Today: Wednesday, November, 14, 2018 Last Update: 11:23 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

وزیر اعلیٰ 22نومبر کو آگرہ لکھنو ایکسپریس وے کا سنگ بنیاد رکھیں گے

 

 اکھلیش یادوکے دیرینہ پروجیکٹ270کلومیٹر لمبے چھ لین کے لکھنو آگرہ گرین فیلڈ ایکسپریس وے کےلئے حکومت نے 60فی صد زمین حاصل کی،دارالحکومت کے ککوری بلاک کے بھروسہ گاوں میں بھومی پوجن

لکھنو،28اکتوبر(یو این آئی) اترپردیش کے وزیر اعلی اکھلیش یادو اپنے دیرینہ پروجیکٹ لکھنو آگرہ گرین فیلڈ ایکسپریس وے کا سنگ بنیاد 22نومبر کو لکھنو ضلع میں رکھیں گے۔سرکاری ذرائع نے آج یہاں یواین آئی کو بتایا کہ بھومی پوجن میں شریک ہوں گے اور 22نومبر ریاستی دارالحکومت کے ککوری بلاک بھروسہ گاوں میں 270کلومیٹر لمبے چھ لین کے ایکسپریس وے کا سنگ بنیاد رکھیں گے۔ ذرائع نے بتایا یہ جگہ لکھنو ہردوئی ضلع کے بارڈر پر ہے ۔ وہاں پروگرام کی تیاریاں شروع ہو چکی ہیں۔ذرائع نے بتایا ہے کہ ایکسپریس وے پروجیکٹ کے لیے ککوری میں 105ہیکٹر زمین کی ضرورت ہے جس میں 60فیصد زمین حکومت نے حاصل کر لی ہے جبکہ باقی جلد ہی حاصل کر لی جائیں گی۔مقامی لوگ ایک بیگھا زمین کے لیے 50لاکھ روپے معاوضے کا مطالبہ کر رہے ہیں جبکہ حکومت انھیں 16لاکھ روپے فی بیگھا کے حساب سے معاوضہ ادا کررہی ہے۔270کلومیٹر گرین فیلڈ ایکسپریس وے تیار کرنے کے لیے منتخب کی گئی پانچ کمپنیوں سے اپنا کام شروع کرنے کے لیے کہا گیا ہے۔ اگر وہ کام متعینہ مدت سے قبل پورا کریں گی تو انھیں مزید مراعات دی جائیں گی۔کمپنیوں کو 004فیصد یا 35کروڑ یومیہ مراعات دی جائیں گی۔اس پروجیکٹ کی لاگت تقریباً دس ہزار پانچ سو کروڑ ہے ۔اس میں سے نو ہزار کروڑ ،دس ضلعوں آگرہ، فیروز آباد، مین پوری، اٹاوہ، اوریہ، قنوج ، کانپور سٹی، اناو،ہردوئی اور لکھنو سے گزرنے والے ایکسپریس وے سے منسلک مختلف سڑکوں پر خرچ کیے جائیں گے۔تقریباً دو ہزار کروڑ زمینوں کے حصول پر خرچ کیے جائیں گے۔ یوپی حکومت اب تک ان دس ضلعوں کے 217گاووں کے 22ہزار525کسانوں سے 2061ہیکٹر زمین حاصل کر چکی ہے۔ ای پی سی کے تحت اس پروجیکٹ کو پانچ پیکجوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔پی این سی انفراٹیک کو پہلے پیکیج (آگرہ فیروز آباد)کے لیے منتخب کیا گیا ہے ۔افکونس انفراسٹرکچر کو پیکیج دو (فیروز آباد اٹاوہ)کے لیے منتخب کیا گیا ہے۔ اسی طرح ناگارجن کنسٹرکشن کمپنی کو پیکیج تین(اٹاوہ۔قنوج ) کی ذمہ داری دی گئی ہے جبکہ افکونس انفراسٹرکچر پیکیج پانچ قنوج اناو ایکسپریس وے کی دیکھ ریکھ کرے گی۔ ایل اینڈ ٹی جو پیکیج پانچ بنائے گی وہ 63کلومیٹر پر پھیلے اناولکھنو ایکسپریس وے کی تعمیر کرے گی۔ کامو ں کی دیکھ ریکھ کے لیے حکومت پرائیویٹ پیشہ ور افراد کی تقرری بھی کر رہی ہے۔ اس پروجیکٹ سے لکھنو اور آگرہ کے درمیان مسافت 6گھنٹے سے کم ہوکر 35گھنٹے تک ہو جائے گی۔ ساتھ ہی اس روڈ پرمختلف مقامات پر تجارت ، زراعت اور اکونومک کوریڈور کا بھی منصوبہ ہے۔اس پروجیکٹ کا مقصد لکھنو سے قومی راجدھانی خطہ تک آسان سفر فراہم کرنا ہے ۔ اس ایکسپریس وے سے آگرہ پہنچنے کے بعد آگرہ گریٹر نوئیڈا جمنا ایکسپریس وے کے ذریعے بآسانی دہلی پہنچا جاسکے گا۔پہلے اس پروجیکٹ کو سرکاری پرائیویٹ شراکت داری (پی پی پی) ماڈل پر تعمیر کرنے کا منصوبہ تھا لیکن معاشی بدحالی کی وجہ سے سرمایہ کاروں کے نہ ملنے کی وجہ سے حکومت نے اسے اپنے ہاتھ میں لیا اور اب حکومت اس پروجیکٹ کے لیے فنڈ کرے گی۔

...


Advertisment

Advertisment