Today: Wednesday, November, 14, 2018 Last Update: 01:23 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

جامع مسجد میٹر و اسٹیشن کا نام ’مولانا ابوالکلام آزاد‘ رکھاجائے


ڈی ایم آر سی کو مکتوب لکھ کر اے بی ڈی ایم ایم کا مطالبہ ، مطالبہ زیر غور فیصلہ دہلی حکومت پر منحصر: ڈی ایم آر سی
محمداحمد
نئی دہلی ،21فروری ( ایس ٹی بیورو) مسلمان گرچہ مولانا ابوالکلام آزاد کو بھول گئے ہوں اور انکی مزار پر سال میں ایک بار بھی فاتحہ کیلئے نہ جاتے ہوں ، لیکن بھارت کے اس عظیم سپوت اور ملک کے پہلے وزیرتعلیم کو ملک کے دلتوں نے خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’ مولانا آزاد کو ہم ہمیشہ سے سلام کرتے ہیں اور وہ ہمارے قومی ہیرو ہیں ۔ کانگریس ایس سی مورچہ کے سابق قومی رابطہ کار اور اکھل بھارتیہ دلت مسلم مہاسنگھ ( اے بی ڈی ایم ایم ) کے صدر سریش کنوجیانے ڈی ایم آر سی کو ایک خط لکھ کر ا س بات کا مطالبہ کیا ہے کہ ’ جامع مسجد میٹر و اسٹیشن کا نام’ مولانا ابوالکلام آزاد‘ رکھا جائے ‘ ۔ خیال رہے کہ اسی تاریخی جامع مسجد سے مولانا ابوالکلام آزاد نے اپنے تاریخی خطاب میں ملک کے مسلمانوں کو پاکستان جانے سے روکنے کی کوشش تھی جس میں وہ کافی حد تک کامیاب بھی رہے تھے ‘ ۔ اور یہیں پر مولانا کی قبر مبارک بھی ہے ۔
مسٹر سریش کنوجیا نے آج نامہ نگاروں سے بات چیت میں کہا کہ ’ ہم نے دہلی میٹر و ریل کا ر پوریشن ( ڈی ایم آر سی) سے اس بات کا مطالبہ کیا ہے کہ مولانا آزاد کے نام پر جامع مسجد میٹرو اسٹیشن کانام رکھا جائے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ اعزاز گرچہ بھارت رتن مولاناابوالکلام آزاد کی شخصیت کے اعتبار سے کم ہے ، لیکن ان کی یہیں پر قبر مبارک بھی ہے، اس لئے یہ کام بے حد ضروری ہے ۔ڈی ایم آر سی نے12فروری کو سریش کنوجیا کو لکھے اپنے خط نمبر DMRC 99/98میں اس بات کی جانکاری دی ہے کہ مذکورہ خط کو ہم نے دہلی حکومت کے اس محکمہ کو ارسال کر دیا ہے جو میٹرو اسٹیشن کے ناموں کو رکھنے اور ان میں تبدیلی کا آخری فیصلہ کرتا ہے ۔خط میں یہ بھی کہا گیاہے کہ کمیٹی جیسے ہی اپنے آخری فیصلہ سے ڈی ایم آر سی کو واقف کراتی ہے فوراً اسکو اکھل بھارتیہ دلت مسلم مہاسنگھ کو بتا دیا جائیگا ۔ خیال رہے کہ مسٹر سریش کنوجیا کو یہ جانکاری ڈی ایم آر سی کے چیف انجینئر /پلاننگ ٹی گپتا کی جانب سے دی گئی ہے ۔ واضح رہے کہ اس خط کی ایک کاپی دین دیال انڈر سکریٹری ،MRTS-1 CELLوزارت برائے شہری ترقیات حکومت ہند ، نرمان بھون کو ارسال کی گئی ہے ۔مسٹر کنوجیا نے نامہ نگاروں سے بات چیت میں کہا کہ ’ اگر ڈی ایم آر سی ہمارے مطالبہ تسلیم نہیں کرتی ہے تو ہم تحریک چھیڑیں گے اور حکومت کو مجبور کریں گے کہ وہ اس سمت میں منا سب کارروائی کرے ، کیونکہ مولانا آزاد اس ملک کی آن بان اور شان ہیں ۔ انہوں نے تعلیم کی جو لکیریں کھینچی تھیں آج تک کوئی اسے مٹا نہیں پایا ہے، بلکہ ان کے خوابوں کو شرمندہ تعبیر کرنے میں لوگ لگے ہوئے ہیں، جس سے ان کی ذہانت اور حب الواطنی کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے ۔

 

 

...


Advertisment

Advertisment