Today: Tuesday, November, 13, 2018 Last Update: 10:05 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

جموں وکشمیر میں اسمبلی انتخابات کے پیش نظر سیکورٹی ایجنسیاں متحرک

 

نیم فوجی دستوں کی 520 اضافی کمپنیاں ریاست وارد ہوں گی، سرحد پر گشت تیز

سری نگر ، 29 اکتوبر (یو این آئی) ریاست جموں وکشمیر میں اسمبلی انتخابات کے پہلے مرحلے کی پولنگ کیلئے نوٹی فکیشن جاری ہونے کے ساتھ ہی یہاں سیکورٹی ایجنسیاں متحرک ہوچکی ہیں۔ انتخابات کے دوران انتخابی امیدواروں اور رائے دہندگان کو تحفظ کا احساس دلانے کے لئے سیکورٹی نظام کو چست کیا جارہا ہے۔ سیکورٹی نظام کو مزید مضبوط بنانے کیلئے سیکورٹی فورسز کی مزید 520 کمپنیاں ریاست وارد ہورہی ہیں۔ ذرائع کے مطابق سیکورٹی ایجنسیاں اسمبلی انتخابات کا پرامن ماحول میں انعقاد کو یقینی بنانے کیلئے کوئی بھی دقیقہ فروگذاشت نہیں کریں گی۔ ریاستی پولیس نے انتخابی شیڈول جاری ہونے کے ساتھ ہی رات کے اوقات میں بعض شاہراہوں اور مختلف اضلاع کو سری نگر سے جوڑنے والی سڑکوں پر گاڑیوں کی تلاشی کا عمل شروع کردیا ہے۔ ذرائع کے مطابق سیکورٹی اہلکاروں کو ہدایت دی گئی ہے کہ وہ ڈیوٹی کے دوران چوکنا رہے۔ اس کے علاوہ انتخابی امیدواروں سے بھی کہا گیا ہے کہ وہ کسی بھی علاقے میں انتخابی ریلی منعقد کرنے سے قبل متعلقہ پولیس تھانے کو مطلع کرے تاکہ سیکورٹی کے خاطر خواہ انتظامات کئے جاسکیں۔ ذرائع کے مطابق ریاست میں اسمبلی انتخابات کو دیکھتے ہوئے جنگجوؤں کی ممکنہ دراندازی کو روکنے کیلئے لائن آف کنٹرول پر سیکورٹی جوانوں کی گشت بھی تیز کردی گئی ہے۔ سرکاری ذرائع کے مطابق لائن آف کنٹرل کے اْس پار لانچنگ پیڈس پر 1500 کے قریب جنگجو سرحد کے اِس پار آنے اور یہاں انتخابات کے دوران وادی کے خرمن امن کو بگاڑنے کی طاق میں بیٹھے ہوئے ہیں۔ ذرائع نے بتایا کہ رواں سال کے دوران 40 سے زائد جنگجو مبینہ طور پر سرحد کے اِس پار دراندازی کرنے میں کامیاب ہوگئے ہیں۔ تاہم اس بات کی سرکاری طور پرتصدیق نہیں ہوسکی۔سرکاری ذرائع نے بتایاکہ اگرچہ سرحد کی حفاظت پر مامور سیکورٹی فورسز سال بھر چوکنا رہتے ہیں تاہم دراندازی کی کوششوں کو روکنے کیلئے شبانہ گشت میں مزید تیزی لائی گئی ہے۔ ذرائع نے مزید بتایا کہ رواں سال کے دوران تین درجن سے زائد جنگجوؤں کو دراندازی کی کوشش کرنے کے دوران مارا گیا جبکہ دراندازی کی کوششیں روکنے کے دوران کچھ سیکورٹی فورس جوانوں نے بھی اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا۔ سرحدوں پر گشت تیز کے ساتھ ساتھ ریاست کے تینوں خطوں میں انتخابات کے پیش نظر سیکورٹی کے وسیع انتظامات کئے جارہے ہیں۔ انتظامات کا جائزہ لینے کی غرض سے ڈویژنل اور ضلع سطحوں پر میٹنگوں کا انعقاد کیا جارہا ہے۔ انتخابات کے سلسلے میں حفاظتی انتظامات اور عملے کی تعیناتی کے سلسلے میں کل ایک میٹنگ پولیس ہیڈ کوارٹرس میں ڈی جی پی مسٹر کے راجندرا کمار کی صدارت میں منعقد ہوئی جس میں سینئر پولیس اور سینٹرل پیرا ملٹری کے افسروں نے شرکت کی۔مسٹر راجندرا نے میٹنگ میں اس بات کو دوہرا کہ اگر کوئی بھی شخص تخریب کاری میں ملوث پایا گیا جس سے انتخابی عمل میں رخنہ پڑسکتا ہو تو اس کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔انہوں نے ایسے عناصر پر کڑی نگاہ رکھنے اور ان کے خلاف سخت کرنے کا عندیہ دیا۔مسٹر راجندرا نے انتخابی امیدواروں اور پولنگ سٹیشنوں کی حفاظت کے لئے ایکشن پلان پر سختی سے عمل در آمد کرنے کے لئے کہا تاکہ لوگ اس جمہوری عمل میں آزادی کے ساتھ حصہ لے سکیں۔مسٹر راجندر ا نے انکشاف کیا کہ انتخابات کے دوران سینٹرل پیرا ملٹری فورسز کی520 اضافی کمپنیاں تعینات کی جائیں گی جن میں سی آر پی ایف ، بی ایس ایف،آئی ٹی بی پی ، ایس ایس بی ،سی آئی سی ایف اور آر پی ایف شامل ہے۔انہوں نے کہا کہ وہ یہ کمپنیاں جلد ہی ریاست پہنچ جائیں گی۔ڈی جی پی نے چناؤ عمل کو منصفانہ اور احسن طریقے سے کرانے کے لئے فورسز کے درمیان بہتر تال میل کی ضرورت پر زور دیا۔انہوں نے کہا کہ اس مقصد کے لئے مختلف سطحوں پر مشترکہ میٹنگوں کا انعقاد کیا جانا چاہئے ۔میٹنگ میں مختلف ایجنسیوں اور وِنگوں کی طرف سے شفاف اور آزادانہ انتخابی عمل کے لئے کئے جارہے اقدامات پر روشنی ڈالی گئی اور ان پر تبادلہ خیال کیا گیا ۔میٹنگ میں سی آر پی ایف ،بی ایس ایف ،آئی ٹی بی پی ، ایس ایس بی ، سی آئی ایس ایف ، آر پی ایف اور ریاستی پولیس کے اعلیٰ افسران موجو د تھے۔

...


Advertisment

Advertisment