Today: Tuesday, November, 13, 2018 Last Update: 11:12 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

دنیا کے سامنے اسلام کی حقیقی، انسانیت نواز اور مکمل ضابطۂ حیات کی شبیہ پیش کرنے کیلئے کام کریں مسلم نوجوان

 

اسلامک ایجوکیشنل سائنٹفک اینڈ کلچرل آرگنائزیشن کے ڈائرکٹر جنرل اور فیڈریشن آف دا یونیورسٹیز آف دا اسلامک ورلڈ، رباط، مراکش کے سکریٹری جنرل ڈاکٹر عبدالعزیز عثمان التویجری کی اے ایم یوکے 62ویں سالانہ جلسۂ تقسیم اسناد سے خطاب کے دوران نوجوانوں سے اپیل، یونیورسٹی کے تعلیمی و تحقیقی سطح کو بلند کرناہمارے لئے سب سے بڑا چیلنج : وائس چانسلر

علی گڑھ، 16؍اکتوبر(ایس ٹی بیورو) علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے 62ویں سالانہ جلسۂ تقسیم اسناد سے مہمان خصوصی کی حیثیت سے خطاب کرتے ہوئے اسلامک ایجوکیشنل سائنٹفک اینڈ کلچرل آرگنائزیشن کے ڈائرکٹر جنرل اور فیڈریشن آف دا یونیورسٹیز آف دا اسلامک ورلڈ، رباط، مراکش کے سکریٹری جنرل عزت مآب ڈاکٹر عبدالعزیز عثمان التویجری نے پوری دنیا اور بالخصوص ہندوستان کے مسلم نوجوانوں سے اپیل کی کہ وہ دنیا کے سامنے اسلام کی ایک حقیقی، انسانیت نواز اور مکمل ضابطۂ حیات کی شبیہ پیش کرنے کے لئے کام کریں۔ انہوں نے کہا کہ آج جب پوری دنیا کو دہشت گردی اور جنونی قسم کے تشدد کا سامنا ہے، مسلم نوجوانوں کو لازم ہے کہ وہ دین اسلام کو ’’امن و آشتی اور رحم دلی‘‘ کے مذہب کے طور پر پیش کریں۔ انہوں نے کہا کہ اسلام ہمیں فکر و تدبر ، کشادہ دلی اور انسانیت نوازی کی تعلیم دیتا ہے اور ہمارے لئے یہ لازمی ہے کہ ہم اپنے مذہب کی صحیح تعلیمات سے دنیا کو آشنا کریں۔ انہوں نے کہا کہ جھوٹے احساسِ برتری اور خود کو دوسروں سے اعلیٰ و ارفع سمجھنے سے کسی معاشرے کو ترقی حاصل نہیں ہوسکتی۔ڈاکٹر التویجری نے کہا کہ آج کے دور میں ترقی کا تصور صرف استحکام کی صورت میں کیا جا سکتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ آج علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے سند حاصل کرنے والے طلبہ ایک نئے سفر کے لئے تیاری کر رہے ہوں گے اور انہیں یقین ہے کہ وہ اپنی آئندہ زندگی میں نہ صرف مسلمانوں بلکہ پورے بنی نوع انسانی کے لئے فکری آگہی اور ہشت پہلو ترقی کے علمبردار ہوں گے۔ڈاکٹر التویجری نے کہا کہ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی نے دینی مدارس کے فارغین طلبہ کے لئے منفرد نوعیت کا برج کورس شروع کیا ہے تاکہ انہیں دینی تعلیم کے ساتھ جدید انگریزی تعلیم سے جوڑا جائے ۔ انہوں نے کہا کہ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے اس اقدام سے نہ صرف دینی مدارس کے طلبہ میں ہنر مندی کا فروغ ہوگا بلکہ ان کے لئے ملازمتوں کے نئے باب وا ہوں گے اور وہ پورے ملک و قوم کے لئے بامعنی کردار ادا کر سکیں گے۔اس سے قبل، یونیورسٹی کی سالانہ رپورٹ پیش کرتے ہوئے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے وائس چانسلر لیفٹیننٹ جنرل ضمیر الدین شاہ نے کہا کہ دینی مدارس کے فارغین کے لئے شروع کیا گیا برج کورس اپنی نوعیت کا منفرد کورس ہے جس کے دور رس نتائج برآمد ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ اس کورس کے ذریعہ مدارس کے طلبہ کو جدید تعلیمی سلسلے سے منسلک ہونے کا موقعہ فراہم ہوگا اور ان کے لئے ملازمتوں کے نئے امکانات روشن ہوں گے۔جنرل شاہ نے کہا کہ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کو اپنی ذمے داریوں کا پورا احساس ہے اور ہمارے لئے سب سے بڑا چیلنج یہاں کی تعلیمی و تحقیقی سطح کو بلند کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں ملک و قوم کے تئیں تعلیمی خدمات کی اہمیت کا بھی اندازہ ہوگا اور یونیورسٹی اس سمت میں قابل ذکر خدمات انجام دے رہی ہے۔