Today: Wednesday, November, 21, 2018 Last Update: 05:35 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

دہلی کاضمنی بجٹ پیش،منیش سسودیا کا مرکزی سرکار پر سوتیلے برتاؤ کاالزام


تین ماہ کیلئے9437مختص کرتے ہوئے کزی سرکار سے بجٹ میں اضافہ کامطالبہ* مرکز کو انکم ٹیکس سے ملنے والی رقم میں دہلی کا سب سے زیادہ تعاون* حصہ داری کے مطابق دہلی کوملناچاہئے 25ہزار کروڑکا بجٹ * سرکار مکمل بجٹ عوام کے صلاح ومشورے کے بعد لائے گی: منیش سسودیا
نثاراحمدخان
نئی دہلی، 24مارچ (ایس ٹی بیورو) چھٹے دہلی اسمبلی کے دوروزہ خصوصی اجلاس میں بجٹ ووٹ آف اکاؤنٹ پیش کرنے سے قبل نائب وزیر اعلی منیش سسودیا نے آج مرکزی حکومت پر طنز کرتے ہوئے سوتیلا برتاؤ کا الزام عائد کیا۔ انہوں نے کہاکہ مرکز کو ٹیکس کے ذریعہ ملنے والے رقم میں دہلی کا تعاون سب سے زیادہ ہے، لیکن دہلی کے ساتھ مرکزی سرکار کے ذریعہ سوتیلا برتاؤ کیاجارہا ہے اور اسے مناسب رقم نہیں فراہم کی جارہی ہے۔منیش سسودیا کے مطابق مرکزی سرکار کو ملنے والے انکم ٹیکس میں دہلی سے تقریباً 16فیصد رقم ملتی ہے، جو پورے ہندوستان میں سب سے زیادہ ہے۔ انہوں نے کہاکہ اگر ایک روپئے میں سے 65فیصد رقم بھی دہلی کو مہیا کرائی جائے تو اس طرح دہلی والوں کو 5سال میں 25ہزار کروڑ روپئے دی جائے گی۔ کجریوال سرکار دہلی کیلئے جون میں مکمل بجٹ پیش کرے گی۔ تاہم آج اس نے تین ماہ کیلئے 9437کروڑ روپئے کے بجٹ کو منظوری دی ہے۔ منیش سسودیا نے کہاکہ ہماری سرکار ذریعہ آج دہلی کیلئے تین ماہ کے اخراجات کو پیش کررہی ہے، اور جون میں مکمل بجٹ پیش کریں گے کیونکہ یہ سرکار تاریخ ساز جیت حاصل کرکے آئی ہے اور ہم اسے تاریخی بنانا چاہتے ہیں۔ اسی لئے ہم بجٹ کو بند کمروں اور فائلوں سے باہر نکال کر عوام کے درمیان لے جانا چاہتے ہیں۔ اسی ضمن میں دہلی کا مکمل بجٹ بنانے کیلئے لوگوں سے صلاح ومشورہ لے رہے ہیں اور اس عمل میں ہمیں عوام اور آر ڈبلیو اے کے ذریعہ بے شمار تجاویز بھی ملی ہیں۔چنانچہ انہی تجاویز کی بنیاد پر مستقبل کے منصوبے بھی بنائے جائیں گے۔ منیش سسودیا نے بتایا کہ اس وقت سرکار ساڑھے 4کروڑ روپئے خسارے میں ہے، لیکن ہمیں بھروسہ ہے کہ ہم دہلی کو اس خسارے سے باہر نکالیں گے اور بہتر پوزیشن میں لائیں گے۔
منیش سسودیا نے بتایا کہ تین ماہ کے اخراجات کیلئے جو رقم مختص کی گئی ہے اس میں غیرمنصوبہ بند کاموں کیلئے 2.850کروڑ روپئے کی رقم اور اسٹیمپ اور رجسٹریشن اور موٹر گاڑی ٹیکس میں ان کی 1.394کروڑ روپئے کی حصہ داری شامل ہے۔ اسی دوران منیش سسودیا نے مرکزی سرکار پر نشانہ سادھتے کہاکہ مرکز نے دہلی سرکار کو کارپوریشن کیلئے 600کروڑ روپئے ابھی تک نہیں دیئے۔ گذشتہ سال منصوبہ بند کاموں کی کل 61فیصدی رقم ہی خرچ ہوپائی جبکہ ٹیکس کی وصولی اپنے ہدف سے 4500روپئے کم رہی۔ انہوں نے کہاکہ ہریانہ اور پنجاب کا بجٹ دوگنا کردیا گیاہے جبکہ دہلی سرکار گذشتہ 15برسوں سے 325کروڑ روپئے دیاجارہا ہے۔

 

 

...


Advertisment

Advertisment