Today: Friday, September, 21, 2018 Last Update: 09:46 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

حکومت اور اردو کے بیچ رابطہ کی کڑی ہوں گے مظفرحسین

 

قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان کے نومنتخب وائس چیئرمین کا بیان ، ویر ساوکر کو بتایاعظیم مجاہد آزادی ، بہادر شاہ ظفر کے نام پر ڈاک ٹکٹ جاری کرنے اور اردو گیلری کے قیام پر زور ، سہ لسانی فارمولہ میں اردو کو جگہ دلائیں مظفر حسین : پروفیسر اخترالواسع ،این سی پی یوایل کے تعاون کیلئے کونسل حکومت کی شکر گذار ہے: خواجہ اکرام

محمد احمد

نئی دہلی ،4 دسمبر ( ایس ٹی بیورو ) این سی پی یو ایل کے نومنتخب وائس چیئرمین مظفر حسین نے آج چارج سنبھالنے کے بعد نامہ نگاروں کے سوالوں کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ’ اگر اردو کے فروغ کیلئے اردو والوں کی مدد ان کا ساتھ اور ان کا خلوص شامل رہا تو منزل دور نہیں ہوگی‘ ۔ انہوں نے کہا کہ وہ حکومت اور اردو والوں کے مابین رابطہ کی کڑی بننے کیلئے تیار ہیں ۔ مسٹر مظفر حسین نے جو کہ پیشہ سے ایک صحافی ہیں اپنی بات کو آگے بڑھاتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ وہ اردو گیلری کے قیام اور اردو دانشوروں کی وراثت کے تحفظ کی طرف قدم آگے بڑھائیں گے ۔ مسٹر مظفر حسین نے بہاد ر شاہ ظفر کے نام پر ڈاک ٹکٹ جاری کرنے پر بھی زور دیتے ہوئے کہا کہ ضرورت اس بات کی ہے کہ جن لوگوں نے اردو زبان و ادب کے حوالہ سے کام کیا ہے انکی وراثت کا تحفظ کیا جائے ۔ انہوں نے ویر ساورکر کو عظیم مجاہد آزادی قرار دیتے ہوئے کہاکہ جب ان کو جیل میں لکھنے کیلئے کاغذاور قلم نہیں دیا گیا تب انہوں نے لوہے کی تیلیوں سے جیل کی سلاخوں پر جن تحریروں کو لکھنا شروع کیا وہ اردو رسم الخط میں تھیں ۔ ساتھ ہی آئین کے جو آخر ی 20صفحات آج بھی غیر مطبوع ہیں ان پر مولانا ابوالکلام آزاد کا دستخط اردو زبان میں ہے ۔ انہوں نے کونسل سے گذارش کی کہ وہ ان 20صفحات کو حکومت سے اجازت لیکر اردو میں شائع کرے ۔ اردو کے مسائل کیلئے صرف مجھے اردو والوں کی دعاؤں کی ضرورت ہے ۔ ان کا کہناتھا کہ ’ اردو کا بوجھ کسی کے کندھے پر نہیں ہے ۔ اور وہ اپنے پیروں پر کھڑی ہے ، اسے بیساکھی کی ضرورت نہیں ہے ۔

قبل ازیں وائس چیئر مین کا استقبال کرتے ہوئے پروفیسر اخترالواسع ، ڈاکٹر اطہر فاروقی ، ڈاکٹر عقیل احمد ، وسیم راشد اور صحافی اسد رضانے انکے سامنے اردو کے بنیادی مسائل رکھتے ہوئے مسٹر مظفر حسین کو بتایا کہ ’ آپ کا نام آج سلسلۃ الذہب کی اس فہرست میں جڑ گیا ہے جس میں شمس الرحمان فاروقی ، گوپی چند نارنگ اور شاہد صدیقی جیسے لوگوں کا نام شامل ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ضرورت اس بات کی ہے کہ اردو کی تعلیم اسکولوں میں دی جائے ۔ اور سرکاری اسکولوں میں اردو زبان کے پڑھنے کو پرائمری سطح سے یقینی بنایا جائے ۔ انہوں نے اردو صحافت کیلئے تربیت یافتہ صحافیوں کی کمی کا شکوہ کرتے ہوئے کونسل کو اس سمت میں کام کرنے کا مشورہ دیا۔ مسٹر اخترالواسع نے کہا کہ 1961میں سہ لسانی فارمولہ اردو کو اس کا حق دلانے کیلئے وضع کیا گیا تھا ،امید کہ ظفر ( کامیابی)اب مظفر کے حصہ میں آئیگی ۔انہوں نے صحافیوں کو غیر مصدقہ خبروں کی اشاعت سے گریز کا مشورہ دیتے ہوئے کہاکہ اگر کسی کے پاس این سی پی یو ایل میں بدعنوانی کی خبر ہے تووہ اس کا ثبوت دے ۔کارروائی ضرور کی جائیگی ۔ تاہم پروفیسر نصیر احمد خان نے اردو رسم الخط کی بقا اور اس کے تحفظ پر زور دیا جسکی تمام حاضرین نے تالیاں بجا کر تائید کی ۔
اس سے قبل این سی پی یو ایل کے ڈائرکٹر ڈاکٹر خواجہ اکرام نے تمام مہمانوں کا تعارف کراتے ہوئے اردو زبان کی خدمت کیلئے این سی پی یو ایل کے ذریعہ کی جارہی کا وشوں کا تذکرہ کرتے ہوئے کونسل کے تعاون کیلئے حکومت کا شکریہ ادا کیا ۔ اس موقع پر سہیل انجم ، ڈاکٹر سید احمد خان سمیت بی جے پی کے کئی رہنما موجود تھے ۔

 

 

...


Advertisment

Advertisment