Today: Wednesday, September, 26, 2018 Last Update: 10:58 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

کھرکھوداتبدیلئ مذہب کے معاملہ میں گرفتاربے قصورلوگوں کوفوراً باعزت بری کیاجائے

 

لوجہاد کانام لیکرمسلمانوں کوبدنام کرنے والوں کے خلاف حکومت سے سخت اقدام کرنے کا علماء وملی تنظیموں کا مطالبہ

میرٹھ، (ایس ٹی بیورو ) کھرکھودا سراواتبدیلئ مذہب کے معاملہ میں بڑھ چڑھ کرحصہ لینے والے بی جے پی کے فرقہ پرست لوگوں کی اس وقت قلعی کھل گئی جب متأثرہ لڑکی نے بی جے پی کے لیڈرپرہی پیسے دیکرواقعہ کوہوادینے کاالزام عائد کیامتأثرہ لڑکی کے بیان سے فرقہ پرست لوگوں کی گندی ذہنیت اجاگرہوگئی کہ لوجہاد کانعرہ دیکرہندومسلم تفریق کی باتیں کرنے والے اس ملک کے ہوتوسکتے ہیں لیکن اس ملک کے سچے اورپکے وفادارنہیں ہوسکتے ہیں۔آپ کوبتادیں کہ جب کھرکھوداسراوامعاملہ پیش آیاتھااس وقت نیوز چینل ،ہندی میڈیابالکل زہراگل رہاتھااورفرضی واقعہ کوحقیقت میں تبدیل کرنے کی کوشش کررہاتھالیکن جب اس فرضی واقعہ کی حقیقت پولیس کے سامنے آئی توپھراب نیوز چینل اورہندی اخباراس واقعہ کی اسی طرح تردیدکیوں نہیں کررہے ہیں جس طرح اسکی تشہیرکی تھی ۔اس واقعہ کے تحت مسلم طبقے کے تقریباایک درجن لوگوں کوگرفتارکیاگیاتھاجوابھی بھی جیل میں ہیں اسی سلسلہ میں ملک کے مقتدراورسرکردہ علماء اوردانشوران قوم وملت کے تأثرات لئے گئے ہیں ۔جمعیۃ علماء ہندکے صدرمولانا سید ارشدمدنی استاذ حدیث دارالعلوم دیوبند سے نمائندہ کافون پرتبادلہ خیال ہوامولانااس وقت چونکہ کشمیرمیں تھے انہوں نے اس معاملہ میں لڑکی کواصل قصوروارٹھہراتے ہوئے کہاکہ پہلے بھی اسی کے بیان سے کاروائی ہوئی تھی اسلئے جب لڑکی نے کلیم کے ساتھ اپنی من چاہی اورمرضی کابیان دے دیاہے توپھرہماراسب سے پہلے مطالبہ یہ ہے کہ جن لوگوں کواس کیس میں گرفتارکیا تھاانکوباعزت بری کیاجائے اورمعقول معاوضہ دیاجائے اورجن لوگوں نے انکوبندکیا تھاانکی بھی سرزنش کی جائے ،نیز مولانامدنی نے ایک سوال کے جواب میں کہاکہ جن لوگوں نے اس واقعہ کوبنیادبناکرملک کی فضاخراب کرنی چاہی تھی انکی نشان دہی کرکے انکوسامنے لایاجائے اورانکے خلاف قانونی کاروائی کی جائے ۔شاہی امام احمدبخاری نے اس واقعہ پرافسوس کااظہارکرتے ہوئے کہاکہ جب لڑکی نے واقعہ کی صورت حال اجاگرکردی ہے توپولیس پرشاسن اورانتظامیہ کواول وہلہ میں بے قصور لوگوں کوجیل سے باعزت رہاکیاجائے اور جن لوگوں نے یہ سازش رچی تھی مسلمانوں اورمدارس اسلامیہ کوبدنام کرنے کی کوشش کی تھی انکے خلاف کاروائی کرکے مقدمات قائم کئے جائیں شاہی امام بخاری نے کہاکہ اس معاملہ میں پولیس انتظامیہ اورحکومت کی جانب سے مسلمانوں کی جودلشکنی اوردل آزاری ہوئی ہے اسکی تلافی کیلئے تمام مسلمانوں سے معافی مانگی جائے ۔اترپردیش مدرسہ تعلیمی بورڈ کے چیئرمین پروفیسرقاضی زین الساجدین نے کرتے ہوئے کہاکہ ہم پہلے دن سے ہی کہہ رہے تھے کہ یہ سب جھوٹ پرمبنی ہے اورہندی اخبارجوخبریں شائع کررہے ہیں انکوباز آجاناچاہئے وہ بالکل غلط ہے ۔