Today: Monday, November, 19, 2018 Last Update: 10:59 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

شمال مشرق کے لوگوں پر حملوں کو روکنے کیلئے علیحدہ پولیس فورس

 

شمال مشرق کے لوگوں سے ملاقات کے بعد نامہ نگاروں سے گفتگو کے دوران امورداخلہ کے مرکزی وزیرمملکت کرین رجیجو کی وضاحت

گڑگاوں (ہریانہ)، 18 اکتوبر (یو این آئی) شمال مشرق کے لوگوں پر حملوں میں اضافہ کے پیش نظر حکومت نے ان کے لئے علیحدہ پولیس فورس قائم کرنے اور ہیلپ لائن سروس شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔امورداخلہ کے مرکزی وزیرمملکت کرین رجیجو نے آج یہاں شمال مشرق کے لوگوں سے ملاقات کے دوران کہا کہ ہم نے شمال مشرق کے طلبا اور دیگر لوگوں کے خلاف ہونے والی مجرمانہ وارداتوں اور ان کے دیگر امور سے نپٹنے کے لئے علیحدہ ہیلپ لائن اور پولیس فورس قائم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ مرکزی وزیرمملکت نے کہاکہ اگر ضرورت پڑی تو حکومت ان کے لئے پہلے سے موجود قوانین میں تبدیلی بھی کرسکتی ہے۔مسٹر رجیجو نے ملاقات کے بعد نامہ نگاروں سے کہا کہ میں نے اس سلسلے میں وزیراعظم، وزیرداخلہ، قومی سلامتی کے مشیر سے بات کی ہے۔ جلد ہی ان امور پر غور و خوض کرنے کے لئے ایک اعلی سطحی میٹنگ کی جائے گی۔یاد رہے کہ ان دنوں شمال مشرق کے لوگوں پر حملوں کے زیادہ معاملات سامنے آرہے ہیں ۔ گڑگاوں میں بدھ کو ناگالیند کے دو طلبا کی چھ سات مقامی لوگوں نے کرکٹ کے بلوں سے پیٹائی کردی تھی۔ دونوں اب بھی اسپتال میں داخل ہیں۔ اسپتال کے ذرائع کے مطابق ان میں سے ایک طالب علم کی ریڑھ کی ہڈی میں چوٹ آئی ہے۔اس کے علاوہ ہفتہ کے شروع میں بنگلور میں میزورم کے ایک طالب علم کی مقامی لوگوں نے اس لئے پیٹائی کردی تھی کیونکہ اسے کنڑ زبان نہیں آتی تھی۔قومی راجدھانی دہلی کے منریکا علاقے میں بھی جمعہ کی رات میزورم کی ایک لڑکی پر اس کے کرایہ کے مکان میں حملہ کیا گیا تھا اور اس کی اسپتال پہنچنے سے پہلے ہی موت ہوگئی تھی۔

 

 

...


Advertisment

Advertisment