Today: Monday, September, 24, 2018 Last Update: 01:22 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

تقرری گھپلہ معاملہ

 

اوم پرکاش چوٹالہ اوراجے چوٹالہ کی سزا برقرار
نئی دہلی، 5 مارچ (یو این آئی)دہلی ہائی کورٹ نے ہریانہ میں ٹیچروں کی تقرری کے گھپلہ میں ہریانہ کے سابق وزیر اعلی اوم پرکاش چوٹالہ اور ان کے بیٹے اجے چوٹالہ کوآج دس سال قید بامشقت کی سزا کوبرقرار رکھا۔چوٹالہ اور استغاثہ کے دلائل سننے کے بعد جسٹس سدھارت مردل نے نچلی عدالت کی طرف سے شیر سنگھ باد شامی اور دو آئی اے ایس افسران ودیا دھر اور سنجیو کمار کو سنائی گئی دس سال کی سزائیں بھی برقرار رکھیں۔ خیال رہے کہ ہریانہ میں 2000 میں 3206 جونیئر بیسک ٹیچروں کی غیرقانونی تقرری کے معاملے میں نچلی عدالت نے 16 جنوری کو انڈین نیشنل لوک دل کے سربراہ چوٹالہ، ان کے بیٹے اجے چوٹالہ ایم ایل اے اور دو آئی اے ایس افسران سمیت 53 لوگوں کو قصور وار قرار دیا تھا۔ہائی کورٹ کے جج نے کہا کہ مجرموں نے سرکاری ملازمین کے اخلاقی معیار کو چیلنج کیا اور ان پر دباؤ ڈالا۔چوٹالہ نے نچلی عدالت کے فیصلے کو 7 فروری کو دہلی ہائی کورٹ میں چیلنج کیا تھا۔ انہوں نے بیماری اور دیگر وجوہات کی بنا پر سزا کو کالعدم قرار دینے کی بھی درخواست کی تھی۔عدالت نے چوٹالہ کے علاوہ اس وقت کے پرائمری ایجوکیشن کے ڈائرکٹر سنجیو کمار، چوٹالہ کے سابق او ایس ڈی ودیادھر اور اس وقت ہریانہ کے وزیر اعلی کے سیاسی مشیر شیر سنگھ بدشامی کو دس دس برس قیدبامشقت کی سزا سنائی تھی۔

 

 

...


Advertisment

Advertisment