Today: Tuesday, November, 13, 2018 Last Update: 09:03 pm ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

اتراکھنڈ سے امریکہ،لندن ،ڈنمارک سمیت کئی ممالک میں ہیروئین بھیجنے والے گروہ کاپردہ فاش


دوافیکٹری میں ہوتاتھاکاروبار،پچاس لاکھ روپئے کی ہیروئین برآمد،ایک گرفتار،فیکٹری مالک فرار
نسیم منگلوری
دہرہ دون(اتراکھنڈ)،2؍مارچ،(ایس ٹی بیورو) انٹرپول سے الرٹ جاری ہونے کے بعد پولیس نے ردرپور(ادھم سنگھ نگر)کے سڈکل میں دوا بنانے والی ڈینورہیلتھ کیئر فیکٹری میں ہیروئن کے کاروبار کا پردہ فاش کیا ہے۔ یہاں سے پوسٹل سروسز کے ذریعہ ڈنمارک، یو ایس اے، دبئی، لندن سمیت دیگر کئی ممالک میں ہیروئن کی سپلائی کی جاتی تھی۔اس معاملے میں پولیس نے ہلدوانی کے تکونیاکے رہنے والے ایک نوجوان کو 10 گرام ہیروئن کے ساتھ گرفتار کیا ہے جبکہ اہم ملزم دوا فیکٹری کا مالک فرار ہے۔ وہیں فیکٹری سے بھی سات گرام ہیروئن برآمد ہوئی ہے۔پکڑی گئی 17 گرام ہیروئن کی قیمت 50 لاکھ روپئے بتائی گئی ہے۔ پولیس نے فیکٹری کوسیل کر دونوں ملزمان کے خلاف این ڈی پی ایس کے تحت مقدمہ درج کر لیا ہے۔ایس ایس پی نیلیش آنند بھر نے انٹرنیشنل ہیروئن اسمگلر گروہ کا انکشاف کرتے ہوئے بتایا کہ تین ماہ پہلے ڈنمارک میں انٹرپول نے ردرپورپنت نگر سے ڈاک کے ذریعہ بھیجے گئے لفافے میں ہیروئن پکڑی تھی۔ اس کے بعد انٹرپول نے ہندوستان کو الرٹ جاری کیا تھا۔دہلی پولیس کی ہدایت کے بعد پتوں کو تصدیق کرنے کے لئے پولیس اورڈاک دفاتر کو الرٹ جاری کیا گیا۔ تب اے ایس پی ٹیڈوالااورکوتوال جے سی پاٹھک کی قیادت میں پولیس کی ایک ٹیم تشکیل دی گئی۔جانچ میں پتہ چلا کہ سڈکل کے سیکٹر تین، پلاٹ نمبر سات میں واقع ڈینورہیلتھ کئیرفیکٹری میں ادویات بنانے کی آڑ میں ہیروئن کا کاروبار چل رہا تھا۔ فیکٹری سے ارد گرد کے علاقوں کے ساتھ ہی بیرون ملک بھی ہیروئن بھیجی جاتی تھی۔فیکٹری مالک پروندر سنگھ ساکن ہلدوانی کے گرتیغ بہادر گلی تکونیا اس کام کے لئے اپنے ملازمین کو استعمال کرتا تھا.۔ان سے ہیروئن سے بھرے لفافوں کوا سپیڈ پوسٹ کرنے کے لیے پوسٹ آفس بھیجتا تھا۔ پولیس کو اطلاع ملی کہ فیکٹری کا ایک ملازم لفافے پوسٹ کرنے کے لیے ردرپورپوسٹ آفس آ رہا ہے۔کوتوال جے سی پاٹھک کی قیادت میں پولیس ٹیم نے ایک انڈیکا کار سے آئے ہرپریت سنگھ عرف رنکو کو پولیس نے ایک لفافے کے ساتھ دبوچ لیا۔جوکہ ہلدوانی کے تکونیاگروتیغ بہادرحلقہ کاباشندہ نکلا۔جب لفافے کھول کر دیکھا گیا تو اس میں سادہ کاغذکے درمیان میں دو کاربن لگا کر قریب 10 گرام ہیروئن رکھی ہوئی تھی۔جسے یو ایس اے کے لئے سپیڈ پوسٹ کیا جانا تھا۔ لفافے پر بھیجنے والے کا نام روندر ملک ،نزدپھوک باغ ، چکی پارک جے بی پنت یونیورسٹی پنت نگر لکھا ہوا تھا۔تفتیش کے دوران ہرپریت نے بتایا کہ وہ اپنے پڑوسی پروندر سنگھ کی دوا بنانے والی ڈینورہیلتھ کئیر فیکٹری میں مارکیٹنگ کا کام کرتا ہے۔پروندر ہی بیرون ملک نمونے بھیجنے کے نام پر لفافوں کو اسپیڈ پوسٹ کرنے کے لیے دیتا ہے۔ پولیس نے ہرپریت کو ساتھ لے کر پروندر سنگھ کی سڈکل واقع فیکٹری میں دبش دی، لیکن پولیس کے پہنچنے سے پہلے ہی پروندر فرار ہو نے میں کامیاب ہوگیا۔ایس ایس پی آنند بھر نے بتایا کہ فیکٹری میں جب پروندر کے کیبن کی تلاشی لی گئی تو وہاں پر ایک لفافہ ملا، جس میں تقریبا سات گرام ہیروئن برآمد ہوئی۔ اس کے علاوہ ڈنمارک بھیجنے کے لئے کسٹم ڈکلریشن فارم بھی ملا ہے۔ایس ایس پی نے بتایا کہ پکڑی گئی کل 17 گرام ہیروئن کی قیمت تقریبا 50 لاکھ روپئے ہے۔ فیکٹری کو سیل کر دیا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ پروندر کے پاس بیرون ملک بھیجنے کے لئے ہیروئن دہلی سے آتی تھی، جس کی تحقیقات کی جا رہی ہے۔

 

 

...


Advertisment

Advertisment