Today: Sunday, September, 23, 2018 Last Update: 05:47 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

تلنگامہ اسمبلی میں ہنگامہ


جگدیش ریڈی اور چنا ریڈی کے درمیان سخت الفاظ کا تبادلہ
حیدرآباد25مارچ(یو این آئی) تلنگانہ اسمبلی میں وقفہ سوالات کے دوران ریاستی وزیر جگدیش ریڈی اور کانگریس کے رکن چنا ریڈی کے درمیان سخت الفاظ کا تبادلہ ہوا ۔وزیر بجلی جگدیش ریڈی کے ایک جواب پر عدم مطمئن کانگریس کے رکن اسمبلی چنا ریڈی نے کہا کہ پہلی بار منتخب ہوتے ہی جگدیش ریڈی وزیر بن گئے ۔ ان کو سوال کا مناسب طور پر جواب دینا بھی نہیں آتا جس پر جگدیش ریڈی نے جواب دیا کہ انہیں سوریا پیٹ حلقہ کے عوام نے پہلی بار رکن اسمبلی منتخب کیا ہے اور وزیر اعلی چندر شیکھر راؤ نے انہیں وزیر بنایا ہے لیکن کانگریس کے تلنگانہ سے تعلق رکھنے والے ارکان اسمبلی آندھراپردیش کے لیڈروں اور سابق وزیراعلی وائی ایس راج شیکھر ریڈی کی وجہ سے یہاں تک پہنچے جس پر ایوان میں کانگریس کے ارکان نے احتجاج کیا ۔کانگریس کے ارکان نے ایوان کے وسط میں پہونچ کر نعرے بازی کی جس پر وزیر پارلیمانی امور ہریش راؤ نے حزب اختلاف جماعت کانگریس سے اپیل کی کہ ایوان کی کارروائی میں رکاوٹ پیدا نہ کریں۔اس موقع پر بی جے پی رکن اسمبلی لکشمن نے کہا کہ وزیر پارلیمانی امور ہریش راؤ کی موجودگی میں یہ واقعہ پیش آیا ہے ۔ اسی لئے جگدیش ریڈی نے جو الفاظ استعمال کئے ہیں اس پر وہ ایوان سے معافی مانگیں جس پر جگدیش ریڈی نے کہا کہ کانگریس رکن چنا ریڈی نے جو الفاظ استعمال کئے ہیں پہلے اس کی وضاحت کی جائے ۔ انہوں نے کہا کہ اگر انہوں نے کوئی بات غلط کی تو اُسے ایوان کے ریکارڈ سے نکال دیا جائے ۔ وزیرجگدیش ریڈی کے اس بیان کے باوجود کانگریس کے ارکان نے ایوان کے وسط میں اپنا احتجاج جاری رکھا جس پر ہریش راؤ نے مداخلت کرتے ہوئے کہا کہ یہ معاملہ کانگریس نے شروع کیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ چنا ریڈی نے وزیر جگدیش ریڈی کے خلاف غلط الفاظ کا استعمال کیا ہے ۔ اس کے باوجود وزیرجگدیش ریڈی اپنے الفاظ کو ایوان کے ریکارڈ سے نکالنے کی بات کہہ چکے ہیں ۔اس کے باوجود احتجاج کرنا مناسب نہیں ہے ۔ بعد ازاں کانگریس کے ارکان اسمبلی کے احتجاج کو دیکھتے ہوئے اسپیکر مدھوسدن چاری نے ایوان کی کارروائی کو دس منٹ کیلئے ملتوی کردیا ۔ اسمبلی کی کارروائی جب دوبارہ شروع ہوئی تو مختلف جماعتوں کے سابق ارکان اسمبلی کی یاد میں تعزیتی قرار داد پیش کی گئی ۔ایوان میں کانگریس کے ارکان نے ایک مرتبہ پھر جگدیش ریڈی سے معافی کا مطالبہ کرتے ہوئے احتجاج کیا ۔ اس موقع پر جگدیش ریڈی نے کہا کہ چنا ریڈی کو ان کے ریمارک سے تکلیف پہنچی ہے تو وہ ان سے معافی مانگنے اور افسوس کا اظہار کرنے کیلئے تیار ہیں لیکن کانگریس کے ارکان نے جگدیش ریڈی کو وزارت سے معطل کرنے کا مطالبہ کیا اور نعرے بازی جاری رکھی جس پر وزیرپارلیمانی امور ہریش راؤ نے کہا کہ بدعنوانی کے الفاظ کانگریس کو زیب نہیں دیتے کیونکہ کانگریس کے لیڈر سی بی آئی کے معاملات کا سامنا کررہے ہیں جبکہ حکومت شفاف طور پر کام کررہی ہے ۔ اس موقع پر کانگریس کے ارکان کی نعرے بازی جاری رہی جس پر اسپیکر مدھوسدن چاری نے پھر ایک بار دس منٹ کیلئے ایوان کی کارروائی کو ملتوی کردیا۔بعد ازاں کانگریس کے رکن اسمبلی سمپت کمار نے کہا کہ تلنگانہ کے وزیر بجلی جگدیشور ریڈی بوکھلاہٹ کا شکار ہوچکے ہیں ۔مسٹر سمپت نے میڈیا پوائنٹ پر صحافیوں سے بات کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ کانگریس کے رکن اسمبلی چنا ریڈی کے خلاف نامناسب ریمارکس پر وزیر جگدیش ریڈی اُن سے معذرت خواہی کریں ۔انہوں نے کہا کہ جگدیش ریڈی کی حمایت میں وزیر آبپاشی ہریش راؤ کا اسمبلی میں سامنا آنا افسوس ناک ہے ۔ انہوں نے کہا کہ غیر مہذب افراد کے ہاتھوں میں تلنگانہ کا اقتدار چلا گیا ہے جو نہایت ہی افسوسناک بات ہے ۔ دوسری طرف ٹی آر ایس کے رکن اسمبلی بال راجو نے کہا ہے کہ اقتدار میں رہتے ہوئے تلنگانہ کے کانگریسی لیڈروں نے تلنگانہ کو آندھرا کے حکمرانوں کے پاس گِروی رکھ دیا تھا ۔انہوں نے صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ انہیں کانگریس کے ارکان اسمبلی ڈی کے ارونا اور چنا ریڈی کے ایوان میں رویہ پر افسوس ہے ۔

 

 

...


Advertisment

Advertisment