Today: Thursday, September, 20, 2018 Last Update: 02:55 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

اعظم خاں کا فرضی پوسٹ ڈالنے والا گرفتار

 

شخصیت کومجروح کرنے کیلئے الیکٹرانک میڈیا اور سوشل سائڈپرسازش ہورہی ہے:اعظم خاں
ذیشان مراد
رام پور،18مارچ(ایس ٹی بیورو) اترپردیش کے شہری ترقیاتی وزیر اعظم خاں کے نام پر فیس بک پر فرضی پوسٹ ڈالنے کے الزام میں بریلی سے تعلق رکھنے والے ایک شخص کو گرفتار کر لیا گیا ہے ۔ یہ گرفتاری پولیس کے کرائم سیل نے کی ہے ۔ شہری ترقیاتی وزیر کے میڈیا انچارج فصاحت علی نے گنج تھانے میں تحریر ی شکایت درج کراتے ہوئے کہا تھا کہ فیس بک پر بریلی کے باشندے وکی خان کے نام سے ایک اکاؤنٹ ہے ۔ اس اکاؤنٹ پر ریاستی کے شہری ترقیاتی وزیر اعظم خاں کے نام سے فرضی پوسٹ ڈالی گئی ہے ۔پوسٹ میں اعظم کی تصویر بھی ڈالی گئی ہے ۔ انہوں نے فرضی پوس بنا کر مختلف طبقات کے درمیان مذہبی اختلافات پھیلانے کا الزام لگایا تھا۔ مقدمہ درج کیے جانے کے بعد ایس پی سادھنا گوسوامی نے معاملے کی جانچ کرائم برانچ کو سونپی ۔ کرائم برانچ کی ٹیم نے ملزم بریلی کے باشندے نوجوان کو کل گرفتار کر لیا۔محترمہ گوسوامی کے مطابق پکڑا گیا نوجوان بنیادی طور پر ملک پور کا باشندہ گل ریز خان (19)عرف وکی ہے ۔اسے عدالت میں پیش کیے جانے کے بعد جیل بھیج دیا گیا ہے ۔صوبہ کی اکھلیش حکومت کے سب سے قدآوروزیرمحمداعظم خاں پرسائبرحملہ مسلسل جاری ہے یکہ بعددیگرمعاملے روشنی میںآرہے ہیں کچھ پوشیدہ ہیں توکئی سے پردہ اٹھ چکاہے۔ معروف دلت مفکرکنول بھارتی سے شروع ہوایہ سلسلہ ابھی تک جاری ہے۔ پہلے مصنف کنول بھارتی ان کے بعدبنارس کے ریجنل سیاحت افسررونیندراوراب بریلی کاطالب علم وکی خاں سوشل سائیڈپرغلط پوسٹ ڈال کرپھنس گئے ہیں۔ واضح رہے 8اگست2013کوآئی ایس افسردرگاشکتی ناگپال کی معطلی پردلت مفکرکنول بھارتی نے فیس بک پرسرکارمخالف کمنٹس کیاتھاجس میں کابینہ وزیرمحمداعظم خاں کونشانہ بنایاگیاتھا۔ اس معاملہ میں محمداعظم خاں کے میڈیاانچارج فصاحت علی شانونے کنول بھارتی پرفرقہ وارانہ جذبات بھڑکانے کاالزام لگاتے ہوئے سول لائن کوتوالی میں مقدمہ درج کرایاتھا۔ پولیس نے فوری طورپرکنول بھارتی کوگرفتارکرلیاتھاحالانکہ بعد میں عدالت نے انھیں ضمانت دے دی۔ اسی طرح 28فروری 2015کوواٹس اپ پروزیراعلیٰ اکھلیش یادو، ملائم سنگھ یادو اور کابینہ وزیر محمداعظم خاں کے تعلق سے قابل اعتراض فوٹوڈالے گئے تھے۔ لکھنؤکے سماجوادی دفترانچارج کالے خاں کی معلومات میں جب یہ معاملہ آیاتوانھوں نے کابینہ وزیراعظم خاں کے میڈیاانچارج فصاحت علی خاں شانوکواس پوسٹ سے واقف کرایا۔ نتیجہ تابات اعظم خاں سے لیکروزیراعلیٰ اکھلیش یادوتک پہنچی ۔ تحقیقات کے بعدبنارس کے علاقائی سیاحات افسر رویندر مشرا کا نام سامنے آیاجس کے بعدفصاحت شانونے ان کے خلاف ایف آئی آردرج کرائی۔ اس سلسلہ میں وزیر شہری ترقیات اعظم خاں نے اپنے ردعمل کرتے ہوئے میڈیاکوبیان دیاکہ عرصہ درازسے ان کی شخصیت کومجروح کرنے کیلئے الیکٹرانک میڈیا اور سوشل سائڈپرسازش ہورہی ہے اوریہ تازہ معاملہ بھی اسی سازش کاحصہ ہے۔ گزشتہ دنوں محمدعلی جوہریونیورسٹی میں منعقدہ ایک تقریب کے دوران بھی کابینہ وزیراعظم خاں نے فیس بک پرانھیں لیکرکئے گئے کمنٹس کے پرنٹ لوگوں کو دکھائے تھے۔ ان کاکہناتھاکہ دیکھئے ہم پرکتناظلم ہورہاہے۔ کوئی ہمیں اے کے 47کہہ رہاہے تو کوئی پاکستان بھیجنے کی دھمکی دے رہاہے لیکن ہم آپ کیلئے ہرظلم برداشت کررہے ہیں۔ تازہ واقعہ میں ملزم وکی خاں کی گرفتاری کے بعد سوشل سائیڈ پر دلت مفکرکنول بھارتی اوراعظم خاں کے میڈیاانچارج فصاحت علی خاں شانوکے درمیان ایک بار پھر تکرار شروع ہوگئی ہے۔ کنول بھارتی نے فیس بک پرکمنٹس کیاہے کہ آج کل اعظم خاں کے میڈیاانچارج کاایک نکاتی پروگرام رہ گیاہے کہ اعظم خاں کے خلاف کسی نے بھی کچھ بولاتووہ اس کے خلاف ایف آئی آردرج کرادیتے ہیں۔ اس کے بعد تو رامپورکے وزراعلیٰ کی پولیس کوفورا حرکت میںآناہی ہے مجھے گرفتارکرنے کے بعدسے ان کاحوصلہ اوربڑھاہے۔ حالانکہ کنول بھارتی نے عدالت پربھروسہ بھی ظاہرکیاہے۔کنول بھارتی کے اس پوسٹ پراعظم خاں کے میڈیاانچارج نے جواب دیتے ہوئے کہاکہ ہرکسی کواپنی کرنی کی سزاملتی ہے ۔ کنول سرآپ پھرکچھ غلط کی جئے میں پھررپورٹ درج کراؤں گا۔

...


Advertisment

Advertisment