Today: Monday, September, 24, 2018 Last Update: 12:40 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

الیکشن سے قبل کجریوال کو پھر یاد آئے عوامی مسائل

 

'دہلی ڈائیلاگ ' پروگرام کے ذریعہ عوام کو لبھانے کا فیصلہ* پریس کانفرنس میں اروند کجریوال نے انتخابی سروے کو کیامسترد

نثاراحمدخان

نئی دہلی، 12نومبر (ایس ٹی بیورو)عام آدمی پارٹی کے سربراہ اروند کجریوال آج عوامی مسائل کے تئیں فکر مند نظرآئے۔انہوں نے دہلی والوں کا دل ٹٹول کر ان کے مسائل کا حل کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔ عام آدمی پارٹی نے ’دہلی ڈائیلاگپروگرام کے ذریعہ عوام کو لبھانے کا بھی فیصلہ کیاہے۔ نئی دہلی کے کانسٹی ٹیوشن کلب میں منعقدہ پریس کانفرنس کے دوران اروند کجریوال نے آئندہ اسمبلی انتخابات میں 45سیٹیں جیتنے کا دعویٰ کرتے ہوئے حال ہی میں آئے انتخابی سروے کو بھی مسترد کردیا۔ اس موقع پریوگیندر یادو، گوپال رائے،سنجے سنگھ، آشوتوش، آشیش کھیتان اور آدرش شاستری وغیرہ بھی موجود تھے۔اروند کجریوال نے کہا کہ اس پروگرام کے تحت پارٹی کے کارکنان عوام کے درمیان جا کر سیدھے طور پر ووٹروں سے ملاقات کریں گے اور ان کے مسائل سن کر ایک بلیو پرنٹ تیار کریں گے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ مجھے یقین ہے کہ دہلی کے لوگ ان کی پارٹی کو حکومت بنانے کا موقع دیں گے۔ کیونکہ لوگوں کو معلوم ہے کہ وعدوں کو حقیقت میں کون تبدیل کر سکتا ہے۔ مسٹرکجریوال نے کہا کہ دہلی کو عالمی سطح کا شہر بنانے کیلئے عوام سے رائے لینا ضروری ہے۔ اس سے ہمیں یہ پتہ چلے گا کہ 5سال میں بہتری اور ترقی کیلئے کیا کیا جا سکتا ہے۔یہی نہیں اروند کجریوال نے آج اپنے سابقہ کارکردگی کو گنواتے ہوئے کہاکہ پہلے بھی ہم نے اپنے وعدے کو پورا کیاہے اور آگے بھی مکمل کرکے دکھائیں گے۔ انہوں نے یہ بھی بتایاکہ 15 نومبر کو ایک پروگرام رکھا گیا ہے، جس میں نوجوانان دہلی سے بات کی جائے گی کہ وہ کیاچاہتے ہیں۔ اس کے بعد 26نومبر کو خواتین کے تحفظ کو لے کرپروگرام کا اعلان ہوگا اوراس میں خواتین سے متعلق گفتگو کی جائیں گی۔ مسٹراروند نے بتایا کہ ’دہلی ڈائیلاگ‘ کیلئے جو ٹیم تیار کی گئی ہے، اس میںآشیش کھیتان، آدرش شاستری ،پریتی مینن اور میرا سانیال کو ذمہ داری سونپی گئی ہے۔ ایک سوال کے جواب میں اروند کجروال نے کہاکہ ہم کانٹریکٹ پر ملازمت دینے کیخلاف ہیں اور ہماری کوشش یہی رہی ہے کہ لوگوں کو سیدھے طور پر ملازمت دی جائے جبکہ بی جے پی اور کانگریس نے ہمیشہ ٹھیکیداری کو ترجیح دی ہے جو غیرمناسب ہے۔

 

 

...


Advertisment

Advertisment