Today: Monday, November, 20, 2017 Last Update: 12:53 am ET

  • Contact US
  • Contact For Advertisment
  • Tarrif
  • Back Issue

   

زی سلام،کے ذریعہ اسلام سے متعلق غلط فہمیاں دور کرنا ہی ہمارا مقصد

زی سلام،کے ذریعہ اسلام سے متعلق غلط فہمیاں دور کرنا ہی ہمارا مقصد

 

ہم اپنے پروگراموں کے ذریعہ انسانی زندگی میں بہتری لانے اور معاشرہ کی اصلاح کی کوشش کررہے ہیںmزی سلام کی چوتھی سالگرہ پر زی سلام کے بزنس ہیڈ انلآنند سے جاوید قمر کی خاص بات چیت

نئی دہلی،3فروری،ایس ٹی بیورو:زی سلام کے ذریعہ ہم اسلام کے تعلق سے پھیلائی گئی غلط فہمیاں دور کرنا چاہتے ہیں۔ ہمارا مقصد اسلامی تعلیمات کو عام کرنا اور صالح نظریہ کوفروغ دینا ہے۔ یہ الفاظ زی سلام کے بزنس ہیڈ مسٹر انل آنند کے ہیں۔ زی سلام کی چوتھی سالگرہ کے موقع پر ’سیاسی تقدیر‘ سے گفتگو کرتے ہوئے انہو ںنے کہا کہ مختصر عرصہ میں اس چینل کو جو عوامی مقبولیت حاصل ہوئی وہ حیرت انگیز ہے۔ اس سوال پر کہ جن مقاصد کے تحت زی سلام کو قائم کیاگیاتھا کیا وہ ان کے حصول میں کامیاب رہا؟ مسٹر آنند نے کہا کہ بلاشبہ ہم اپنے مقصد میں کامیاب رہے۔ ناظرین نے جس طرح ہمارے پروگراموں کو سراہا اور ستائش کی اس سے ہمارے حوصلہ کو بڑی تقویت ملی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے جو مقاصد تھے محض دوبرس میں ہی ان کی تکمیل ہوگئی ہمیں امید سے زیادہ کامیابی ملی۔ یہ کس طرح؟ اس کی وضاحت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ہمارا بنیادی مقصد اسلام اور مسلمانوں کے تعلق سے پھیلی ہوئی غلط فہمیوں کا ازالہ کرنا تھا۔ ہمارا مقصد اپنے پروگرام کے ذریعہ مسلمانوں کو ترقی یافتہ کرنے کا بھی تھا اس تعلق سے زی سلام پر کئی پروگرام دکھائے جارہے ہیں اور انہیں زبردست پذیرائی حاصل ہوئی ہے۔ مسٹر آنند نے کہا کہ بحث ومباحثہ کے تحت جو پروگرام دکھایا جارہا ہے اس میں کسی مسئلہ پر ہم اپنا کوئی نظریہ نہیں تھوپتے بلکہ اس کا فیصلہ پروگرام کے شرکاءپر چھوڑدیتے ہیں۔ پھر خواتین پر کئی اچھے پروگرام آرہے ہیں ہمارے دینی پروگراموں کی مقبولیت کا عالم تو یہ ہے کہ ملاقات کے دوران ایک بڑی مذہبی شخصیت نے مجھ سے برجستہ کہا کہ انل جی آپ نے تو ہمیں رمضان میں بھی ٹی وی دکھادیا۔ یہ پوچھنے پر کہ مستقبل میں کیا کچھ نیا کرنے یا دکھانے کا منصوبہ ہے انہو ںنے کہا کہ آج سے ہماری سمت بدلے گی۔ ان چار سالوں کے دوران ہم نے مذہبی امور پر زیادہ فوکس کیا قرآن اور حدیث کے پیغامات لوگوں تک پہنچانے میں ہماری کوشش مؤثر انداز میں کامیاب رہی لیکن اب ہم مذہب اور عوامی زندگی میں ایک توازن پیدا کرنے کی کوشش میں ہیں۔ درحقیقت زندگی جینے میں اسلام کس طرح رہنمائی کرتا ہے ہم ناظرین کو یہ بتانا چاہتے ہیں۔ مسٹر آنند نے کہا کہ قرآن میں سب کچھ موجود ہے۔ یہ علم کا خزانہ ہے اور ہم اس خزانہ کو لوگوں میں زی سلام کے توسط سے تقسیم کرنا چاہتے ہیں۔ انہو ںنے کہا کہ اسی مقصد سے ”سبق“ کے عنوان سے ایک ایسا سیریل شروع کررہے ہیں جس میں 52کہانیاں ہوں گی۔ ان کہانیوں میں متوسط گھرانوں کے عام مسلمانوں کی زندگیوں کو پیش کیا جائے گا۔ ایک دوسرے سوال کے جواب میں انہو ںنے کہا کہ چینل کی چوتھی سالگرہ کے موقع پر ہم ناظرین کی خدمت میں بطور تحفہ کچھ نئے پروگرام پیش کررہے ہیں۔ مسٹر آنند نے بتایا کہ افسانوں اور قصوں پر مبنی ”سرحدیں“ اور ”الہ دین“ جیسے پروگرام جہاں ایک طرف ناظرین کی دلچسپی اور توجہ کا مرکز ہوں گے وہیں”سفر زیارت“ کے عنوان سے ہم بزرگان دین اور درگاہوں پر ایک سیریز شروع کررہے ہیں۔ انہو ںنے کہا کہ اس پروگرام کی خصوصیت یہ ہے کہ پہلی بار بزرگان دین ، درگاہوں اور خانقاہوں کی تفصیل تارےخی طور پر پیش کی جارہی ہے۔ یہ پوچھے جانے پر کہ زی سلام دوسرے اردو چینل سے کیا کچھ نیا بھی کرنے جارہا ہے انہو ںنے کہا کہ جی ہاں! 2فروری سے”چراغ ہند“ کے عنوان سے ہم نے ایک ایسی سیریز کا آغاز کیا ہے جس میں ان مشہور ومعروف مسلم شخصیات کی زندگی اور کارناموں کی تفصیل پیش کی جائے گی جنہو ںنے ملک وقوم کے لئے نمایاں خدمات انجام دی ہیں۔ ان میں مذہبی، علمی، ادبی، سیاسی، سماجی اور فلمی تمام طرح کی شخصیات شامل ہیں جنہوں نے اپنے کارناموں سے عوام کے دلوں پر گہرے نقش چھوڑے ہیں۔ انہو ںنے دعویٰ کیا کہ اس پروگرام سے مسلم نوجوانو ںکو بلا شبہ بڑی تحریک ملے گی۔ زی سلام پر بچوں کے لئے کیا کچھ ہے اس سوال پر ان کا کہنا تھا کہ ایسے کئی پروگرام ہیں جو بچوں سے منسوب ہیں بلکہ بعض پروگراموں میں تو بچے حصہ لے کر اپنی صلاحیت کا مظاہرہ کرتے ہیں۔ اسی ضمن میں انہو ںنے ”مقابلہ حمد ونعت“ پروگرام کا ذکر کیا اور کہا کہ زی سلام کا یہ ہٹ پروگرام رہا ہے اور اس میں بڑے بچوں کے ہمراہ چھوٹے بچے بھی حصہ لے رہے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ بچے بھوت پریت کے قصے کہانیوں کو بڑی دلچسپی سے دیکھتے ہیں۔ اس بات کو ذہن میں رکھ کر ”جنات ایک عجیب داستان“ کے عنوان سے ایک سیریز شروع ہورہی ہے جس میں سچے واقعات پر مبنی کہانیاں پیش کی جائیں گی۔ ہمیں اس وقت حیرت ہوئی جب گفتگو کے دوران انہو ںنے یہ بھی کہا کہ قرآن میں118مرتبہ جنوں کا ذکر آیا ہے۔زی سلام کے ناظرین کی تعداد کہا ںتک پہنچی اس کے جواب میں انہو ں نے کہا کہ ہماری معلومات اور آفیشیل ریکارڈ کے مطابق ایسے ناظرین کی تعداد تقرےباً4کروڑ ہے جو نہ صرف مستقل طو رپر زی سلام کو دیکھتے ہیں بلکہ اس کے ذریعہ دکھائے گئے پروگراموں سے متاثر ہوکر اپنی زندگی کو بہتر بنانے کے ساتھ معاشرے کی اصلاح کا فریضہ بھی انجام دے رہے ہیں۔

...


Advertisment

Advertisment