جنرل شاہ نے کہا کہ ہمیں قومی تعمیر کی سمت میں کام کرنا ہے اور اس سلسلے میں یونیورسٹی کے بانی سر سید احمد خاں کے نظریات و فکر اور ان کی تعلیمی کوششوں کو چراغ راہ بنانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں اس ادارے کا اقلیتی کردار بہت عزیز ہے اور یہی وجہ ہے کہ ہم تمام سینٹرل یونیورسٹیوں کے لئے مشترکہ قانون اور مشترکہ داخلہ امتحانات کی وزارت فروغ انسانی وسائل کی تجویز کا تنقیدی جائزہ لے رہے ہیں ۔علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے پرووائس چانسلر برگیڈیئر سید احمد علی نے دکتور کی اعزازی سند حاصل کرنے والوں کا تعارف پیش کرتے ہوئے انہیں اس اعزاز کے لئے پیش کیا۔ اس موقعہ پر ڈاکٹر عبدالعزیز عثمان التویجری ، متحدہ عرب امارات کی معروف کمپنی وی پی ایس ہیلتھ کےئر کے منیجنگ ڈائریکٹر ڈاکٹر شمشیر ویالل پرمباتھ اور ریاض، سعودی عرب کی معروف کنسٹرکشن کمپنی سلمان الترائس اینڈ پارٹنرس لمیٹیڈ کے جنرل منیجر اور علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے ممتاز سابق طالب علم کو دکتورکی اعزازی ڈگری سے نوازا گیا۔ دکتور کی اعزازی سند حاصل کرنے پر علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کا شکریہ ادا کرتے ہوئے ڈاکٹر عبد العزیز عثمان التویجری نے کہا کہ سر سید احمد خاں ایک عظیم مفکر، دانشور اور دوراندیش رہنما تھے جنہوں نے نہ صرف ہندوستان بلکہ پوری دنیا کے مسلمانوں کی تعلیمی ترقی کے لئے تحریک کی بنیاد ڈالی بلکہ ان کے اندر سماجی و معاشی اصلاحات کے تئیں بیداری کا بھی زبردست فریضہ انجام دیا۔ انہوں نے کہا کہ اگرچہ انہیں دنیا کی کئی یونیورسٹیوں اور ممتاز اداروں سے دکتور کی اعزازی سند سے نوازا گیا ہے لیکن علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کا یہ اعزاز ساری زندگی ان کو عزیز رہے گا۔ڈاکٹر شمشیر وی پی نے کہا کہ اے ایم یو میں ان کا آنا کسی زیارت جیسا ہے اور وہ اس ادارے کے لئے بے پناہ عقیدت رکھتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہاں کے ابنائے قدیم نے کئی معنوں میں انہیں بے حد متاثر کیا ہے اور خود ان کے تجارتی ادارے میں علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے فارغین بڑی تعداد میں بر سر روزگار ہیں۔ انہوں نے طلبہ برادری سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ خود اعتمادی، ہمیشہ کچھ سیکھنے کی لگن اور کڑی محنت کامیابی کی اصل کلید ہے ۔یونیورسٹی کے ممتاز سابق طالب علم اور ریاض کی ایک معروف کنسٹرکشن کمپنی کے جنرل منیجر ڈاکٹر ندیم اختر ترین نے کہا کہ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی ان کے لئے محض مادر علمی ہی نہیں ہے بلکہ درحقیقت وہ آج جو کچھ بھی ہیں ، وہ یہاں کی تعلیم و تربیت کی وجہ سے ہی ہیں۔ انہوں نے یونیورسٹی کے تمام ابنائے قدیم سے اپیل کی کہ تمام لوگ اپنی صلاحیت کے مطابق اپنی مادر علمی کے تعاون کے لئے آگے آئیں اور اس تاریخی ادارے کی بہتری اور ترقی کے کے لئے کام کریں۔ یونیورسٹی کنٹرولر امتحانات پروفیسر جاوید اختر نے گزشتہ تعلیمی میقات میں سند حاصل کرنے والے چار ہزار سے زائد گریجویٹ، پوسٹ گریجویٹ اور پی ایچ ڈی طلبہ کو اسناد کی تفویض کا اعلان کیا۔دو سو سے زیادہ طلبہ کو امتیازی کامیابی کے لئے 425تمغوں سے سرفراز کیا گیا۔ تمام فیکلٹیوں کے ڈین نے متعلقہ طلبہ کی جانب سے وائس چانسلر کے ہاتھوں سے اسناد قبول کیں۔رجسٹرار ڈاکٹر اسفر علی خاں نے جلسے کی نظامت کی۔

...


Advertisment

Advertisment