عمر کی دعاء کی گئی کہ حضرت کی ہی توجہات سے یہ کام پایہ تکمیل کو پہنچا ہے۔ابتدا میں جمعیۃ کی قومی عاملہ کی تجویز سنائی گئی جس کے مطابق مکانات کا یہ سلسلہ آئندہ بھی جاری رہے گا۔اس مناسبت سے منعقد تقریب کی صدارت ضلع جمعیۃ صدر مولانا نذر محمد اور نظامت حافظ محمد تحسین وآصف قریشی نے مشترکہ طور پر کی ،اس کا آغاز مفتی محمد آزاد قاسمی کی تلاوت اور قاری محمد صالح کی نعت پاک سے ہوا۔اس موقع پر جمعیت علمائے ہند کے عاملہ کے رُکن امیر ملت مولاناسید اسجد مدنی نے کہا کہ جمعیۃ علمائے ہند کی قومی خدمات بلا لحاظ مذہب کے ہوا کرتی ہیں ،جیساکہ مغربی بنگال اور اتراکھنڈ میں جمعیۃ یہ کارنامہ انجام دے چکی ہے،مولانا نے حالیہ تبدیلی مذہب اور فساد پر بولتے ہوئے کہا کہ اقلیت واکثریت دونوں ہی اس ملک کی آنکھ کے مانند ہیں ،ایک کے نقصان سے لازمی طور پر دوسرے کا خسارہ یقینی ہے ،اس لیے یہاں بقائے باہمی کے ساتھ رہنے کی ضرورت ہے ،انھوں نے کہا کہ ہندوستان ایک چمن ہے،جہاں طرح طرح کے پھول ہیں ،الگ الگ خوشبوئیں ہیں ،لیکن منزل ہم سب کی ایک ہے،مولانا مزید کہا ہم ہندوستانی ایک قوم ہیں اور وطنی قوم ہیں ،کیونکہ قوم ہمیشہ ہی وطن سے بنتی ہے،انھوں نے کہا 1919میں جمعیۃ علمائے ہند کا قیام عمل میں آیا جس کی تخم ریزی شیخ الہند مولانا محمود حسن ؒ اور آبیاری شیخ الاسلام مولانا حسین احمد مدنی نے کی،مفتی اعظم مولانا کفایت اللہ دہلوی،مولانا محفوظ الرحمان سیوہاری جیسے اکابر اس کے بانیوں میں سے ہیں ،یہ وہی جماعت ہے جس نے ملک کی آزادی کے لیے انگریز کے خلاف ملک کے کونہ کونہ میں بگل بجایا تھا۔مولانا نذر محمد نے کہا کہ جمعیۃ علماء ایک تاریخ ساز جماعت ہے ،جس نے سدا ہی ملک اور قوم کی خدمت کی ہے ،مولانا نے ممبئی اسمبلی کے اُن اراکین کی سخت الفاظ میں مذمت کی جنھوں نے بلا وجہ کے ایک نئے فتنہ کو جنم دیتے ہوئے جمعیۃ علمائے ہند پر پابندی لگانے کی بات کہی ہے اور کہا کہ ملک کو آزاد کرانے میں جمعیت کی جو خدمات رہی ہیں ،وہ سرکاری ریکارڈ میں درج ہے ،اکابر جمعیۃ کا کالے پانی کی سزائے قید کاٹنا اس بات کا واضح نمونہ ہے ،انھوں نے کہا یا دکیجیے اس وقت کو جب مولانا حسین احمد مدنی ؒ نے لاہور کے ایک مقدمہ میں فاضل جج کے سامنے ملک کی خاطر طویل بحث کی تھی۔مولانا نذر محمد نے فدائے ملت مولانا سید اسعد مدنیؒ اور جانشین شیخ الاسلام مولانا ارشد مدنی کی جہد مسلسل پر تفصیلی روشنی ڈالی۔اس موقع پر جمعیۃ کے شاخ بڑھانہ کے جنرل سکریٹری حافظ تحسین رانا نے قومی یکجہتی کی تجویز پیش کی جس کو اتفاق رائے سے پاس کرلیاگیا۔بعد ازاں علماء کا یہ قافلہ شہر صدر آصف قریشی کی رہائش گاہ پر پہنچا جہاں علماء کی جماعت نے ان کا استقبال کیا۔شرکاء میں حافظ شیر دین رانا،اسلام سیفی،طاہر قاسمی،اکرام قصاب،حاجی شاہد تیاگی،سلیم ملک،قاری انور،مولانا محمد عاقل،مولانا محمد ایوب قاسمی،مولانا عمران حسینپوری ،زاہد حسن،توصیف راہی ،راشد عظیم،حافظ کامل وغیرہ کے نام قابل ذکر ہیں۔

...


Advertisment

Advertisment