Today: Tuesday, November, 13, 2018 Last Update: 10:04 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

غالب انسٹی ٹیوٹ کے زیراہتمام بین الاقوامی غالب تقریبات کا تیسرا دن

 
نئی دہلی،13دسمبر(پریس ریلیز)غالب انسٹی ٹیوٹ کے زیراہتمام”قرة العین حیدرایک منفرد فکشن نگار“ کے موضوع پر منعقد بین الاقوامی غالب سمینار کے تیسرے دن کے پہلے اجلاس میں پانچ مقالے پڑھے گئے ۔پہلا مقالہ اُدے پور سے تشریف لائی مہمان اسکالر ڈاکٹر ثروت خان کاتھا۔جنہوں نے اپنے مقالہ میںحالاتِ حاضرہ کے تعلق سے قرة العین حیدرکی تحریروں کو سمجھنے کی کوشش کی۔ڈاکٹر ترنم ریاض نے اپنے مقالہ میں قرة العین حیدر کا شاہکارناول ”آگ کا دریا“ کے تعلق سے اپنی گفتگو میں اس بات کااظہارکیاکہ قرة العین حیدرکی تحریروں کوموجودہ منظرنامہ میں ہمیں دیکھنے کی سخت ضرورت ہے۔ پروفیسر شافع قدوائی نے قرة العین حیدرکے افسانے ”ایک شام“ کے تعلق سے اپنی گفتگو میں ان کی تخلیقات کا فنی جائزہ پیش کرتے ہوئے اُس افسانے کے امتیازات پر تبصرہ کیا۔اجلاس کے آخری مقالہ نگار پروفیسر قاضی جمال حسین نے قرة العین حیدرکے ناولٹ ”سیتاہرن“کاخوبصورت تجزیہ پیش کرتے ہوئے اس بات پر زور دیاکہ اُن کی اس تخلیق میں بالادستی اورزیردستی کے جنگ کی کشمکش ہے۔اس اجلاس کے صدارتی فریضہ کو انجام دیتے ہوئے پروفیسر صغیرافراہیم نے تمام مقالات پر اپنے خیالات کا اظہارکرتے ہوئے فرمایاکہ یہ تمام مقالات نہایت ہی پُرمغز اور عالمانہ تھے اور ہمیں اُمید ہے کہ جب یہ کتابی شکل میں آئیں گے تو ہم قرة العین حیدر کی زندگی اور فن کو بخوبی سمجھ سکیں گے۔ڈاکٹر علی جاوید نے مہمانِ خصوصی کی حیثیت سے اپنی گفتگو میں تمام مقالہ نگار حضرات کو ان کے عمدہ مقالے پر مبارک باد پیش کیا۔ دوسرے اجلاس کا پہلا مقالہ عہد حاضر کے اہم افسانہ نگار ڈاکٹر خالد جاوید کا تھاجنہوں نے قرة العین حیدرکی تخلیق ”کارجہاں دراز ہے“ کے حوالے سے اُن تمام کرداروں پر روشنی ڈالی جو اُن کی اس تخلیق کے مرکزی کردار تھے۔ آپ نے اس بات پر بھی اشارہ کیاکہ قرة العین حیدرکی تحریر کوہمیں علامہ اقبال کی تحریروں کے تناظرمیں بھی دیکھنے کی ضرورت ہے۔پروفیسر طارق چھتاری نے قرة العین حیدرکے افسانوی اُسلوب پر گفتگو کرتے ہوئے اس بات پر زور دیاکہ قرة العین حیدرکے اُسلوب میں ہمیں جوروشنی دکھائی دیتی ہے وہ اُن کے اسلوب کاخاص حصہ ہے۔اس اجلاس میں پاکستان سے تشریف لائے ممتاز فکشن ناقد پروفیسر مرزاحامدبیگ نے بھی قرة العین حیدرکی تحریروں میں جووقت کاتصور ہے اس پر نہایت ہی عالمانہ مقالہ پیش کیا۔پروفیسر عبدالصمد نے اپنی گفتگو میں اس بات پر زور دیاکہ قرة العین حیدر پرلکھنے سے پہلے یہ ضروری ہے کہ ہم ان کی تحریروں کامطالعہ کریں۔اجلاس کے آخری مقالہ نگار پروفیسر قاضی افضال حسین نے قرة العین حیدرکاناول ”آگ کا دریا“ پرناقدانہ گفتگو کرتے ہوئے اُس ناول کاعلمی تجزیہ پیش کیا۔ اس اجلاس میں پروفیسر شافع قدوائی مہمان خصوصی کی حیثیت سے موجود تھے اور صدارتی کلمات پروفیسر صدیق الرحمن قدوائی نے پیش کےا۔ اس بین الاقوامی سمینارکا آخری اجلاس پروفیسر حامدبیگ کی صدارت میں ہوا اور مہمانِ خصوصی کی حیثیت سے پروفیسر انورپاشاکو زحمت دی گئی تھی۔ اس اجلاس میں پروفیسر صغیرافراہیم، پروفیسر معین الدین جینابڈے اورمشرف عالم ذوقی نے اپنے مقالے پیش کےے۔
 
آج کے تینوں اجلاس میں ڈاکٹر ریحانہ سلطانہ،ڈاکٹر محمد کاظم اورڈاکٹر ممتاز عالم رضوی نے ناظم کی حیثیت سے اپنے فرائض کو انجام دیا۔سمینار کے اختتامی اجلاس کی صدارت پروفیسر صدیق الرحمن قدوائی نے کی اور مہمان خصوصی کی حیثیت سے قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان کے ڈائرکٹر پروفیسر ارتضیٰ کریم موجود تھے۔ اس اجلاس میں پروفیسر مرزاحامدبیگ، پروفیسر عبدالصمد، پروفیسر حسین الحق اور ڈاکٹر جمیل اخترنے سمینار کے تعلق سے مجموعی طورپر گفتگو کی۔ خصوصاً پروفیسر ارتضیٰ کریم نے اپنی تقریر میں قرة العین حیدرکی تمام تخلیقات کا مختصراً جائزہ پیش کرتے ہوئے کہاکہ قرة العین حیدرکا فن، تہذیب، ثقافت اور تاریخ سے عبارت ہے۔اس سمینار کی سب سے خاص بات یہ تھی کہ اس میں ۵۳سے زیادہ مقالہ نگاروں نے قرة العین حیدرکے ناول، ناولٹ، افسانے، رپورتاژ اور سفرمے پر عالمانہ گفتگو کی۔ سمینار میں دلّی اور بیرونِ دلّی کے اساتذہ، ریسرچ اسکالرز اور مختلف علوم وفنون کے افرادبڑی تعداد میں موجود تھے۔ سمینار کے اختتام کے بعد مشہور ڈرامہ ”غالب کی واپسی دکھایاگیا۔ اس سمینار میں مختلف یونیورسٹیوں سے موجود ریسرچ اسکالرز کو کتابوں کا تحفہ اور سرٹیفکیٹ پیش کیا گیا۔
 
...


Advertisment

Advertisment