Today: Wednesday, September, 26, 2018 Last Update: 10:32 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

BUSINESS NEWS   

ڈیزل کی قیمت37روپئے 75پیسے کی جائے

 

کانگریس پارٹی کا مودی سرکار سے مطالبہ

محمداحمد

کولکاتہ ،14اکتوبر( ایس ٹی بیورو)دنیا کے سب سے بڑے تیل پیداکرنے والے ممالک میں سے ایک سعودی عرب کی ضد بھارت کیلئے فائدہ مند ثابت ہو سکتی ہے۔ سعودی عرب نے خام تیل کی قیمتوں کو گرنے سے روکنے سے انکار کر دیا ہے۔ اس کا بھارت پر بہت اچھا اثر پڑے گا اور آنے والے دنوں میں یہاں پٹرول اور ڈیزل کے دام کم ہو سکتے ہیں۔ سعودی عرب خام تیل کی قیمتوں کو 80 ڈالر فی بیرل تک جانے دے سکتا ہے۔ یہی نہیں، اس نے تیل پیدا ممالک کی تیل کی پیداوار میں کمی کی مانگ کو بھی ٹھکرا دیا ہے۔ بھارت کیلئے فوائد کی بات یہ ہے کہ اس سے بجٹ کا چالو خسارہ کم ہوگا اور ملک کی درآمد بل بھی۔ اگر خام تیل کی قیمت گر کر اوسط 100 ڈالر فی بیرل تک پہنچ جائے تو بھارت کو پہلے چھ ماہ میں 61,000 کروڑ روپے کی بچت ہوگی۔ یہ ملک کے موجودہ بجٹ خسارے کا ایک تہائی ہے۔ اس سے حکومت کو یہ فائدہ ہوگا کہ مٹی کے تیل، ایل پی جی وغیرہ پر دی جانے والی سبسڈی میں کمی آئے گی۔یعنی آنے والے دنوں میں تیل کمپنیاں کم دام میں پٹرول اور ڈیزل فروخت سکتی ہیں۔ اس کے ساتھ ہی ٹائر پیداواری کمپنیوں پر بھی دباؤ کم ہو گا، کیونکہ ٹائر کا کچا مال خام تیل پر ہی مبنی ہے۔ اس سے ٹائر کے دام میں 25 سے 35 فیصد تک کمی آئے گی۔ پیکجنگ میٹریل کے دام بھی کم ہوں گے، کیونکہ یہ بھی خام تیل پر مبنی ہیں۔ادھر کانگریس پارٹی نے آج معمول کے برعکس پریس کانفرنس کرکے مرکزی سرکار سے مطالبہ کیا ہے کہ ڈیزل کے دام گھٹا کر 37.75پیسے کئے جائیں ۔ پارٹی نے آج کہا ہے کہ جب سے مودی حکومت اقتدار میں آئی ہے تب سے ڈیزل کے دام میں بین الاقوامی بازار میں15فیصد کی کمی آئی ہے ۔پارٹی کی جانب سے کہاگیا ہے کہ دسمبر 2010میں بین الاقومی قیمت فی بیرل 89.78ڈالر تھی اور راجدھانی میں فی لیٹر قیمت 37.75تھی اور اب 87.76ڈالر فی بیرل ڈیزل کی قیمت ہے تو دہلی میں ڈیزل 58.91روپئے فی لیٹر ہے ۔

...


Advertisment

Advertisment