Today: Friday, September, 21, 2018 Last Update: 10:43 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

پانچ صوبوں کے صحافی بچوں کی صحت پر غور و فکر کرنے کیلئے جمع ہوئے

 

چھتس گڑھ ، بہار ، مدھیہ پردیش ، راجستھان اور دلی کے صحافی اور نامہ نگار معمول کے ٹیکوں پر گفتگو کرنے کیلئے رائے پور میں جمع ،ورک شاپ کا مقصد میڈیا کے ذریعہ معمول کی ٹیکہ کاری کے مدے کو بڑھا وا دینا

ورک شاپ کی سفارشات

شعبہ صحت پر لکھنے والے صحافیوں کا ایک نیٹ ورک بنایا جائے

سرکاری ، غیر سرکاری اداروں اور میڈیا کے مابین رابطہ اور گفتگو کا سلسلہ ہموار ہونا چاہئے

سرکاری کارکنوں ، افسران کو بھی میڈیا سے جڑنے کیلئے تربیت دینی چاہئے

رائے پور 16اکتوبر(یو این این) چھتس گڑھ ، بہار ، مدھیہ پردیش ، راجستھان اور دلی کے صحافی اور نامہ نگار معمول کے ٹیکوں پر گفتگو کرنے کے لئے رائے پور میں جمع ہوئے یہ گفتگو یونیسیف اور سمیک فاؤنڈیشن کے ریز اۃتمام دو روزہ ورک شاپ میں کی گئی۔ ورک شاپ کا مقصد میڈیا کے ذریعہ معمول کی ٹیکہ کاری کے مدے کو بڑھا وا دینا ہے ۔ وزیر اعلیٰ چھتیس گڑھ ڈاکٹر رمن سنگھ نے شمع روشن کرکے ورک شاپ کا افتتاح کیا ۔ ڈاکٹر سنگھ نے کہا صوبہ میں بچوں کی اموات اور ماؤں کی ولادت کے دوران اموات کی شرح کو کم کرنا ان کا اولین کام ہے ۔ اس کے ساتھ ہی بچوں میں غذا کی کمی سے پیدا ہونے والے امراض کو دور کرنا بھی خصوصی طور پر ان کے پیش نظر ہے انہوں نے کہا کہ چھتیس گڑھ نے معمول کی تیکہ کاری کے کوریج کو بڑھا کر 75فیصد تک لانے کے لئے انتہائی کوششیں کی ہیں لیکن یہ ابھی بھی کافی نہیں ہے ۔ شعبہ صحت کا ہدف اس کوریج کو بڑھا کر 95فیصد تک لے جانا ہے۔ انہوں نے میڈیا کے رول پر زور دیتے ہوئے کہا کہ لوگوں میں بیداری پیدا کرنے کا کام میڈیا سب سے اثر انداز طریقہ سے کر سکتا ہے اور میڈیا کو دور دراز کے علاقوں میں رہنے والے طبقات تک رسائی حاصل کرنی چاہئے ۔وزیر صحت جناب امر اگروال نے کہا کہ صرف میڈیا ہی ٹیکہ کاری سے متعلق غلط فہمیوں کو دور کرنے کا کا م کر سکتا ہے شعبہ صحت چھتیس گڑھ کی یہ کوشش ہے کہ صحت سے متعلق ضروری آلات اور خدمات کو آنے والے تیس سے پچاس سالوں کے لئے تیارکرے اور مضبوط بنائے انہوں نے یقین دہانی کرائی کہ چھتیس گڑھ سرکار ، صحافیوں کو صحت سے متعلق مضامین پر ضروری معلومات فراہم کرنے کی کوشش کریگی ۔جس سے میڈیا ٹیکہ کاری کے متعلق درست خبریں نشر کر سکیں۔کوشا بھاؤ ٹھاکرے یونیورسٹی کے وائس چانسلر ڈاکٹر سچیدا نند جوشی نے کہا کہ میڈیا آج کے وقت میں صرف تین Cپر منحصر ہے کرکٹ ، سنیما ، اور جرائم ، انہوں نے تشویش ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ صحت سے متعلق صحافت کو میڈیا میں صحیح جگہ نہیں ملتی اور ایسی خبریں حاشیہ پر رہ جاتی ہیں اس صورتحال کو سدھارنے کی انتہائی ضرورت ہے ۔ڈاکٹر کمل پریت سنگھ ڈائریکٹر شعبہ صحت چھتیس گڑھ سرکار نے صحافیوں کو بتایا کہ چھتیس گڑھ میں پانچ بیماریوں کے لئے ایک ٹیکہ پنٹاویلن شروع ہونے جا رہا ہے اس کے ساتھ ہی ٹیکہ کاری کرنے کے طریقہ کو مضبوط بنانے کے لئے بھی صوبائی حکومت اہم قدم اٹھا رہی ہے ۔یونیسیف چھیس گڑھ کے ذمہ دار ڈاکٹر پرسننا داس نے بتایا کہ معمول کی ٹیکہ کاری سرکار کے ذریعہ چلائی جانے والی صحت کے لئے سب سے کفایتی یوجنا ہے۔ جس سے ہر سال لاکھوں بچوں کو جان لیوا بیماریوں سے بچایا جاتا ہے شہروں میں جگی جھونپڑیاں اور آدی واسدی علاقوں میں تیکہ کاری کو بڑھا دینے کی ضرورت ہے ۔ اور یہ کام میڈیا کے ذریعہ زیادہ با اثر طریقہ سے کیا جا سکتا ہے ۔سمیک نیاس کے نیاسی جناب راہل دیو نے میڈیا کے دوہرے رویہ پر زور دیتے ہوئے کہا کہ میڈیا کا کام ٹیکہ کاری پر صحیح معلومات فراہم کرکے اس کی مان پیدا کرنا۔ بڑھانا ہے اور خدمت فراہم کرنے والوں و سرکار پر اس کام کو بہتر کرنے کا دباؤ بنانا ہے ۔ ورک شاپ کے دوران صحافیوں کو فیلڈ ویزٹ پر لے جایا گیا اس سے انہیں ٹیکہ کاری کے طریقوں کو اپنی آنکھوں سے دیکھنے اور سمجھنے کا موقع ملا ۔ ورک شاپ میں صحافیوں نے کچھ اہم مدوں پر تبادلہ خیال کیا جیسے میڈیا میں ٹیکہ کاری کی خبروں کو بڑھا وا دینا ، شوشل میڈیا کا ٹیکہ کاری کے لئے استعمال ، AEFIکی حادثات پر خبر دینے کے طریقہ وغیرہ۔ ورک شاپ کی سفارشات، شعبہ صحت پر لکھنے والے صحافیوں کا ایک نیٹ ورک بنایا جائے،سرکاری ، غیر سرکاری اداروں اور میڈیا کے مابین رابطہ اور گفتگو کا سلسلہ ہموار ہونا چاہئے۔ سرکاری کارکنوں ، افسران کو بھی میڈیا سے جڑنے کے لئے تربیت دینی چاہئے ۔

...


Advertisment

Advertisment