انہوں نے کہاکہ متأثرہ لڑکی کے معاملہ میں جن لوگوں نے اسکوبڑھاوا دیااورملک کی فضاخراب کرنے کوشش کی انکے خلاف حکومت اورپولیس پرشاسن ازخود ایف آئی درج کرکے مقدمات قائم کرائے اورجن لوگوں کواس واقعہ میں گرفتارکیاگیاہے انکوباعزت رہاکیاجائے اوراسکامعقول معاوضہ دیاجائے ۔انہوں نے میڈیاکے تعلق سے کہاکہ جان بوجھ کرمیڈیانے اس واقعہ کوہوادی تھی اسلئے مسلم تنظیموں ذمہ داران کوپریس کونسل میں جاناچاہئے اورانکے خلاف بھی کاروائی ہونی چاہئے ۔امام کونسل آف انڈیاکے قومی جنرل سکریٹری مولانا سراج الدین قاسمی نے کہاکہ مخصوص فرقہ کے لوگو ں نے جولوجہاد کانام دیکرہندمسلم کے درمیان دیواراورحدیں قائم کرنے کی ناپاک کوشش کی تھی اوراس ملک کی گنگاجمنی تہذیب کوختم کرنے کی سازش کی تھی اب اسکاپردہ فا ش ہوچکاہے اورکھرکھوداسراوامعاملہ کولیکرجو فرقہ پرست لوگ آرایس ایس ،شیوسینا، بجرنگ دل وغیرہ تنظیمیں اسکوہوادینے میں لگے ہوئے تھے انکاچہرہ بے نقاب ہوچکاہے انہوں نے کہاکہ ان فرقہ پرست تنظیمیوں سے ملک کوکل بھی نقصان تھاآج بھی ہے اورآئندہ بھی نقصان ہی ہوگاانہوں نے کہاکہ جب تک اس ملک میں ہندومسلم کے لئے ایک ہی پیمانہ رہے گاتب تک یہ ملک صحیح راہ پرہوگالیکن جس دن دوہراپیمانہ اختیارکرلیا گیاتوپھریہ ملک کی تنزلی کاسبب ہوگااس لئے حکومت اورپولیس پرشاسن کوچاہئے کہ وہ معاملہ میں جیل میں بندلوگوں کوفوراً کرے اورجن لوگوں کے نام ہیں حالات خراب کرنے میں چاہے وہ پیسہ دینے والاہویاکوئی اورہواسکوفوراً گرفتارکرکے اسکے خلاف کاروائی کرنی چاہئے ۔الحاج حافظ صغیرعالم خلیفہ علامہ قمرالزماں الہ آبادی نے فرقہ پرست لوگوں کی مذمت کرتے ہوئے کہاکہ جوسیکولرذہنیت کے لوگ ہیں وہ شروع سے ہی کھرکھوداسراوا، واقعہ کی حقیقت جانتے تھے لیکن پھربھی ہندی اخبارات اورنیوز چینل نے ایسازہراگلاتھاکہ سورج بھی اس سے شرمسار تھااب واقعہ کی قلعی کھل گئی ہے اسلئے ہمارامطالبہ ہے کہ گرفتارلوگوں کورہاکیاجائے اوراس واقعہ کولیکرجن لوگوں نے مسلمانوں اورمدارس کوبدنام کرنے کی کوشش کی تھی انکے خلاف مقدمات قائم کرکے سخت کاروائی کی جائے ۔جمعیۃ علماء شہرمیرٹھ کے نائب صدر حاجی عمران صدیقی نے کہاکہ جن فرقہ پرست لوگوں نے کھرکھودامعاملہ میں بڑھ چڑھ کرحصہ لیاتھاپولیس پرشاسن انکوسامنے لائے اور انکوگرفتارکیاجائے نیز انہوں نے کہاکہ جو بے قصورجیل میں بند ہیں انکوفوری طورپر رہا کیاجائے ۔انہوں نے کہاکہ جب لوجہاد کی کہانی فرضی ہی ہے اورہم شروع سے ہی کہہ رہے تھے کہ اسکی کوئی حقیقت نہیں ہے توجن لوگوں نے یہ لوجہاد کانعرہ دیاتھا اور ہندومسلم ایکتاکومسموم کیاتھاانکوسامنے لاکر انکے خلاف بھی کاروائی ہونی چاہئے یہ ضروری ہے اس ملک کے امن وامان اورترقی کیلئے ۔امام کونسل آ ف انڈیاکے قانونی مشیرکنورشفیق احمدایڈوکیٹ نے کہاکہ ہمارا مطالبہ ہے کہ کھرکھوداواقعہ کے تحت جولوگ گرفتارہیں انکورہاکیاجائے اورلڑکی کے باپ کے خلاف اورجولوگ فرقہ پرستی پھیلارہے تھے انکوبے نقاب کرکے مقدمات قائم کئے جائیں ۔

...


Advertisment

Advertisment