Today: Wednesday, September, 26, 2018 Last Update: 10:39 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

LATEST NEWS   

کجریوال سرکار میں وزیر بننے کیلئے’لابنگ‘ کرنے میں مصروف ہوئے ایم ایل اے


راکھی بڈلان کو نہیں ملے گی جگہ* منیش سسودیا، ستیندرجین، سوربھ بھاردوا ج کو ملے گی وزارت* امانت اللہ خان، عمران حسین، عاصم احمدخان، گوپال رائے، آدرش شاستری، الکالامبا ،وندناکماری بھی دوڑ میں شامل *سومناتھ بھارتی ہوسکتے ہیں اسپیکر
نثاراحمدخان

نئی دہلی، 11فروری (ایس ٹی بیورو) دوتہائی سے زیادہ اکثریت کے ساتھ دہلی اسمبلی الیکشن میں تاریخی جیت حاصل کرنے والے اروند کجریوال 14 فروری کو بطور وزیراعلیٰ دوسری بار حلف لیں گے۔ تاہم ان کی کابینہ کا خاکہ ابھی سے تیار کرنے کی حکمت عملی شروع ہوگئی ہے۔ ذرائع کے مطابق کابینی وزراء بھی کجریوال کے ساتھ ہی رام لیلا میدان پر حلف لیں گے۔ اس بار کجریوال کی کابینہ میں ’آپ‘ کے رکن اسمبلی منیش سسودیا، جرنیل سنگھ، گوپال رائے اور آدرش شاستری کو اہم عہدے دیئے جائیں گے۔ کرن بیدی کو شکست دینے والے ایس بگّاکو بھی وزیر کا عہدے مل سکتا ہے۔ سابق وزیر اور مالویہ نگر سے دوسری بار جیت حاصل کرنے والے سومناتھ بھارتی کو اسپیکر بنایا جا سکتا ہے۔ تاہم حیرت کی بات یہ ہے کہ گذشتہ بار خاتون واطفال کی وزارت سنبھالنے والی راکھی بڈلان کو اس بار کابینہ سے باہر رکھا جائے گا۔ ماہرین اس کی وجہ گزشتہ حکومت میں راکھی بڈلان سے جڑے کچھ تنازعات کو مانتے ہیں۔ ایک انگریزی اخبار میں شائع رپورٹ کے مطابق کجریوال کے ساتھ 6وزراء حلف لیں گے۔ اس بات کا قوی امکان ہے کہ منیش سسودیا کو دوبارہ سے ایجوکیشن اور شہری ترقیات کا وزیر بنایا جاسکتاہے۔ وہیں کجریوال اس بار تکنیکی اور دیگر علاقے میں مہارت رکھنے والے ممبران کی ایک ایگزیکٹیو ٹیم بنانے پر بھی غور کر رہے ہیں۔سابق وزیر اعظم لال بہادر شاستری کے پوتے اور دوارکا سے ایم ایل اے آدرش شاستری کو بھی وزیر کا عہدہ دیئے جانے کا امکان ہے۔ شاستری کے ایپل کمپنی میں تجربہ اور ان کی دانشورانہ شبیہ کا فائدہ مل سکتا ہے۔ ذرائع کے مطابق وائی فائی سروس دینے کے انتخابی وعدے کا عمل شاستری کے ذمہ ہی ہے۔ اس کے علاوہ سوربھ بھاردواج اور ستیندر جین بھی وزیر بن سکتے ہیں۔سوربھ بھاردواج گذشتہ سرکارمیں ٹرانسپورٹ اور ستیندر جین وزیر صحت تھے۔ دیگر جن ناموں کی بحث ہے، و ہیں کراول نگر سے رکن اسمبلی کپل مشرا، بابرپور کے ممبر اسمبلی اور’آپ‘ کے سینئر لیڈر گوپال رائے، پارٹی کی خاتون ونگ کی سربراہ اور شالیمار باغ سے ممبراسمبلی وندنا کماری اور چاندنی چوک سے جیت حاصل کرنے والی نوجوان لیڈرالکا لامبا بھی اس دوڑ میں شامل ہیں۔ دوسری جانب حالیہ الیکشن میں عام آدمی پارٹی کے امیدوار کو جیت دلانے میں مسلمانوں نے بھی مکمل تعاون دیا ہے اور اس بار 4مسلم اسمبلی پہنچے ہیں، اس لئے ایک مسلم ایم ایل اے کو بھی وزارت ملنا یقینی ہے۔ اس میں امانت اللہ خان، عمران حسین اور عاصم احمدخان شامل ہیں۔

 

 

...


Advertisment

Advertisment